شیوراج حکومت میں قبائلی طبقہ پر مظالم اور استحصال، حکومت وہائٹ پیپر جاری کرے: کمل ناتھ

مدھیہ پردیش کانگریس کے صدر کمل ناتھ نے شیوراج حکومت سے گزشتہ 18 سالوں میں قبائلی طبقہ کے حالات پر وہائٹ پیپر جاری کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

کمل ناتھ، تصویر آئی اے این ایس
کمل ناتھ، تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

مدھیہ پردیش کانگریس کے صدر کمل ناتھ نے شیوراج حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ گزشتہ 18 سالوں میں قبائلی طبقہ کے حالات پر وہائٹ پیپر جاری کرے۔ کانگریس ریاستی صدر کمل ناتھ نے اس تعلق سے ایک بیان جاری کر کہا ہے کہ ’’مدھیہ پردیش کی شیوراج حکومت قبائلی طبقہ کو خوش کرنے کے لیے بھلے ہی کتنی بھی کوشش کر لے، ان تقاریب پر کروڑوں روپے لٹا دے، لیکن سچ یہ ہے کہ ریاست کی بی جے پی حکومت میں قبائلی طبقہ پر مظالم اور استحصال کے واقعات میں ریاست کا نام ملک میں سرفہرست ہے۔‘‘

کمل ناتھ نے بیان میں یہ بھی کہا ہے کہ 18 سال بعد شیوراج حکومت کو قبائلی طبقہ اور ان کے ہیروز کی یاد آ رہی ہے، انھیں رانی کملاپتی سے لے کر برسا منڈا، ٹنٹیا بھیل، راجہ شنکر شاہ، کنور رگھوناتھ شاہ جیسے ہیروز کی یاد آ رہی ہے، یہ سب صرف بی جے پی کا انتخابی ایجنڈا ہے۔


سابق وزیر اعلیٰ کمل ناتھ نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ این سی آر بی کے 2020 کے اعداد و شمار نیتی آیوگ کے ذریعہ جاری کثیر جہتی غریبی انڈیکس اور اب مرکزی قبائلی امور کی وزارت کے ذریعہ جاری 21-2020 کی سالانہ رپورٹ ریاست میں قبائلی طبقہ کی حالت کا انکشاف کرتی ہے۔

قبائلی امور کی وزارت کی رپورٹ بتاتی ہے کہ قبائلی علاقوں میں صحت سہولیات کے معاملے میں بھی مدھیہ پردیش کی حالت بدتر ہے۔ اتنا ہی نہیں، قبائلی آبادی پر مظالم کے معاملے میں بھی مدھیہ پردیش سرفہرست ہے۔ جرائم اور مظالم کی بات کریں تو قبائلی طبقہ کے خلاف ملک بھر میں درج ہونے والے جرائم میں مدھیہ پردیش کی شراکت داری 23 فیصد ہے، جب کہ ملک میں سب سے زیادہ 14.7 فیصد قبائلی آبادی مدھیہ پردیش میں ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔