کورونا ویکسین: بھارت بایوٹیک کو ملی بڑی کامیابی، 'کوویکسن' کا ٹرائل بندروں پر رہا کامیاب

بھارت بایوٹیک نے 20 بندروں کو 4 الگ الگ گروپ میں تقسیم کیا اور 1 گروپ کو پلیسیبو دیا گیا، باقی 3 کو 3 الگ الگ طرح کی ویکسین 14 دن کے فرق پر دی گئی۔ کسی بھی بندر میں نمونیا کی علامت دیکھنے کو نہیں ملی۔

کورونا ویکسین۔ تصویر یو این آئی
کورونا ویکسین۔ تصویر یو این آئی
user

تنویر

ہندوستان میں کورونا انفیکشن والے مریضوں کی تعداد 46 لاکھ کے پار پہنچ چکی ہے اور سبھی کو انتظار ہے کورونا ویکسین کا تاکہ اسے اس وائرس سے لڑنے کا ہتھیار بنایا جا سکے۔ لیکن ابھی تک کوئی ویکسین مارکیٹ تک نہیں پہنچ سکی ہے۔ کچھ ویکسین کا ہیومن ٹرائل ضرور جاری ہے، لیکن آکسفورڈ یونیورسٹی کی ویکسین کا ہیومن ٹرائل روک دیا گیا ہے، کیونکہ ایک شخص کی طبیعت ویکسنیشن کے کچھ دن بعد خراب ہو گئی۔ یہ خبر مایوس کن ضرور ہے، لیکن ہندوستانیوں کے لیے ایک اچھی خبر یہ ہے کہ دیسی کورونا ویکسین یعنی 'بھارت بایوٹیک' کے ذریعہ تیار کردہ 'کوویکسن' کا ٹرائل بندروں پر کامیاب ہو گیا ہے۔

میڈیا ذرائع سے موصول ہو رہی خبروں کے مطابق 'کوویکسن' نے بندروں میں وائرس کے خلاف اینٹی باڈیز تیار کیا ہے۔ حیدر آباد واقع فرم 'بھارت بایوٹیک' نے اس سلسلے میں ایک ٹوئٹ بھی کیا ہے جس میں لکھا ہے کہ "بھارت بایوٹیک فخر کے ساتھ 'کوویکسن' کے جانوروں پر اخذ ریزلٹ کا اعلان کرتا ہے۔ یہ ریزلٹ ایک لائیو وائرل چیلنج ماڈل میں محفوظ اثر ظاہر کرتے ہیں۔"

بتایا جاتا ہے کہ 'بھارت بایوٹیک' نے 20 بندروں کو چار الگ الگ گروپ میں تقسیم کر کے ریسرچ کیا۔ ایک گروپ کو پلیسیبو دیا گیا، باقی 3 گروپس کو تین الگ الگ طرح کی ویکسین 14 دن کے فرق پر دی گئی۔ کسی بھی بندر میں نمونیا کی علامت دیکھنے کو نہیں ملی۔

Published: 12 Sep 2020, 6:14 PM
next