ٹوٹ گئی مشہور میوزک ڈائریکٹر ساجد-واجد کی جوڑی، 42 سالہ واجد خان کا انتقال

فی الحال واجد خان کی فیملی میں سے کسی نے اور نہ ہی ان اسپتال انتظامیہ نے ان کی موت سے متعلق کوئی بیان جاری کیا ہے، اس لیے حتمی طور پر یہ نہیں پتہ چل سکا ہے کہ ان کی موت آخر کس وجہ سے ہوئی۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

بالی ووڈ کی مشہور میوزک ڈائریکٹر جوڑیوں میں سے ایک ساجد-واجد کی جوڑی ایک افسوسناک خبر کے ساتھ ٹوٹ گئی۔ اس بات سے بالی ووڈ ماتم کناں ہو گیا کہ محض 42 سال کی عمر میں واجد خان اس دنیائے فانی سے کوچ کر گئے۔ اتوار کی دیر شب طویل علالت کے بعد ممبئی واقع چیمبور کے سررانا سیٹھیا اسپتال میں انھوں نے آخری سانس لی اور پھر بالی ووڈ کی معروف ہستیوں کے ذریعہ سوشل میڈیا پر تعزیت کا ایک طویل سلسلہ شروع ہو گیا۔

میڈیا ذرائع کے مطابق کڈنی اور گلے میں انفیکشن ہونے کے سبب گزشتہ تقریباً تین مہینے سے ان کا علاج اسپتال میں چل رہا تھا۔ بتایا یہ بھی جا رہا ہے کہ پچھلے تین دنوں سے واجد خان وینٹی لیٹر پر تھے اور ان کی حالت سنگین بنی ہوئی تھی۔ حالانکہ کچھ دنوں پہلے وہ کووڈ-19 کی زد میں بھی آ گئے تھے، لیکن ایسی خبریں سامنے آ رہی ہیں کہ ان کی موت ہارٹ اٹیک کی وجہ سے ہوئی ہے۔ دراصل گزشتہ سال بھی واجد خان کو ہارٹ اٹیک آیا تھا جس کے بعد ان کی انجیوپلاسٹی کی گئی تھی۔

فی الحال واجد خان کی فیملی میں سے کسی نے اور نہ ہی ان اسپتال انتظامیہ نے ان کی موت سے متعلق کوئی بیان جاری کیا ہے، اس لیے حتمی طور پر یہ نہیں پتہ چل سکا ہے کہ ان کی موت آخر کس وجہ سے ہوئی۔ یہی وجہ ہے کہ لوگ ان کی موت کو لے کر کشمکش میں ہیں اور کوئی کورونا انفیکشن کو اس کا ذمہ دار ٹھہرا رہا ہے تو کوئی کڈنی انفیکشن اور کوئی ہارٹ اٹیک کو۔

بہر حال، مشہور موسیقار سلیم مرچنٹ نے ایک ہندی نیوز پورٹل سے بات کرتے ہوئے واجد خان کے انتقال کی تصدیق کی اور کہا کہ "ہاں، یہ سچ ہے کہ واجد اب ہمارے درمیان نہیں ہیں۔" انھوں نے مزید کہا کہ "تقریباً 6 مہینے پہلے واجد کو کڈنی کا مسئلہ ہوا تھا اور پھر ان کا کڈنی ٹرانسپلانٹ ہوا تھا۔ اس کے بعد سے ان کی قوت مدافعت کافی کمزور ہو گئی تھی۔ جہاں تک مجھے پتہ ہے پہلے واجد کو گلے کا انفیکشن ہوا اور پھر انھیں کورونا وائرس ہونے کی خبر آئی۔ قوت مدافعت کمزور ہونے کی وجہ سے ہی انھیں کورونا انفیکشن ہوا تھا۔"

سلیم مرچنٹ نے یہ بھی بتایا کہ کڈنی ٹرانسپلانٹ کے بعد واجد کو کئی بار کڈنی میں انفیکشن ہوا تھا۔ کڈنی اور گلے کے انفیکشن کی وجہ سے ہی واجد کو ایک ہفتے پہلے دوبارہ اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا جہاں انھیں کووڈ-19 ہونے کی بات پتہ چلی۔ مجھے سمجھ نہیں آ رہا ہے کہ ان کے یوں چلے جانے پر میں اور کیا کہوں۔ ساتھ میں گزارے کئی حسین لمحات مجھے ہمیشہ یاد آئیں گے۔

بالی ووڈ اداکارہ پرینکا چوپڑا نے واجد خان کے انتقال پر انتہائی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر لکھا کہ ”افسوسناک خبر۔ ایک بات جو مجھے واجد بھائی کی ہمیشہ یاد رہے گی، وہ ہے ان کی ہنسی۔ وہ ہمیشہ مسکراتے رہتے تھے۔ وہ بہت جلد اس دنیا سے چلے گئے۔ میری ہمدردی ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہے۔ میری یادوں اور دعاؤں میں تم ہمیشہ یاد رہو گے۔“