’’بی جے پی اراکین رام مندر کا چندہ لینے نکلیں گے اور مسلمانوں سے خود پر پتھراؤ کرائیں گے‘‘

سماجوادی پارٹی رکن پارلیمنٹ ایس ٹی حسن نے کہا کہ بی جے پی کے لوگ جب چندہ لینے نکلیں گے تو چند بکے ہوئے مسلمانوں سے پارٹی پتھراؤ کرائے گی۔ پتھراؤ کے بعد کیا ہوگا، یہ مدھیہ پردیش میں آپ نے دیکھا ہے‘‘

سماجوادی پارٹی لیڈر اور مراد آباد سے رکن پارلیمنٹ ایس ٹی حسن / تصویر ویڈیو گریب
سماجوادی پارٹی لیڈر اور مراد آباد سے رکن پارلیمنٹ ایس ٹی حسن / تصویر ویڈیو گریب
user

تنویر

مراد آباد کے سماجوادی پارٹی رکن پارلیمنٹ ایس ٹی حسن نے بی جے پی کے اوپر فرقہ پرستی پھیلا کر ووٹ حاصل کرنے کا سنگین الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ آنے والے دنوں میں جب رام مندر کا چندہ اکٹھا کرنے بی جے پی اراکین نکلیں گے تو ایک بار پھر ہندو-مسلم کارڈ کھیل کر سیاسی فائدہ اٹھانے کی کوشش ہوگی۔ سماجوادی پارٹی لیڈر نے ایک جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’جب بی جے پی اراکین رام مندر تعمیر کے لیے چندہ لینے نکلیں گے تو کچھ بکے ہوئے مسلمانوں سے خود پر ہی پتھراؤ کروا لیں گے۔ اس سے بی جے پی کو انتخابات میں فائدہ مل جائے گا۔‘‘ ایس ٹی حسن نے اس سلسلے میں مدھیہ پردیش کے اندور واقعہ کا تذکرہ بھی کیا جہاں اب بھی حالات کشیدہ ہیں۔

لوگوں کے سامنے اپنی بات رکھتے ہوئے ایس ٹی حسن نے کہا کہ بی جے پی ہمیشہ سے ہی ہندو-مسلم کارڈ کھیل کر انتخابات میں فائدہ حاصل کرتی رہی ہے اور آنے والے انتخابات میں بھی وہ کچھ ایسا ہی کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’ان کے (بی جے پی) پاس ایک بڑا اچھا ہتھیار ہے۔ میں ہندو بھائیوں سے بھی کہنا چاہ رہا ہوں۔ یہ سبھی کچھ کر لیتے ہیں۔ ان کے پاس فارمولہ ہے ہندو-مسلمان کا۔ بھولے بھالے لوگ مذہبی جذبات میں بہہ کر ان کو ووٹ دے دیتے ہیں۔‘‘

گزشتہ دنوں مدھیہ پردیش کے اندور میں پیش آئے واقعہ کا تذکرہ کرتے ہوئے ایس ٹی حسن نے کہا کہ ’’رام مندر بن رہا ہے... چلیے ایک مسئلہ ختم ہو گیا۔ لیکن انہی کے لوگ جب چندہ لینے نکلیں گے تو چند بکے ہوئے مسلمانوں سے بی جے پی پتھراؤ کرا دے گی۔ پتھراؤ کے بعد کیا ہوگا، یہ مدھیہ پردیش میں آپ نے دیکھا ہے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’وہ (بی جے پی والے) میسیج دے رہے ہیں ہندو کمیونٹی کو کہ ہم ایسا کر سکتے ہیں۔ پتھراؤ کرنے والے بھی یہی ہیں، ان کا حشر نکالنے والے بھی یہی ہیں۔ تو اس بات کو آپ لوگ سمجھیے...۔‘‘

واضح رہے کہ مدھیہ پردیش واقع اندور کے ایک گاؤں میں جب ہندو تنظیم کے کچھ افراد رام مندر کے لیے چندہ اکٹھا کرنے نکلے تو ایک مسجد کے سامنے وہ مبینہ طور پر پوجا پاٹھ کرنے لگے۔ اس پر کچھ لوگوں نے اعتراض ظاہر کیا، اور پھر ہنگامہ شروع ہو گیا اور پتھراؤ کا واقعہ پیش آیا۔ اس پتھراؤ واقعہ کے بعد وہاں کے کئی مقامی مسلمانوں کو گرفتار کیا گیا اور کوئی نہ کوئی بہانہ بنا کر مقامی انتظامیہ نے کئی مسلم گھروں کو منہدم بھی کر دیا گیا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next