راجستھان بمقابلہ چنئی: رنوں کی زوردار بارش کے درمیان دھونی کی ٹیم کو ملی شکست

آئی پی ایل 2020 کے چوتھے میچ میں راجستھان رائلز نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 216 رن بنائے تھے لیکن فاف ڈوپلیسی اور مہندر سنگھ دھونی کی تیز بلے بازی کے باوجود چنئی سپر کنگز 200 رن ہی بنا سکی۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

تنویر

آئی پی ایل 2020 میں گزشتہ میچوں کے مقابلے آج میدان پر رنوں کی بارش ہوتی ہوئی نظر آئی۔ پہلے راجستھان رائلز کی طرف سے سنجو سیمسن، اسٹیون اسمتھ اور پھر جوفرا آرچر نے دھواں دھار بلے بازی کی، اور دوسری اننگ میں چنئی سپر کنگز کی جانب سے فاف ڈوپلیسی نے چھکوں کی جھری لگا دی، پھر کپتان دھونی نے بھی آخری اوور میں کچھ شاندار چھکے لگائے۔ لیکن اس دلچسپ مقابلے میں جیت راجستھان کو ہی ملی، چنئی کو 16 رنوں سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

چنئی کی ٹیم آج جب 217 رنوں کا ہدف پیچھا کرنے اتری تو لوگ امید لگائے ہوئے تھے کہ شین واٹسن بڑا اسکور بنائیں گے، لیکن مرلی وجے (21 رن) اور واٹسن (33 رن) کچھ خاص نہیں کر سکے۔ فاف ڈوپلیسی ایک طرف جمے رہے اور دوسری طرف بلے باز تھوڑے بہت رن بنا کر آؤٹ ہوتے گئے۔ سیم کرن نے جہاں تیزی کے ساتھ 17 رن بنائے، وہیں کیدار جادھو 16 گیندوں پر 22 رن بنا کر آؤٹ ہو گئے۔ پھر ڈوپلیسی کا ساتھ دھونی نے دیا، لیکن اس وقت تک رَن ریٹ اتنا دھیما ہو گیا تھا کہ آخری اووروں میں تیز بلے بازی کرنے کا فائدہ بھی چنئی کو نہیں ملا۔ فاف ڈوپلیسی 37 گیندوں پر 72 رن بنا کر 19ویں اوور کی 5ویں گیند پر آؤٹ ہو گئے۔ پھر آخری اوور میں مہندر سنگھ دھونی نے اپنے ہاتھ کھولے اور 21 رن بن گئے۔ دھونی نے 17 گیندوں پر 3 چھکّوں کے ساتھ ناٹ آؤٹ 29 رن بنائے۔

جہاں تک راجستھان ٹیم کی گیندبازی کا سوال ہے، آر تیواتیا نے 4 اوور میں 37 رن دے کر سب سے زیادہ 3 وکٹ حاصل کیے۔ جوفرا آرچر نے بہت کفایتی گیندبازی کی اور 4 اوور میں محض 26 رن دے کر ایک وکٹ لیا۔ اونادکٹ اور ٹام کرن کافی مہنگے ثابت ہوئے جنھوں نے 4-4 اووروں میں بالترتیب 44 اور 54 رن دیے۔ ٹام کرن کو ایک وکٹ حاصل ہوا۔ علاوہ ازیں گوپال نے 4 اوور میں 38 رن دے کر ایک وکٹ حاصل کیا۔

اس سے قبل راجستھان رائلز کی ٹیم نے بہترین بلے بازی کا مظاہرہ کرتے ہوئے چنئی سپر کنگز کے سامنے جیت کے 217 کا ہدف دیا ۔ حالانکہ ایک وقت سنجو سیمسن (32 گیندوں پر 74 رن، 9 چھکا 1 چوکا)کی دھواں دھار بلے بازی کو دیکھ کر ایسا محسوس ہو رہا تھا جیسے ٹیم کا اسکور 250 کے آس پاس جائے گا، لیکن ان کے آؤٹ ہونے کے بعد ایک طرف کپتان اسمتھ اچھی بلے بازی کرتے رہے اور دوسری طرف وکٹ گرنے کا سلسلہ جاری رہا۔

جب راجستھان کا اسکور 12ویں اوور میں 132 رن تھا تو سنجو سیمسن آؤٹ ہوئے تھے، اس کے بعد تیسرا وکٹ 134 کے اسکور پر (ڈیوڈ ملر 1 رن)، چوتھا وکٹ 149 کے اسکور پر (رابن اتھپا 5 رن)، پانچواں وکٹ 167 کے اسکور پر (راہل تیواتیا 10 رن) اور چھٹا وکٹ 173 کے اسکور پر (ریان پراگ 6 رن) گر گیا۔ پھر 19ویں اوور میں رن کی رفتار تیز کرنے کی کوشش میں کپتان اسمتھ بھی 47 گیندوں پر 69 رن بنا کر آؤٹ ہو گئے۔ پھر جب راجستھان ٹیم 200 رن کے اندر سمٹتی ہوئی نظر آ رہی تھی بیسویں اوور میں جیفرا آرچر نے آ کر بہترین بلے بازی کی اور لنگی اینگیڈی کو یکے بعد دیگرے 4 چھکے لگا دیے۔ اینگیڈی کے اس اوور میں کل 30 رن بنے اور جیفرا آرچر نے 8 گیندوں پر ناٹ آؤٹ 27 رن بنائے۔

جہاں تک چنئی سپر کنگز کی گیندبازی کا سوال ہے، سیم کرن نے 4 اوور میں 33 رن دے کر سب سے زیادہ 3 وکٹ لیے، جب کہ دیپک چہر، لنگی اینگیڈی اور پیوش چاؤلہ نے 4-4 اوور میں بالترتیب 31 رن، 56 رن اور 55 رن دے کر 1-1 وکٹ لیے۔ رویندر جڈیجہ نے 4 اوور میں 40 رن دے کر کوئی وکٹ نہیں لیا۔

next