ایودھیا میں 'اسپتال کلچر' سے زیادہ 'مندر کلچر' کی ضرورت: بنگال بی جے پی صدر

دلیپ گھوش کا کہنا ہے کہ جو لوگ اپنے مذہب کے بارے میں بولنے سے ڈرتے ہیں وہ رام مندر کے خلاف بول رہے ہیں، لیکن جو اپنے عقیدے پر فخر کرتے ہیں وہ رام مندر تعمیر کی حمایت کر رہے ہیں۔

دلیپ گھوش، تصویر فیس بک
دلیپ گھوش، تصویر فیس بک
user

تنویر

ایودھیا میں رام مندر تعمیر کے لیے بھومی پوجن کی تقریب گزشتہ 5 اگست کو منعقد ہوئی اور اب امید کی جا رہی ہے کہ 32 مہینے میں عظیم الشان رام مندر بن کر تیار ہو جائے گا۔ لیکن اس درمیان کئی طرح کے متنازعہ بیانات کا سلسلہ جاری ہے اور تازہ بیان مغربی بنگال بی جے پی صدر دلیپ گھوش نے دیا ہے۔ انھوں نے کہا ہے کہ ایودھیا میں اسپتال کلچر سے کہیں زیادہ مندر کلچر کی ضرورت ہے۔

دراصل کئی لوگ سوشل میڈیا پر بھومی پوجن کی اب تک مخالفت کر رہے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ مندر کی جگہ اسپتال قائم کیا جانا چاہیے تھا تاکہ عوام کو اس سے فائدہ پہنچتا۔ ایسے لوگوں کو بنگال بی جے پی صدر دلیپ گھوش نے تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ انھوں نے اپنے بیان میں کہا کہ "وہاں (ایودھیا میں) اسپتال بنانے کی وکالت کرنے والوں میں سمجھ کی کمی ہے۔ اسپتال کلچر سے زیادہ مندر کلچر کی ضرورت ہے۔"

دلیپ گھوش نے ایودھیا میں اسپتال بنانے کے حق میں بات کر رہے لوگوں پر ناراضگی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ وہ خود ہی عوام کو مناسب صحت سہولیات دستیاب کرانے میں ناکام رہے ہیں۔ حالانکہ دلیپ گھوش نے کسی پارٹی یا شخص کا نام نہیں لیا، لیکن ان کے بیان سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ کسی سیاستداں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔ متنازعہ بیانات کے لیے مشہور دلیپ گھوش نے ساتھ ہی یہ بھی کہہ دیا کہ جو لوگ اپنے مذہب کے بارے میں بولنے سے ڈرتے ہیں، وہ رام مندر تعمیر کے خلاف بول رہے ہیں، لیکن جو لوگ اپنے عقیدے پر فخر کرتے ہیں اور بھگوان رام کی پوجا کرتے ہیں وہ اس کی حمایت کر رہے ہیں۔

Published: 8 Aug 2020, 4:19 PM
next