گوا میں کانگریس نے طلب کیا حکومت بنانے کا موقع!

دگمبر کامت کا کہنا ہے کہ ایسا لگتا ہے جیسے وزیر اعلیٰ کے نام پر اتفاق نہ ہونے کے سبب بی جے پی میں اندرونی لڑائی شروع ہو گئی ہے، یا پھر پارٹی اراکین اسمبلی و آزاد اراکین اسمبلی کی حمایت حاصل نہیں۔

کانگریس پارٹی / آئی اے این ایس
کانگریس پارٹی / آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

گوا میں بی جے پی نے حکومت تشکیل دینے کے لیے ضروری 21 اراکین اسمبلی سے ایک کم، یعنی 20 اراکین والی سب سے بڑی پارٹی بنی ہے۔ اس کے باوجود بی جے پی کی طرف سے اب تک حکومت تشکیل دینے کے لیے قدم آگے نہیں بڑھایا گیا ہے۔ اس تاخیر پر ریاست میں دوسرے نمبر کی پارٹی کانگریس نے سوال کھڑے کیے ہیں۔ گوا کانگریس کے سینئر لیڈر دگمبر کامت نے پوچھا ہے کہ کیا واقعی بی جے پی کو آزاد اراکین اسمبلی اور مہاراشٹروادی گومانتک پارٹی کی حمایت حاصل ہے؟ علاوہ ازیں کانگریس لیڈر کارلوس فریرا نے کہا ہے کہ سنگل لارجیسٹ پارٹی اگر حکومت نہیں بنا پا رہی ہے تو دوسرے نمبر پر آئی پارٹی کو حکومت بنانے کا موقع دیا جانا چاہیے۔

کانگریس لیڈر دگمبر کامت کا کہنا ہے کہ ایسا لگتا ہے جیسے وزیر اعلیٰ کے نام پر اتفاق نہ ہونے کے سبب بی جے پی میں اندرونی لڑائی شروع ہو گئی ہے، یا پھر باقی کے آزاد اراکین اسمبلی اور بی جے پی کے اراکین اسمبلی کی حمایت حاصل نہیں ہے۔ غالباً اسی وجہ سے حکومت تشکیل دینے میں تاخیر ہو رہی ہے۔ جب دگمبر کامت سے یہ سوال پوچھا گیا کہ کیا اگر موقع ملے تو کانگریس حکومت بنا سکتی ہے؟ کیا کانگریس کی دوسرے آزاد اراکین اسمبلی اور دیگر پارٹیوں کے اراکین اسمبلی کے ساتھ بات چیت جاری ہے؟ تو دگمبر کامت نے کہا کہ گوا کی سیاست میں کچھ بھی ممکن ہے، اور وہ کسی بھی امکان سے انکار نہیں کرتے ہیں۔


کانگریس لیڈر کارلوس فریرا کا کہنا ہے کہ گورنر اپنی آئینی ذمہ داریوں کو مناسب طریقے سے نہیں نبھا پا رہے ہیں۔ گوا کی تاریخ میں ایسا کبھی نہیں ہوا کہ حکومت تشکیل دینے سے پہلے اراکین اسمبلی نے حلف لے لیا ہو۔ گورنر کی ذمہ داری ہے کہ سب سے بڑی پارٹی اگر حکومت نہیں بنا پا رہی ہے تو دوسرے نمبر پر آئی پارٹی کو حکومت بنانے کا موقع دیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔