وزیر اعلی کیجریوال نے سریتا وہار میں 330 بستروں کے زیر تعمیر آئی سی یو اسپتال کا کیا دورہ

دہلی کے وزیر اعلیٰ کیجریوال اسپتال کا دورہ کرتے ہوئے کہا کہ ’’دہلی میں بنائے جانے والے 7 جدید آئی سی یو اسپتالوں میں سے سریتا وہار اسپتال 2-3 ماہ میں تیار ہوجائے گا۔‘‘

تصویر بذریعہ پریس ریلیز
تصویر بذریعہ پریس ریلیز
user

پریس ریلیز

نئی دہلی: وزیر اعلی اروند کیجریوال نے آج سریتا وہار میں زیر تعمیر 330 بستروں والے نیم مستقل/عارضی آئی سی یو اسپتال کا دورہ کیا۔ اس دوران وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ یہ اسپتال اکتوبر نومبر میں تیار ہو جائے گا۔ اسپتالوں کی تعمیر شروع کی گئی ہے تاکہ مستقبل میں دوبارہ کورونا کی وبا آئی تو آئی سی یو بیڈز بڑے پیمانے پر تیار ہوں۔ ایسا لگتا ہے کہ اب کورونا سے چھٹکارا مل گیا ہے، لیکن یہ سات اسپتال پوری دہلی کے لوگوں کے لیے کارآمد ثابت ہوں گے۔ ہماری حکومت تعلیم اور صحت کو سب سے زیادہ اہمیت دے رہی ہے۔ وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ سریتا وہار اسپتال کے لیے 20-25 سال پہلے زمین مختص کی گئی تھی اور انتخابات سے پہلے ہر پارٹی یہاں آکر اسپتال بنانے کے لیے ناریل پھوڑتی تھی، لیکن اسے بنانے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔ جدید انجینئرنگ تکنیک کے ساتھ بنائے جانے والے 7 اسپتالوں میں سے، باقی 6 اسپتال دسمبر سے جنوری تک تیار ہو جائیں گے۔

بتایا جاتا ہے کہ زیر تعمیر نیم مستقل/عارضی آئی سی یو اسپتال کی پہلی منزل پر ویٹنگ ایریا، رجسٹریشن روم، الیکٹرک روم، اسٹاف روم، ایمرجنسی روم، نرس اسٹیشن، فائر کنٹرول روم، سی ٹی اسکین، ایکس رے، تشخیصی استقبالیہ، فارمیسی، وارڈ۔ سریتا وہار، نئی دہلی ایریا اور مردہ خانہ میں۔ دوسری منزل پر انتظار کر رہے ہیں۔ایریا، فارمیسی، کیفے ٹیریا، اے ایچ یو روم، وارڈ ایریا، نرس روم ۔ تیسری منزل پر اسکربنگ چینج روم، لاکر روم، سیمپل کلیکشن روم، ریکارڈ روم، کولڈ اسٹوریج روم، لیب، ڈاکٹروں اور عملے کے لیے ڈائننگ ایریا، بلاک بینک وغیرہ ہوں گے۔ ساتھ ہی چوتھی منزل پر او ٹی، اے ایچ یو روم وغیرہ ہوں گے۔


دہلی حکومت شالیمار باغ کی طرح دہلی میں بھی مختلف مقامات پر سات نیم مستقل/عارضی ICU اسپتال بنا رہی ہے۔ ان سات سیمی آئی سی یو اسپتالوں میں تقریباً 6830 بستر ہوں گے۔ شالیمار باغ میں 1430 بستروں پر مشتمل آئی سی یو اسپتال بنایا جا رہا ہے۔ اسی طرح کراڑی میں 458 بستروں پر مشتمل آئی سی یو اسپتال بنایا جا رہا ہے۔ہے دہلی حکومت سلطان پوری میں 527 بستروں کا نیم آئی سی یو اسپتال بھی بنا رہی ہے۔ چاچا نہرو چلڈرن اسپتال میں 596 بستروں کا اسپتال بنایا جا رہا ہے۔ جی ٹی بی اسپتال میں 1912 بستروں کا سیمی آئی سی یو اسپتال، سریتا وہار میں 330 بستروں اور رگھوبیر نگر میں 1577 بستروں کا اسپتال بنایا جا رہا ہے۔ چیف منسٹر اروند کیجریوال نے آج سریتا وہار میں بنائے جارہے اسپتال کا دورہ کیا اور صورتحال کا جائزہ لیا۔ تمام اسپتالوں کی تعمیر کا کام تیز رفتاری سے جاری ہے۔ وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے تمام اسپتالوں کی تعمیر مقررہ مدت میں مکمل کرنے کی ہدایت دی ہے۔

اس دوران وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے سی بی آئی جانچ کے بارے میں میڈیا کے سوال پر کہا کہ یہ بہت اچھی بات ہے کہ جب ہم عوامی زندگی میں آتے ہیں تو ہمیں کسی بھی تحقیقات کے لیے ہمیشہ تیار رہنا چاہیے۔ سی بی آئی نے پوری جانچ کی ہے۔ منیش جی کے گھر پر 14 گھنٹے تفتیش کی گئی۔ منیش جی کے گھر سے بھی کچھ نہیں ملا ۔سی بی آئی نے منیش جی سے چھ سات گھنٹے تک پوچھ گچھ کی اور پوچھے گئے تمام سوالات کا تسلی بخش جواب دیا۔ سی بی آئی نے آج اس کا لاکر چیک کیا۔ لاکر میں بھی کچھ نہیں نکلا۔ ایک طرح سے سی بی آئی سے غیر رسمی کلین چٹ مل گئی ہے، لیکن سیاسی وجوہات کی وجہ سے سی بی آئی پر دباؤ ہے۔ ہمیں لگتا ہے یہ لوگ ایک ہفتے یا دس دن کے اندر گرفتار ہو جائیں گے۔ وہ کرتے رہتے ہیں، لیکن سی بی آئی کی جانچ میں کچھ نہیں ملا۔ سی بی آئی نے غیر رسمی طور پر کہا کہ ہم مطمئن ہیں۔ ہمیں منیش سسودیا جی سے کچھ نہیں ملا۔ ہم شروع سے کہہ رہے تھے کہ جو بھی کارروائی ہو رہی ہے، وہ سیاست کی ہے۔حوصلہ افزائی اور اس میں حاصل کرنے کے لئے کچھ نہیں ہے۔


وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے اسکولوں کی تحقیقات کے سوال پر کہا کہ میں میڈیا میں دیکھ رہا ہوں کہ کیا الزامات ہیں؟ الزام یہ ہے کہ انہوں نے اتنے سرکاری اسکول کیوں بنائے؟اگر ہم نے زیادہ بنایا ہے تو یہ ملک کے لیے اچھی بات ہے کہ غریبوں کے بچے تعلیم حاصل کریں گے۔ پھر وہ کہہ رہے ہیں کہ اسکولوں کے اندر اتنے کلاس روم کیوں بنائے جائیں؟لہذا اگر آپ مزید کلاس رومز بناتے ہیں، تو کوئی خالی کلاس روم نہیں ہے۔ بچے کلاس روم میں پڑھ رہے ہیں۔ ایسا نہیں ہے کہ میرا خاندان کلاس روم میں رہ رہا ہے۔ پھر وہ پوچھ رہے ہیں کہ اسکول میں اتنے بیت الخلاء کیوں بنائے جائیں۔ ہم نے مزید بیت الخلاء بنائے تاکہ ہماری لڑکیوں کو وہاں تکلیف نہ ہو۔ کسی بچے کو تکلیف نہ پہنچے پھر وہ کہہ رہے ہیں کہ اتنا مہنگا سامان کلاس روم کے اندر لے جانے کی کیا ضرورت تھی، ڈیجیٹل بورڈ لگانے کی کیا ضرورت تھی۔ اتنی شاندار میز بنانے کی کیا ضرورت تھی؟غریبوں کے بچے ہی آتے ہیں، سستی پڑھائی پڑھتے۔ ہم اپنے غریب اور امیر، سب کے بچوں کو اچھی تعلیم دینا چاہتے ہیں۔ ہمیں یہ نہیں لگتا کہ ہم نے کچھ غلط کیا ہے۔ ہم تمام بچوں کو اچھی تعلیم دینا چاہتے ہیں۔ امیر اور غریب کے بچے سب کے لیے یکساں تعلیم حاصل کریں۔ ایم سی ڈی اسکولوں کی حالت بہت خراب ہے۔ اب اگر ایم سی ڈی میں بھی حکومت آتی ہے تو ہم ایم سی ڈی کے اسکولوں کا بھی بھلا کریں گے۔ اروند کیجریوال نے ایک اور سوال پر کہا کہ جب بھی وہ کچھ کہتے ہیں اور جب عوام ان کی بات نہیں سنتی تو کسی کو سامنے لاتے ہیں۔ پنجاب الیکشن سے پہلے انہوں نے کہا کہ کیجریوال ایک دہشت گرد ہے۔ پھر عوام ان کی باتوں پر ہنسنے لگے۔ پھر انہوں نے کمار وشواس کو آگے بڑھایا اور اسے بلایا۔ اب یہ کہہ رہے ہیں شراب پالیسی میں گھپلہ ہوا ہے۔ جبکہ سی بی آئی نے کہا ہے کہ کوئی گھوٹالہ نہیں ہوا ہے۔ لوگ ان کی بات نہیں سن رہے، اس لیے اب وہ انا ہزارے کے کندھے پر بندوق رکھ کر بھاگ رہے ہیں۔ وہ یہ کام کرتے رہتے ہیں۔ یہی سیاست ہے۔ میرا اپنا خیال ہے کہ اب سی بی آئی تحقیقات ہو چکی ہے۔ چیک میں کچھ نہیں ملا اب اس پر سیاست نہیں ہونی چاہیے۔ دوسرے وہ جو دہلی کے اندر 20-20 کروڑ دے کر ہمارے ایم ایل اے کو خریدنا چاہتے تھے۔ اس کی تحقیقات ہونی چاہیے۔ ہم تحقیقات سے نہیں بھاگے۔ ہم تحقیقات سے نہیں ڈرتے۔ کیونکہ ہم نے کوئی غلط کام نہیں کیا۔ پھر تحقیقات سے کیوں بھاگ رہے ہیں؟اس کی بھی تحقیقات ہونی چاہیے۔ 40 ایم ایل اے 20-20 کروڑ میں خریدنے کی کوشش کر رہے تھے۔ اس کے لیے 800 کروڑ روپے رکھے گئے تھے، وہ اس کی تحقیقات سے کیوں بھاگ رہے ہیں، ان سے تفتیش کیوں نہیں کرا رہے ہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔