شوپیاں میں ایک اور تصادم، تین مقامی ملی ٹنٹ ہلاک

ایک رپورٹ کے مطابق مہلوک ملی ٹنٹوں کی شناخت زبیر احمد وانی ساکنہ ترکہ وانگام، کامران ظہور ساکنہ شاہ آباد کراوو اور منیب الاسلام ساکنہ سوگن شوپیاں کے طور پر ہوئی ہے۔ تینوں حزب المجاہدین سے وابستہ تھے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

سری نگر: جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیاں کے ترکہ وانگام میں منگل کی علی الصبح ہونے والے ایک مسلح تصادم میں حزب المجاہدین سے وابستہ تین مقامی ملی ٹنٹ مارے گئے ہیں۔ یہ ضلع شوپیاں میں رواں ماہ چلایا جانے والا چوتھا ملی ٹنٹ مخالف آپریشن تھا جس میں تین ملی ٹنٹ مارے گئے۔ قبل ازیں 7، 8 اور 10 جون کو بالترتیب شوپیاں کے ربن، پنجورہ اور سگھو ہندہامہ نامی علاقوں میں 14 مقامی ملی ٹنٹ مارے گئے تھے۔

جموں وکشمیر پولیس کے ایک ترجمان نے بتایا کہ شوپیاں کے ترکہ وانگام میں منگل کی علی الصبح چھڑنے والے مسلح تصادم میں تین ملی ٹنٹ مارے گئے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق مہلوک ملی ٹنٹوں کی شناخت زبیر احمد وانی ساکنہ ترکہ وانگام، کامران ظہور ساکنہ شاہ آباد کراوو اور منیب الاسلام ساکنہ سوگن شوپیاں کے طور پر ہوئی ہے۔ تینوں حزب المجاہدین سے وابستہ تھے۔

سری نگر میں قائم فوج کی پندرہویں کور کے ترجمان نے بتایا کہ جموں وکشمیر پولیس کو ملنے والی خفیہ اطلاع پر سیکورٹی فورسز نے ترکہ وانگام شوپیاں میں منگل کی علی الصبح کارڈن اینڈ سرچ آپریشن شروع کیا۔ انہوں نے کہا کہ طرفین کے درمیان چھڑنے والے مسلح تصادم میں تین ملی ٹنٹ مارے گئے ہیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ شوپیاں پولیس کو ملنے والی خفیہ اطلاعات کی بنا پر پولیس، فوج کی 44 راشٹریہ رائفلز اور سی آر پی ایف نے منگل کی علی الصبح ترکہ وانگام میں تلاشی آپریشن شروع کیا۔

انہوں نے کہا کہ تلاشی آپریشن کے دوران وہاں محصور ملی ٹنٹوں کو خودسپردگی اختیار کرنے کی پیشکش کی گئی لیکن انہوں نے ایسا کرنے کے بجائے سیکورٹی فورسز پر فائرنگ کی جس کے بعد طرفین کے درمیان مسلح تصادم چھڑ گیا۔ ضلع شوپیاں میں مسلح تصادم کے پیش نظر موبائل انٹرنیٹ خدمات پھر سے منقطع کردی گئی ہیں۔ نیز ضلع کے تمام حساس جگہوں پر سیکورٹی فورسز کی اضافی نفری تعینات رکھی گئی ہے۔

ضلع شوپیاں میں مزید تین ملی ٹنٹوں کی ہلاکت کے ساتھ وادی کشمیر میں رواں برس اب تک مارے جانے والے ملی ٹنٹوں کی تعداد بڑھ کر 103 ہوگئی ہے۔ ان میں سے قریب 73 ملی ٹنٹ کورونا وائرس اور لاک ڈاؤن کے دورے پر مارے گئے۔ ذرائع کے مطابق کورونا لاک ڈاؤن کے بیچ کشمیر میں ملی ٹنٹوں کی ہلاکتوں میں اضافہ درج نہیں ہوا ہے بلکہ نوجوانوں کی طرف سے ملی ٹنٹ تنظیموں میں شمولیت اختیار کرنے کا رجحان بھی ترقی پذیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر میں سال رواں کے ماہ اپریل کی 7 تاریخ تک مختلف علاقوں میں مسلح تصادم آرائیوں کے دوران 41 ملی ٹنٹ ہلاک ہوئے تھے جبکہ ماہ رواں کی 16 تاریخ تک یہ تعداد 103 ہوگئی ہے۔

next