سترہویں لوک سبھا میں ڈھائی سال سے ڈپٹی اسپیکر کا عہدہ خالی، ترنمول کانگریس کی تنقید

ڈیرک او برائن نے کہا کہ موجودہ لوک سبھا میں اب بھی کوئی ڈپٹی اسپیکر نہیں ہے۔ اس عہدے پر انتخاب کا اوسط وقت دو ماہ ہے۔ 2019 میں حکومت کو منتخب ہوئے دو سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے۔

ڈیرک او برائن
ڈیرک او برائن
user

یو این آئی

نئی دہلی: ترنمول کانگریس نے 17ویں لوک سبھا کے تقریباً ڈھائی سال بعد بھی ڈپٹی اسپیکر کا عہدہ خالی ہونے پر حکومت پر تنقید کی ہے۔ ترنمول کے رکن پارلیمنٹ ڈیرک اوبرائن نے منگل کو ٹوئٹ کیا کہ وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ امت شاہ کو پارلیمنٹ کی پرواہ نہیں ہے۔

ڈیرک اوبرائن نے کہا کہ موجودہ لوک سبھا میں اب بھی کوئی ڈپٹی اسپیکر نہیں ہے۔ اس عہدے پر انتخاب کا اوسط وقت دو ماہ ہے۔ 2019 میں حکومت کو منتخب ہوئے دو سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے۔ واضح رہے کہ لوک سبھا کے ڈپٹی اسپیکر کا عہدہ 17ویں لوک سبھا کی تشکیل کے تقریباً ڈھائی سال کے وقفے کے بعد بھی خالی ہے۔


ڈپٹی اسپیکر کا عہدہ پارلیمانی روایت کے مطابق اپوزیشن کو جاتا ہے۔ جب اپوزیشن منتشر ہو تو اپوزیشن کی کس جماعت کو یہ عہدہ دیا جائے، اس کا فیصلہ حکومت کی اعلیٰ سطح پر ہوتا ہے۔ لوک سبھا کے ڈپٹی اسپیکر کا عہدہ ایک آئینی عہدہ ہے۔ وائس چیئرمین کی وہی ذمہ داریاں ہوتی ہیں جو اسپیکر کی ہوتی ہیں، جب وہ اسپیکر کی غیر موجودگی میں ذمہ داری سنبھالتے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔