دہلی کورٹ میں شوٹ آؤٹ سے ناراض وکلاء نے ہڑتال کا کیا فیصلہ، کانگریس نے راجدھانی کو ’کرائم کیپٹل‘ بنانے کا لگایا الزام

دہلی کانگریس صدر نے اعداد و شمار پیش کرتے ہوئے کہا کہ دہلی میں قتل، تاوان سمیت تمام جرائم میں 2015 اور 2019 کے دوران 57 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

راجدھانی دہلی واقع روہنی کورٹ میں جمعہ کو ایک جج کی عدالت میں ہوئے شوٹ آؤٹ کے خلاف وکلاء نے ناراضگی کا اظہار کیا ہے۔ واقعہ سے ناراض دہلی کی مختلف عدالتوں کے وکیلوں نے ایک دن کی ہڑتال بلانے کا اعلان کر دیا ہے۔ اپنا احتجاج ظاہر کرنے کے لیے وکیلوں نے ہفتہ کو راجدھانی دہلی کی سبھی ضلع عدالتوں میں ایک دن کی ہڑتال طلب کی ہے۔ اس دوران کوئی بھی وکیل کام نہیں کرے گا۔

راجدھانی کے انتہائی سیکورٹی والی عدالت میں برسرعام فائرنگ کی واردات کو لے کر دہلی پردیش کانگریس نے وزیر داخلہ امت شاہ اور دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ دہلی کانگریس صدر چودھری انل کمار نے کہا کہ برسرعام گولی چلنا یہ ثابت کرتا ہے کہ دہلی میں جنگل راج قائم ہے۔ انھوں نے کہا کہ ملک کی راجدھانی اب ’کرائم کیپٹل‘ یعنی جرائم پیشوں کی راجدھانی بن گئی ہے۔


دہلی کانگریس صدر انل کمار نے کہا کہ دہلی کی سیکورٹی کے انتظامات پر سوال اٹھنے لگے ہیں، وزیر اعلیٰ انتخابی سفر میں مصروف ہیں، وہیں ملک کے وزیر داخلہ امت شاہ کو دہلی سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’کورٹ میں تقریباً 40 راؤنڈ گولیاں چلنے سے جج، وکیل اور دیگر لوگوں کی جان خطرے میں تھی۔ یہ واقعہ ظاہر کرتا ہے کہ کفیہ نظام پوری طرح سے ناکام ہو چکا ہے، جب کہ دہلی پولیس کو خفیہ نظام سے جانکاری ملی تھی کہ اس طرح کا واقعہ ہوگا۔ ایک مہلوک نے ایک ویڈیو ڈال کر حملے کا اندیشہ ظاہر کیا تھا، اس کے بعد بھی برسرعام اس طرح کا واقعہ سرزد ہوا۔‘‘

دہلی کانگریس صدر نے اعداد و شمار پیش کرتے ہوئے کہا کہ دہلی میں قتل، تاوان سمیت تمام جرائم میں 2015 اور 2019 کے دوران 57 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ اسی طرح دہلی میں خواتین کے خلاف جرائم میں 2015 اور 2020 کے دوران 42 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ گزشتہ سال 15 اگست اور اس سال 15 اگست کے دوران عصمت دری کے معاملے میں 36 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔


واضح رہے کہ جمعہ کو دہلی واقع روہنی کورٹ میں پیشی کے دوران بدنام زمانہ بدمعاش گوگی پر کچھ لوگوں نے فائرنگ کر دی جس میں وہ مارا گیا۔ وہاں موجود پولیس نے بھی بدمعاشوں کی فائرنگ کا جواب دیا اور دونوں حملہ آوروں کو مار گرایا۔ دونوں مسلح بدمعاش وکیل کے لباس میں پہنچے تھے اور اسی وجہ سے انھیں پہچانا نہیں جا سکا۔ پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ ٹلّو تاجپوریا گینگ نے وکیل کے لباس میں گوگی پر حملہ کیا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔