ایم پی کے کھرگون میں 2 اور 3 مئی کو کرفیو نافذ رہے گا، گھروں میں ادا کی جائے گی عید کی نماز!

کھرگون کے ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ سمیر سنگھ نے کہا کہ عید کی نماز گھر پر ہی ادا کی جائے گی، انہوں نے بتایا کہ اکشے ترتیا اور پرشورام جینتی پر بھی ضلع میں کسی بھی تقریب کے انعقاد کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

علامتی تصویر
علامتی تصویر
user

قومی آوازبیورو

کھرگون: مدھیہ پردیش کے کھرگون میں دو اور تین مئی کو کرفیو نافذ رہنے کا اعلان کیا گیا ہے، لہذا نماز عید بھی گھروں میں ہی ادا کی جائے گی۔ کھرگون کے ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ (اے ڈی ایم) سمیر سنگھ مجالدا نے کہا کہ ’’اس مرتبہ عید کی نماز گھروں پر ہی ادا کی جائے گی۔ اکشے ترتیا اور پرشورام جینتی پر بھی ضلع میں کسی کو کوئی تقریب منعقد کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

خیال رہے کہ 10 اپریل کو رام نومی کے جلوس کے دوران پتھراؤ کا واقعہ پیش آنے کے بعد تشدد کی آگ بھڑک اٹھی تھی۔ اے ڈی ایم نے مزید کہا کہ یکم مئی کو صبح 8 بجے سے 5 بجے کے درمیان دکانیں کھلنے کی اجازت فراہم کی جائے گی۔ اے ڈی ایم نے کہا کہ ’’حکم جاری کیا گیا ہے کہ دکانیں کھلی رہیں گی اور امتحان دینے والے طلبا کو پاس کر دیا جائے گا۔ تاہم، وقت کے مطابق فیصلہ میں تبدیلی لائی جا سکتی ہے۔


کھرگون میں 10 اپریل کو ہونے والے تشدد میں پولیس اہلکاروں سمیت متعدد افراد اس وقت زخمی ہو گئے تھے جب جلوس کے دوران لوگوں نے ایک دوسرے پر پتھراؤ کر دیا تھا۔ جلوس کے آغاز میں پتھراؤ شروع ہو گیا جس میں ایک پولیس انسپکٹر سمیت چار افراد زخمی ہو گئے۔ اس کے بعد یہ معاملہ ملک بھر میں شہ سرخیوں میں چھا گیا اور یہ سیاسی مسئلہ بن گیا۔

پولیس اور انتظامیہ اب کوئی بھی خطرہ مول لینے کے لئے تیار نہیں اور اکشے ترتیا اور پرشورام جینتی کی کسی بھی تقریب کی اجازت نہیں دی گئی ہے۔ یہ فیصلہ ضلعی انتظامیہ اور کمیونٹی کے درمیان میٹنگ کے بعد کیا گیا ہے۔ غور طلب بات یہ ہے کہ 10 اپریل کو مدھیہ پردیش کے کھرگون میں رام نومی کے جلوس کے دوران ہوئے تشدد کے بعد سے وہاں کرفیو کا نفاذ جاری ہے، اس کرفیو میں وقتاً فوقتاً نرمی کی جا رہی ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔