بہار میں کسانوں کو کھاد کی کمی کا سامنا، لالو نے نتیش کو ٹھہرایا سب سے بڑا دشمن

آر جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادو نے الزام عائد کیا ہے کہ بہار میں کھاد ہے ہی نہیں، کسان در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں، اور وزیر اعلیٰ سمیت ڈبل انجن حکومت کانوں میں تیل ڈال کر سوئے ہوئے ہے۔

کسان، تصویر آئی ے این ایس
کسان، تصویر آئی ے این ایس
user

قومی آوازبیورو

بہار میں ربیع فصل کی بوائی کی تیاری میں مصروف کسان کھاد کے سنگین بحران سے نبرد آزما ہیں۔ کھاد یعنی فرٹیلائزر کی کمی کے سبب کسانوں کی فصل پر اثر پڑنے کے امکانات بڑھنے لگے ہیں۔ کئی اضلاع میں کسانوں کو کھاد کے لیے کافی مشقت کرنی پڑ رہی ہے، لیکن انھیں کھاد حاصل نہیں ہو پا رہی ہے۔ ریاست میں کھاد کی قلت ہونے کی بات حکومت بھی قبول کر رہی ہے۔ حالانکہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے کہا ہے کہ ایک ہفتہ کے اندر کھاد کی قلت دور کر لی جائے گی۔

عام طور پر مانا جاتا ہے کہ کسانوں کو نومبر اور دسمبر ماہ میں کھاد کی سب سے زیادہ ضرورت ہوتی ہے۔ محکمہ زراعت کے اعداد و شمار پر غور کریں تو ریاست میں ان دو مہینوں میں تقریباً 41 فیصد کھاد کی فراہمی ہوئی ہے۔ کھاد کو لے کر ریاست میں سیاست بھی شروع ہو گئی ہے۔


آر جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادو نے الزام عائد کیا ہے کہ بہار میں کھاد ہی نہیں ہے۔ آر جے ڈی لیڈر نے اپنے آفیشیل ٹوئٹر ہینڈل سے ٹوئٹ کر کہا کہ ’’بہار میں کھاد ہی نہیں ہے۔ کسان در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ سمیت ڈبل انجن حکومت کانوں میں تیل ڈال، آنکھوں پر پٹی باندھ اور نیند کی گولیاں کھا کر سوئے ہوئے ہے۔‘‘ انھوں نے کہا کہ ’’یہ کسان کے سب سے بڑے دشمن ہیں۔ فصل کی کم از کم حمایتی قیمت (ایم ایس پی) تو دور یہ کھاد تک دستیاب نہیں کرا پا رہے۔ دھِکّار ہے۔‘‘

دوسری طرف حکومت بھی ریاست میں کھاد کی قلت کا اعتراف کر رہی ہے۔ بہار میں کھاد کی قلت کے سوال پر وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے پیر کے روز کہا کہ کھاد کی کچھ دقت ہے۔ اس کو لے کر بہار کے وزیر زراعت نے بھی مرکزی حکومت سے بات کی ہے۔ وزیر زراعت اور چیف سکریٹری نے خط بھی لکھا ہے۔


وزیر اعلیٰ کا کہنا ہے کہ ’’کھاد کے سلسلے میں ہم نے مرکزی وزیر سے بات کی ہے۔ انھوں نے مجھے یقین دلایا ہے کہ سات دنوں کے اندر بہار میں کھاد کی مناسب کھیپ پہنچ جائے گی۔ اس کو لے کر ہم نے اپنے وزیر اور افسران کو تیار رہنے کے لیے کہا ہے۔ ایک دو دن کے بعد ہم پھر سے بہار میں کھاد کی دستیابی کو لے کر جائزہ لیں گے۔‘‘ انھوں نے اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ کھاد کی دستیابی میں کچھ کمی آئی تھی، اس سلسلے میں مرکزی حکومت کوشش کر رہی ہے۔ مرکزی وزیر نے مجھے یقین دلایا ہے کہ کچھ دنوں میں مسئلہ کا حل نکل جائے گا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔