عدلیہ کا وقت ضائع ہونے سے بچانے کے لئے فرضی مقدمہ بازی پر قدغن ضروری: سپریم کورٹ

عدالت عظمیٰ نے عدالتوں میں دیوانی مقدمات کو مسترد کرنے سے متعلق حکم کی تشریح پر راجندر باجوریا کی طرف سے دائر اپیل پر فیصلہ سنایا۔

سپریم کورٹ / آئی اے این ایس
سپریم کورٹ / آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ عدلیہ کے وقت کو ضائع سے روکنے کے لئے فرضی مقدمہ بازی کو ختم کرنا ضروری ہے۔ جسٹس ایل ناگیشور راؤ اور جسٹس بی آر گاوئی کی بنچ نے کہا کہ ایک دیوانی معاملہ کا تصفیہ ایک سخت کارروائی ہے لیکن عدالتیں کسی مقدمہ میں پیشرفت کی اجازت نہیں دے سکتی، اگر وہ کارروائی کی وجوہات کا انکشاف نہیں کرتا۔

بنچ نے کہا کہ ’’اس عدالت نے موقف اختیار کیا ہے کہ مجموعی ضابطہ دیوانی (سی پی سی) کے آرڈر 7 رول 11 کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ جب کوئی مدعی کارروائی کی وجہ ظاہر نہیں کرتا تو عدالت غیر ضروری طور پر کارروائی کو طول دینے کی اجازت نہیں دے سکتی۔ ایسے معاملے میں فرضی مقدمہ کو ختم کرنا ضروری ہوگا تاکہ آگے عدلیہ کا وقت برباد نہ ہو۔‘‘


عدالت عظمیٰ نے عدالتوں میں دیوانی مقدمات کو مسترد کرنے سے متعلق حکم کی تشریح پر راجندر باجوریا کی طرف سے دائر اپیل پر فیصلہ سنایا۔ بنچ نے مشاہدہ کیا کہ سول کارروائی کو منسوخ کرنے کے لیے عدالت کو دیا گیا اختیار سخت ہے اور حکم کے تحت بیان کردہ شرائط پر سختی سے عمل کرنے کی ضرورت ہے۔

بنچ نے کہا کہ ’’حالانکہ، سی پی سی کے آرڈر 7 رول 11 کے تحت عدالت پر یہ فرض عائد کیا جاتا ہے کہ مدعی، دعووں کی جانچ پڑتال کر کے، قابل اعتماد دستاویزات کے ساتھ پڑھا گیا ہے، یا یہ کہ مقدمہ کی کارروائی کی وجوہات کو ظاہر کرتا ہے یا نہیں! نیز کارروائی کسی قانون کی طرف سے ممنوع تو نہیں ہے!‘‘


سپریم کورٹ نے کلکتہ ہائی کورٹ کی ڈویژن بنچ کے ایک پارٹنرشپ فرم میں اصل شراکت داروں کے قانونی وارثوں کی جائیدادوں کی وراثت سے متعلق تنازعہ سے متعلق حکم کو چیلنج کرنے والی باجوریا کی اپیل کو خارج کر دیا۔ اس شراکت داری کا عمل دسمبر 1943 میں درج کیا گیا تھا۔

بنچ نے کہا کہ ’’یہ سمجھا جاتا ہے کہ اگر ہوشیار مسودے نے کارروائی کے حوالہ سے وہم پیدا کیا ہے اور پڑھنے سے پتہ چلتا ہے کہ دعویٰ واضح طور پر بے مقصد ہے تو عدالت کو سی پی سی کے آرڈر 7 رول 11 کے تحت اپنی طاقت کا استعمال کرنا چاہیے۔‘‘ مزید کہا گیا کہ اس طرح کی قانونی چارہ جوئی کو پہلی سماعت میں ہی ختم کر دیا جانا چاہیے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔