الیکٹورل بانڈ پر سبھی پارٹیوں کو انتخابی کمیشن کی یاد دہانی، کل شام 5 بجے تک سیل بند لفافہ میں مانگی تفصیل

انتخابی کمیشن نے سبھی سیاسی پارٹیوں کو ریمائنڈر بھیج کر کل شام یعنی 15 نومبر شام 5 بجے تک الیکٹورل بانڈ سے ملے چندہ کی تفصیل طلب کی ہے۔

الیکشن کمیشن، تصویر یو این آئی
الیکشن کمیشن، تصویر یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

انتخابی کمیشن نے سبھی سیاسی پارٹیوں کو ریمائنڈر بھیج کر کل شام یعنی بدھ، 15 نومبر 2023 کی شام 5 بجے تک الیکٹورل بانڈ سے ملے انتخابی چندے کی تفصیل جمع کرنے کو کہا ہے۔ توجہ طلب ہے کہ سپریم کورٹ نے 3 نومبر کو الیکٹورل بانڈ کے معاملے کی سماعت کے دوران انتخابی کمیشن کو ہدایت دی تھی کہ وہ دو ہفتہ میں اس بانڈ سے سیاسی پارٹیوں کو ملے چندے کا تازہ ڈاٹا عدالت میں پیش کرے۔ انتخابی کمیشن کا ریمائنڈر سپریم کورٹ کے اسی حکم کے بعد آیا ہے۔

سپریم کورٹ نے انتخابی کمیشن سے کہا تھا کہ وہ آئندہ سماعت میں سیاسی پارٹیوں کو 30 ستمبر 2023 تک ملے سیاسی چندے کی تفصیل عدالت کو سیل بند لفافے میں مہیا کرائے۔ انتخابی کمیشن نے سبھی سیاسی پارٹیوں کے سربراہان کو لکھے خط میں ان سے ہر بانڈ کے ساتھ چندہ دینے والے کی تفصیلی جانکاری، ایسے ہر بانڈ کی رقم اور دیگر جانکاری جمع کرنے کو کہا ہے۔ انتخابی کمیشن کے خط میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کی جانکاری دوہرے سیل بند لفافے میں الیکٹورل اخراجات محکمہ کے سکریٹری کو بھیجی جانی چاہیے جس میں ایک سیل بند لفافے میں ساری جانکاری اور دوسرے سیل بند لفافے میں پہلا لفافہ ہو۔ کمیشن نے کہا ہے کہ اس تک سیل بند لفافے 15 نومبر کی شام تک پہنچ جانے چاہئیں۔ ساتھ ہی یہ بھی کہا گیا ہے کہ لفافوں پر واضح طور پر ’رازداری-الیکٹورل بانڈ‘ لکھا ہونا چاہیے۔


غور طلب ہے کہ سپریم کورٹ کے پانچ ججوں کی آئینی بنچ الیکٹورل بانڈ منصوبہ کے جواز کو چیلنج دینے والی عرضیوں پر سماعت کر رہا ہے۔ سماعت کے دوران عدالت نے 3 نومبر کو ایک عبوری حکم میں انتخابی کمیشن کو اَپڈیٹیڈ ڈاٹا پیش کرنے کے لیے دو ہفتہ کا وقت دیا تھا۔ چیف جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی صدارت والی آئینی بنچ نے تین دن کی سماعت کے بعد اس معاملے میں اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا۔

واضح رہے کہ اپریل 2019 میں بھی سپریم کورٹ نے اسی طرح کا ایک حکم پاس کیا تھا، جس میں انتخابی کمیشن کو سیاسی پارٹیوں کو ملے الیکٹورل بانڈ کی تفصیل سیل بند لفافہ میں پیش کرنے کو کہا تھا۔ لیکن جب کمیشن نے عدالت کو بتایا کہ اس کے پاس صرف 2019 کے لوک سبھا انتخاب سے متعلق ڈاٹا ہے، تو سپریم کورٹ نے ناراضگی ظاہر کی تھی۔ عدالت عظمیٰ نے 2 نومبر کو اپنے حکم میں کہا تھا کہ یہ عمل 19 نومبر 2023 تک یا اس سے قبل پورا کیا جانا چاہیے۔ سیل بند لفافے میں جانکاری سپریم کورٹ کی رجسٹری کو سونپی جائے گی۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;