’بھگوان رام‘ پر سنجے نشاد کے تبصرہ سے سادھو-سَنت ناراض، بی جے پی کو دیا الٹی میٹم

گزشتہ دنوں سنجے نشاد نے بی جے پی کے ساتھ اتحاد کو لے کر الٹی میٹم دیا تھا، اور اب انھوں نے ایودھیا میں بھگوان رام پر جو متنازعہ بیان دیا ہے، اس سے سادھو-سَنت ناراض ہو گئے ہیں۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

بی جے پی کو الٹی میٹ جاری کرنے کے ایک دن بعد، اس کی ساتھی پارٹی ’نشاد پارٹی‘ کے سربراہ سنجے نشاد نے اب ایودھیا میں بھگوان رام پر اپنے تبصرہ سے سادھو-سَنتوں کو ناراض کر دیا ہے۔ سنجے نشاد نے دعویٰ کیا ہے کہ بھگوان رام ایک عظیم سَنت شرنگی رشی کے بیٹے تھے۔ انھوں نے کہا کہ ’’راجہ دشرتھ کی کوئی اولاد نہیں تھی اور انھوں نے شرنگی رشی کو ایک پوجا کرنے کے لیے کہا، جس کے بعد ان کے بیٹوں کی پیدائش ہوئی۔ یہ کہا جاتا ہے کہ دشرتھ نے اپنی تین رانیوں کو ایک خاص طریقے سے تیار کھیر کھانے کے لیے دی تھی، جس کے بعد بیٹوں کی پیدائش ہوئی۔ لیکن صرف کھیر کھانے سے کوئی حاملہ نہیں ہوتی ہے۔‘‘

سنجے نشاد کے بیان کے بعد سَنتوں کا دعویٰ ہے کہ یہ بھگوان کی بے عزتی ہے۔ یہ بیان صرف سستی تشہیر کے لیے دیا گیا ہے۔ سَنتوں نے بی جے پی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوراً نشاد پارٹی کے ساتھ اپنے اتحاد کو ختم کرے۔ رام جنم بھومی مندر کے پجاری آچاریہ ستیندر داس نے کہا کہ ’’سنجے نشاد کا بیان اور ان کی زبان انتہائی قابل اعتراض ہے۔ یہ بھگوان رام اور ان کے بھکتوں کی بے عزتی ہے۔‘‘


ہنومان گڑھی مندر کے مہنت راجو داس نے کہا کہ ’’یہ بدقسمتی ہے کہ ایک نشاد اس طرح کا بیان دے رہا ہے۔ بھگوان رام نے نشادوں کو بھرپور عزت دی جنھوں نے انھیں ندی پار کرنے میں مدد کی، لیکن آج ایک نشاد لیڈر نے بھگوان کی بے عزتی کی ہے، ہم اس کی سخت مذمت کرتے ہیں۔‘‘ اس درمیان اے آئی ایم آئی ایم سربراہ اسدالدین اویسی نے آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت اور بی جے پی سے بھگوان رام پر سنجے نشاد کے بیان پر صفائی دینے کے لیے کہا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔