دہلی فسادات: ہنگامہ آرائی، آتش زنی اور لوٹ مار کے 6 ملزمان دہلی کی عدالت سے بری

ایڈیشنل سیشن جج پولاستیا پرماچلا نے ملزمان ساحل، دنیش، ٹنکو، سندیپ، وکاس کشیپ اور سونو کے معاملے میں فیصلہ سناتے ہوئے انہیں بری کر دیا

<div class="paragraphs"><p>دہلی فسادات کی علامتی تصویر / آئی اے این ایس</p></div>

دہلی فسادات کی علامتی تصویر / آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: شمال مشرقی دہلی میں 2020 کے فسادات کے دوران دنگہ، آتش زنی اور لوٹ مار کرنے کے ملزم 6 افراد کو ہفتہ کو مقامی عدالت نے بری کر دیا۔ ایڈیشنل سیشن جج پولاستیا پرماچلا نے ملزمان ساحل، دنیش، ٹنکو، سندیپ، وکاس کشیپ اور سونو کے معاملے میں فیصلہ سناتے ہوئے انہیں بری کر دیا۔

ملزمان مبینہ طور پر پرتشدد ہجوم کا حصہ تھے جو بھاگیرتھی وہار میں ایک دکان میں گھس گئے اور 24 اور 25 فروری 2020 کی درمیانی رات کو لوٹ مار کی۔ عدالت نے نوٹ کیا کہ ملزمان کے خلاف الزامات معقول شک سے بالاتر ثابت نہیں ہو سکے جس کی وجہ سے انہیں بری کر دیا گیا۔ جج نے استغاثہ کے دو گواہوں، ایک کانسٹیبل اور ایک اسسٹنٹ سب انسپکٹر، جنہوں نے واقعات کے گواہ ہونے کا دعویٰ کیا تھا، کی گواہی کے درمیان واقعات کے وقت میں تضاد کا حوالہ دیا۔


اس عدم مطابقت کی وجہ سے ان کے دعووں پر بھروسہ کرنا مشکل ہو گیا اور یہ نتیجہ اخذ کیا کہ یہ ثابت کرنے کے لیے حالاتی شواہد موجود نہیں ہیں کہ دونوں واقعات ہجوم کے سبب پیش آئے۔ عدالت نے نوٹ کیا کہ ملزمان کی شناخت سڑک پر ایک مخصوص وقت پر صرف ہجوم کے حصے کے طور پر کی گئی تھی، جوکہ ناکافی ثبوت تھے کیونکہ پولیس نے فسادات کے مخصوص واقعات کی بنیاد پر الگ الگ مقدمات درج کیے تھے۔

ان پر یہ بھی الزام تھا کہ وہ اس غیر قانونی ہجوم کا حصہ تھے، جس نے 24 فروری کو رات 9 بجے کے قریب ایک قریبی گھر میں آتش زنی، تخریب کاری اور چوری کی واردات انجام دی۔ عدالت نے روشنی ڈالی کہ شکایت کنندگان میں سے ایک نے بتایا کہ پڑوسی نے واقعے کے وقت کے بارے میں آگاہ کیا تھا لیکن پڑوسی کا نہ تو سراغ لگایا جا سکا اور نہ ہی اس کی جانچ کی گئی۔ لہٰذا استغاثہ یہ ثابت کرنے میں ناکام رہا کہ شکوک و شبہات سے بالاتر ہے کہ ملزمین اس کیس میں تفتیش کیے گئے دو واقعات کے ذمہ دار ہجوم کا حصہ تھے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;