اکھلیش کے بعد اوم پرکاش راجبھر نے پڑھے محمد علی جناح کی شان میں قصیدے

اوم پرکاش راج بھر نے محمد علی جناح کی تعریف کرنے کے ساتھ ساتھ سابق وزیر اعظم آنجہانی اٹل بہاری واجپئی اور سینئر بی جے پی لیڈر لال کرشن اڈوانی کو بھی جناح کا معترف قرار دیا۔

اوم پرکاش راجبھر، تصویر آئی اے این ایس
اوم پرکاش راجبھر، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

وارانسی: سماجوا دی پارٹی (ایس پی) کے سربراہ اکھلیش یادو کے بعد اب سہیل دیو بھارتیہ سماج پارٹی کے سربراہ اوم پرکاش راج بھر نے بھی پاکستان کے بابائے قوم محمد علی جناح کی شان میں قصیدے پڑھے ہیں۔ راج بھر نے بدھ کو یہاں کہا کہ جناح کو اگر ملک کا پہلا وزیر اعظم بنا دیا گیا ہوتا تو ملک تقسیم ہونے سے بچ جاتا۔ اتنا ہی نہیں راج بھر نے سابق وزیر اعظم آنجہانی اٹل بہاری واجپئی اور سینئر بی جے پی لیڈر لال کرشن اڈوانی کو بھی جناح کا معترف قرار دیا۔ آنے والے اسمبلی انتخابات کے لئے راج بھر نے حال ہی میں ایس پی کے ساتھ اتحاد کا اعلان کیا ہے۔

میڈیا نمائندوں سے بات چیت میں انہوں نے کہا کہ 'ذرا سوچئے اٹل جی اور اڈوانی جی بھی جناح کے نظریات کی تعریف کیوں کرتے تھے۔ اس لئے میرا ماننا ہے کہ جناح کو اگر ملک کا پہلا وزیر اعظم بنایا گیا ہوتا تو ملک تقسیم ہونے سے بچ جاتا۔


قابل ذکر ہے کہ حال ہی میں اکھلیش نے بھی جناح کی تعریف کرتے ہوئے کہا تھا کہ جدوجہد تحریک آزادی میں انہوں نے مہاتما گاندھی، سردار پٹیل اور پنڈٹ نہرو کی طرح ہی اہم کردار ادا کیا تھا۔ مخالف پارٹیوں نے اس پر سخت تبصرے کا اظہار کرتے ہوئے لیڈروں کے جناح پریم کو انتخابی فائدے کے لئے مذہب منھ بھرائی کی سیاست کا نتیجہ قرار دیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔