حکومت گھر لوٹنے والے مہاجر مزدوروں کو کام کے مواقع فراہم کرے: مایاوتی

مایاوتی نے اتوار کے روز ٹوئٹ کیا کہ اعداد و شمار پھر اس بات کی گواہی دیتے ہیں کہ ملک کے کروڑوں مزدور اپنی جفاکشی کی زندگی گزارنے اور محنت کی روٹی کھانے کی روایت پر مستقل طور پر ڈٹے ہوئے ہیں

بی ایس پی صدر مایاوتی
بی ایس پی صدر مایاوتی
user

یو این آئی

لکھنؤ: بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کی سپریمو مایاوتی نے مرکزی اور ریاستی حکومتوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اتر پردیش اور بہار کے مہاجر مزدوروں کو کام کے مواقع فراہم کریں جو کورونا وائرس کی وبا کی وجہ سے گھر واپس آگئے ہیں۔

بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے اتوار کے روز ٹوئٹ کیا کہ "اعداد و شمار پھر اس بات کی گواہی دیتے ہیں کہ ملک کے کروڑوں مزدور اپنی جفاکشی کی زندگی گزارنے اور محنت کی روٹی کھانے کی روایت پر مستقل طور پر ڈٹے ہوئے ہیں۔ خاص طور پر یوپی اور بہار میں اپنے گھر واپس آنے والے مہاجر مزدور منریگا کے تحت مزدوری کرکے کسی طرح گزارا کر رہے ہیں۔ اس لیے مرکزی اور ریاستی حکومتوں کو لازمی طور پر انہیں کام کے مناسب مواقع فراہم کرنا چاہیے"۔


ایک رپورٹ کے مطابق اتر پردیش حکومت اب سرکاری ملازمت میں ایک بڑی تبدیلی کی تیاری کر رہی ہے جس کے تحت نوکری پانے والے ملازمین کو پانچ سال تک معاہدے کے تحت ملازمت میں رکھا جائے گا۔ اور ان پانچ سالوں کے دوران ہر چھ ماہ میں ان کا محاسبہ کیا جائے گا۔ اس میں ہر بار 60 فیصد نمبر لانا یعنی فرسٹ ڈویژن میں پاس ہونا بہت ضروری ہوگا۔ ریاستی حکومت کے مجوزہ نئے نظام کے تحت مستقل ملازمت پرتقرری پانچ سال کے بعد ہی ہوگی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔