کسانوں کے احتجاج کے پیش نظر ہائی الرٹ پر دہلی پولیس، سیکورٹی سسٹم کو مضبوط کیا گیا

کسانوں کے دہلی چلو مارچ سے پہلے دہلی پولیس نے اپنی تیاری مضبوط کر لی ہے۔ اگر کسان کسی طرح پنجاب اور ہریانہ کو عبور کر لیتے ہیں تو انہیں دہلی سرحد پر روکنے کی پوری کوشش کی جائے گی

<div class="paragraphs"><p>کسانوں کے احتجاج کی فائل تصویر / آئی اے این ایس</p></div>

کسانوں کے احتجاج کی فائل تصویر / آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: دہلی پولیس 13 فروری کو منعقد ہونے والے 'دہلی چلو مارچ' کے پیش نظر ہائی الرٹ موڈ میں آ گئی ہے۔ ہریانہ اور پنجاب کے کسان دہلی کی طرف بڑھ رہے ہیں اور دہلی میں ایک بار پھر مارچ کی تیاری کر رہے ہیں۔ اس صورتحال میں دہلی پولیس نے بھی اپنی کمر کس لی ہے۔ دہلی پولیس کی کوشش ہے کہ وہ ہزاروں کی تعداد میں آنے والے کسانوں کو دہلی کی سرحد پر داخل ہونے سے پہلے ہی روک دے۔

اس کے لیے پولیس نے باڑ لگانے، کنٹینرز اور کرین کے ذریعے اپنی تیاری شروع کر دی ہے۔ اگر کسان کسی طرح سے ہریانہ اور پنجاب کو پار کر کے دہلی کی سرحد میں داخل ہونے کی کوشش کرتے ہیں تو پولیس کرین اور کنٹینرز سے سرحد کو مہربند کرکے انہیں وہیں روکنے کی کوشش کرے گی۔ احتجاج کے لیے 15 سے 20 ہزار کسان 2000 سے 2500 ٹریکٹروں کے ساتھ دہلی آ سکتے ہیں۔ احتجاج کے لیے دہلی میں پنجاب، ہریانہ، راجستھان، اتر پردیش، کیرالہ اور کرناٹک سے کسان آ سکتے ہیں۔


دہلی جانے کے مارچ کے سلسلے میں کسان تنظیموں نے 100 سے زائد میٹنگز کی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی، کچھ مخالف پارٹیاں بھی احتجاج میں شرکت کر سکتی ہیں۔ ایسی صورتحال میں، غیر سماجی عناصر بھی احتجاج میں شامل ہو کر قانونی و انتظامی نظام کو خراب کر سکتے ہیں۔ کسان کار، موٹر سائیکل، میٹرو، ٹرین یا بس کے ذریعے دہلی پہنچ سکتے ہیں۔

یہی نہیں، بلکہ بعض کسان خفیہ طور پر آ کر وزیر اعظم، وزیر داخلہ، وزیر زراعت اور بی جے پی کے سینئر رہنماؤں کے گھروں کے باہر جمع ہو کر مظاہرہ بھی کر سکتے ہیں۔ دہلی میں داخل ہونے کے لئے کسان بچوں اور خواتین کا سہارا لے سکتے ہیں۔ یہ بھی قابل ذکر ہے کہ پچھلی بار کسان تحریک 26 نومبر 2020 سے 9 دسمبر 2021 تک جاری رہی تھی۔


دہلی پولیس 13 فروری کو ہونے والے کسان احتجاج کے پیش نظر اپنی تیاری مکمل کر رہی ہے۔ اس دوران پولیس کی جانب سے موک ڈرل بھی کی جا رہی ہے۔ دراصل، پولیس کے جوان ایک قطار میں کھڑے ہو کر فائرنگ کی مشق کر رہے ہیں۔ دہلی پولیس، کسانوں کو روکنے کے لیے اپنی کمر کس چکی ہے اور اپنی تیاریوں کو پورا کر رہی ہے۔ پولیس کی اس مشق سے لوگوں کو کچھ مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑ رہا ہے، آنسو گیس کے گولوں کی وجہ سے آس پاس پھیلے دھوئیں سے لوگوں کی آنکھوں میں جلن جیسی شکایات آ رہی ہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;