کرنال لاٹھی چارج: نائب وزیر اعلیٰ دشینت چوٹالہ نے کسانوں کو ہی ٹھہرا دیا ذمہ دار

ہریانہ کے نائب وزیر اعلیٰ دشینت چوٹالہ نے کہا کہ گزشتہ 9 مہینوں میں یہ یقینی بنایا گیا ہے کہ کسانوں کے خلاف زیادہ طاقت کا استعمال نہ کیا جائے، لیکن اگر ارادہ انارکی پیدا کرنا ہے تو الگ بات ہے۔

دشینت چوٹالہ، تصویر آئی اے این ایس
دشینت چوٹالہ، تصویر آئی اے این ایس
user

تنویر

ہریانہ کے کرنال میں کسانوں پر ہوئے لاٹھی چارج کو لے کر ہنگامہ تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ ایک طرف جہاں اپوزیشن پارٹیاں مرکزی و ریاستی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنا رہی ہیں اور کسانوں کے مطالبات ماننے کا دباؤ بنا رہی ہیں، وہیں حکمراں طبقہ پولیس کے بچاؤ میں بیانات دے رہا ہے۔ ہریانہ کے وزیر اعلیٰ منوہر لال کھٹر نے تو کسانوں کے مظاہرے پر اعتراض ظاہر کیا ہے، اب نائب وزیر اعلیٰ دشینت چوٹالہ بھی کرنال لاٹھی چارج کے لیے کسانوں کو ہی ذمہ دار ٹھہرا رہے ہیں۔

یہاں قابل ذکر ہے کہ دشینت چوٹالہ نے متنازعہ احکامات پر مبنی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد ایس ڈی ایم کے بیان کی مذمت کی تھی اور ان پر کارروائی کیے جانے کی بھی بات کہی تھی، لیکن اب وہ پولیس کی کارروائی کو صحیح ٹھہرا رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’’اگر کوئی آپ پر حملہ کرنے کی کوشش کرے گا تو آپ اس کا مالا پہنا کر استقبال تو نہیں کریں گے۔‘‘


چوٹالہ نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ ’’پولیس پر حملے کی ویڈیو سامنے آئی ہے۔ اگر کوئی آپ پر حملہ کرنے کی کوشش کرے گا تو آپ اسے مالا نہیں پہنائیں گے، انھیں (پولیس کو) لاٹھی چارج کرنا پڑا۔ پولیس کا کام ہے نظامِ قانون کو بنائے رکھنا۔‘‘

نائب وزیر اعلیٰ دشینت چوٹالہ نے کہا کہ گزشتہ 9 مہینوں میں یہ یقینی بنایا گیا ہے کہ کسانوں کے خلاف زیادہ طاقت کا استعمال نہ کیا جائے، لیکن اگر ارادہ انارکی پیدا کرنا ہے تو الگ بات ہے۔ لیکن اگر ارادہ کسانوں اور کسان قوانین کے لیے کام کرنا ہے تو وقت وقت پر مذاکرہ ہونا چاہیے۔ دشینت نے ساتھ ہی سوال کیا کہ آخر وہ 40 لوگ کہاں ہیں جنھوں نے کہا تھا کہ ایم ایس پی اور مارکیٹ نہیں رہے گا اور زمینوں پر قبضہ کر لیا جائے گا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔