جعلی اسلحہ لائسنس معاملہ میں بی ایس ایف جوان کے گھر پر سی بی آئی کا چھاپہ

سی بی آئی کی ٹیم بی ایس ایف کے سابق جوان کے گھر پر تقریباً دو گھنٹے تک رہی۔ خیال رہے فوج کے جوان سے سی بی آئی پہلے بھی کئی بار اس معاملہ میں پوچھ گچھ کرچکی ہے۔

سی بی آئی، تصویر آئی این ایس
سی بی آئی، تصویر آئی این ایس
user

یو این آئی

بھنڈ: جموں و کشمیر سے تیار جعلی اسلحہ لائسنس معاملہ میں مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) نے ضلع بھنڈ کے گورمی تھانہ علاقہ کے کچناؤ کلاں گاؤں میں سابق بی ایس ایف جوان کے گھر پر چھاپہ مارا۔ ذرائع کے مطابق کل بھوپال سے آئی سی بی آئی کی ٹیم جعلی اسلحہ لائسنس سے متعلق دستاویزات کی تحقیقات کے لیے سابق بی ایس ایف جوان کے گھر آئی تھی۔ بتایا گیا ہے کہ سی بی آئی نے پرمود کے گھر سے کچھ دستاویزات برآمد کیے ہیں۔

سی بی آئی کی ٹیم بی ایس ایف کے سابق جوان کے گھر پر تقریباً دو گھنٹے تک رہی۔ خیال رہے فوج کے جوان سے سی بی آئی پہلے بھی کئی بار اس معاملہ میں پوچھ گچھ کرچکی ہے۔ ضلع کے لوگوں کی ایک بڑی تعداد کے پاس جموں و کشمیر سے بنائے گئے اسلحہ لائسنس ہیں۔ بھوپال سے سی بی آئی کی آٹھ رکنی ٹیم انسپکٹر ابھیشیک سوارنکر کی قیادت میں ضلع بھنڈ کے گورمی تھانہ علاقہ کے کچناؤ کلاں گاؤں میں سابق جوان پرمود شرما کے گھر پہنچی۔


ریاست کے اس ضلع میں چار ہزار سے زائد جموں و کشمیر سے بنائے گئے ہتھیاروں کے لائسنس پر موجود ہیں۔ ان میں سے 1500 سے زائد اسلحہ لائسنس ضلع کے اسلحہ ریکارڈ میں درج نہیں ہیں۔ فوجیوں کے یہ اسلحہ لائسنس جموں و کشمیر سے بنے ہیں جو ان کی فوج، پیرا ملٹری فورس میں تعیناتی کے دوران دیئے گئے ہیں۔ ہتھیاروں کی خواہش کی وجہ سے مقامی طور پر بنائے گئے لائسنسوں کے علاوہ جموں و کشمیر کے اسلحہ لائسنس بھی موجود ہیں۔ 22 ہزار سے زائد افراد نے مقامی طور پر ضلع سے اسلحہ کا لائسنس کیا ہے۔

ایڈیشنل کلکٹر پروین پگارے نے آج یہاں بتایا کہ جموں و کشمیر یا بیرونی ریاستوں سے ضلع میں بنائے گئے لائسنسوں کی صحیح تعداد ابھی نہیں بتائی جا سکتی۔ اس کے لیے ہم ریکارڈ چیک کریں گے اور بیرونی ریاستوں سے آنے والے اسلحہ لائسنسوں کی تعداد کے بارے میں بھی معلومات اکٹھا کر رہے ہیں کہ آیا یہ ریکارڈ آرمز برانچ میں دستیاب ہے یا نہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔