بھوانی پور انتخاب: ممتا کو شکست دینے کے لیے بی جے پی نے سب کچھ داؤ پر لگایا!

بی جے پی امیدوار پرینکا ٹبریوال کے حق میں انتخابی تشہیر کرنے والے مرکزی وزیر ہردیپ سنگھ پوری کا کہنا ہے کہ انھیں پرینکا کے لیے لوگوں میں واضح حمایت دیکھنے کو مل رہی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

تنویر

مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کو اس عہدہ پر بنے رہنے کے لیے بھوانی پور اسمبلی سیٹ پر ہو رہے ضمنی انتخاب میں جیتنا ضروری ہے، لیکن بی جے پی نے ان کو شکست دینے کے لیے اپنی پوری طاقت لگا دی ہے۔ بھونی پور ضمنی انتخاب کو لے کر سیاسی ماحول پوری طرح گرم نظر آ رہا ہے اور بی جے پی امیدوار پرینکا ٹبریوال کے حق میں ہوا بنانے کے لیے پارٹی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ بدھ کے روز رہائش اور شہری امور کے مرکزی وزیر ہردیپ سنگھ پوری نے بی جے پی امیدوار کی حمایت میں گھر گھر جا کر تشہیر کی اور انھوں نے کہا کہ وہ لوگوں میں بھگوا پارٹی کی حمایت محسوس کر رہے ہیں۔

پرینکا ٹبریوال کے حق میں انتخابی تشہیر کرنے والے مرکزی وزیر ہردیپ سنگھ پوری نے ایک ٹوئٹ بھی کیا ہے جس میں انھوں نے لکھا ہے کہ ’’بھوانی پور کے رے اسٹریٹ علاقے میں رام موہن دتہ روڈ پر واقع مقامی باشندوں کے ساتھ بات چیت کے دوران میں نے ان کے مسائل اور فکر پر بات چیت کی۔‘‘ ہردیپ سنگھ پوری کا کہنا ہے کہ بی جے پی امیدوار پرینکا ٹبریوال کے لیے واضح حمایت دیکھنے کو مل رہی ہے۔


واضح رہے کہ گزشتہ اسمبلی اتنکاب میں بھوانی پور اسمبلی سیٹ سے فتح حاصل کرنے والے ترنمول کاگنریس کے سوون دیب چٹوپادھیائے نے ممتا بنرجی کے لیے اس سیٹ سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ ان کے استعفیٰ کی وجہ سے ضمنی انتخاب ہو رہا ہے۔ ممتا بنرجی نندی گرام سے بی جے پی امیدوار شوبھیندو ادھکاری سے شکست کھا گئی تھیں اور انھیں وزیر اعلیٰ عہدہ پر بنے رہنے کے لیے 5 نومبر تک منتخب ہونا ہوگا۔

بہر حال، پرینکا ٹبریوال کے لیے بی جے پی بنگال میں زور و شور سے انتخابی مہم چلا رہی ہے۔ اس درمیان بی جے پی کی ریاستی یونٹ کے صدر سکانت مجومدار نے دعویٰ کیا کہ انھیں ہریش چٹرجی اسٹریٹ پر تشہیر کرنے سے روکا گیا جو ممتا بنرجی کی رہائش کی طرف جاتی ہے۔ انھوں نے الزام عائد کیا کہ پولیس نے بی جے پی کو وہاں پر انتخابی تشہیر کرنے سے روک دیا کیونکہ ترنمول کانگریس کو 30 ستمبر کو ہونے والے انتخاب میں شکست کا خوف ہے۔ حالانکہ پولیس ڈپٹی کمشنر (جنوب) آکاش مگھاریا نے ان الزامات کو خارج کر دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’ان کے پاس ٹیکہ کاری سرٹیفکیٹ نہیں تھا اور وہ اعلیٰ سیکورٹی والے علاقے میں داخل ہونے کی کوشش کر رہے تھے اس لیے انھیں دوسری سڑک پر جانے کو کہا گیا۔‘‘

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔