’کسانوں، چھوٹے تاجروں کو نقصان دینے والی پالیسیاں بنائی گئیں‘ آر بی آئی کے سابق گورنر رگھورام اور راہل گاندھی کی گفتگو

سابق گورنر رگھورام نے کہا کہ مجھے لگتا ہے کہ اگلا سال اور بھی مشکل ہوگا۔ جنگ اور دیگر وجوہات سے اس سال بھی مشکلات تھیں لیکن اگلے سال ترقی میں کمی آئے گی۔

تصویر ٹوئٹر
تصویر ٹوئٹر
user

قومی آوازبیورو

ریزرو بینک کے سابق گورنر رگھورام راجن اور شکاگو یونیورسٹی کے بوتھ اسکول آف بزنس میں فائنانس کی ممتاز سروس پروفیسر کیتھرین ڈسٹ ملر نے راجستھان میں ’بھارت جوڑو یاترا‘ میں شرکت کی اور راہل گاندھی کے ساتھ پیدل سفر کیا۔ رگھورام راجن اور راہل گاندھی نے وقفے کے دوران مختلف موضوعات پر کھل کر بات کی۔ پیش ہیں اہم اقتباسات:

راہل گاندھی: کیا آپ پہلے کبھی دیہی راجستھان تشریف لائے ہیں؟

رگھورام راجن: میں نیمرانا اور اس کے آس پاس کے گاؤں میں گیا ہوں۔ یہاں کے دیہاتوں کے ارد گرد فیکٹریاں دیکھ کر بہت اچھا لگا تھا۔ جب ہم بچے تھے، پاپا ہمیں پکنک پر نیمرانا لے گئے تھے۔ وہاں شہد کی مکھیوں نے ہم پر حملہ کر دیا تھا۔ پاپا کو اس سے کافی تکلیف ہوئی تھی کیونکہ انہیں مکھیوں نے 25 جگہوں پر کاٹ لیا تھا۔ ہم بچ گئے کیونکہ ماں نے ہمیں کمبل یا کسی اور چیز سے ڈھانپ لیا تھا۔ مائیں تو یقیناً محافظ ہوتی ہی ہیں۔


معیشت کے ساتھ دنیا بھر میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے بارے میں آپ کا کیا خیال ہے۔ ہم امریکہ کی بات کر رہے تھے، آپ کا کیا خیال ہے؟

مجھے لگتا ہے کہ اگلا سال اور بھی مشکل ہوگا۔ جنگ اور دیگر وجوہات سے اس سال بھی مشکلات تھیں لیکن اگلے سال ترقی میں کمی آئے گی۔ ہر کوئی شرح سود بڑھا رہا ہے، اس سے کچھ ترقی ہوگی لیکن ہندوستان میں مسئلہ یہ ہے کہ ہماری برآمدات بھی گر رہی ہے۔ ہندوستان میں افراط زر زیادہ تر صارفین کی افراط زر، سبزیوں کی افراط زر ہے اور اس کا بھی نمو پر اثر پڑے گا۔ اگر ہم پانچ فیصد کی شرح سے ترقی کر سکتے ہیں، تو ہم خوش قسمت ہوں گے۔ ترقی کی شرح اس بات پر منحصر ہوتی ہے کہ آپ کس نمبر سے موازنہ کر رہے ہیں۔ وبائی امراض کے بعد کے سالوں کے ساتھ اعداد کا موازنہ کرنے پر ترقی تیز ہوتی ہے لیکن جب وبائی امراض سے پہلے کے سالوں سے موازنہ کیا جائے تو ہماری ترقی 2.5 فیصد ہوگی جو ہمارے لیے کافی کم ہے۔

آپ اس کا ذمہ دار کس کو ٹھہرائیں گے؟

وبائی مرض بھی تھا لیکن ہم اس سے پہلے ہی زوال کا شکار تھے۔ میں ہر جگہ کچھ صنعت کاروں کو زبردست تفاوت میں دیکھتا ہوں۔ امیر لوگ الگ ہندوستان میں رہتے ہیں جبکہ غریب، کسان، مزدور دوسری دنیا میں رہتے ہیں۔ ایسا اس لئے ہے کیوں کہ ہم عدم مساوات کو کم کرنے کے لیے کچھ نہیں کرتے۔ عدم مساوات یقیناً تشویشناک ہے۔ امیر وبائی مرض سے متاثر نہیں ہوئے۔ اعلیٰ متوسط ​​طبقے کی آمدنی میں وبائی مرض کے دوران دراصل اضافہ ہوا کیونکہ زیادہ تر لوگون نے گھر سے کام کیا۔ غریبوں کو مفت اناج وغیرہ دے کر ان کا خیال رکھا جا رہا ہے لیکن اس کے درمیان کے لوگ سب سے زیادہ متاثر ہوئے۔ وہ نوکریاں اور کام کھو چکے ہیں۔ وہ کسی نہ کسی طرح قرضوں پر زندگی گزار رہے ہیں اور ان کی دیکھ بھال کی ضرورت ہے۔ ہندوستان بڑے کاروبار یا سرمایہ داری کے خلاف جانے کے لیے تیار نہیں ہو سکتا۔ ہمیں بڑے اور چھوٹے کاروبار دونوں کی ضرورت ہے۔ ہمیں جس چیز کی ضرورت نہیں ہے وہ اجارہ داری ہے۔


تو، ہم اس سے کیسے نکل سکتے ہیں؟ ہو سکتا ہے کہ پروسیسنگ، کولڈ چین وغیرہ کے ساتھ زراعت ہمیں نوکریاں دے اور شاید کچھ تبدیلیوں کے ساتھ سبز انقلاب بھی؟

یہ ایک امکان ہے۔ سبزیوں، دودھ اور ڈیری مصنوعات، پولٹری اور پروسیسنگ میں ایک امکان ہے لیکن پروسیسنگ کو کھیتوں کے قریب کرنے کی ضرورت ہے۔ جس سے توانائی کی ضروریات اور کھپت میں کمی آئے گی۔ یہ مستقبل میں تشویش کا ایک بڑا علاقہ ہو گا۔

جب ہم مہاراشٹر سے گزر رہے تھے تو میں ٹیکسٹائل کی صنعت سے وابستہ لوگوں سے ملا۔ ان کا کہنا تھا کہ بنگلہ دیش نے ٹیکسٹائل میں بہت ترقی کی ہے اور اس صنعت کو فروغ دینے کے لیے پالیسیاں ہیں۔ انہوں نے یہ کیسے کیا؟

بنگلہ دیش میں ٹیکسٹائل سب سے اہم صنعت ہے۔ میں سمجھتا ہوں، انہوں نے معیشت کی سطح کو یقینی بنانے کے لیے بڑی نہیں چھوٹی صنعتیں قائم کیں۔ مزدوری یقینی طور پر سستی ہے اور ٹیکسٹائل کی صنعت سے وابستہ زیادہ تر مزدور خواتین ہیں۔ اس نے اس بات کو بھی یقینی بنایا کہ پالیسیاں مستقل ہوں، غیر متزلزل نہ ہوں۔ ایک دن ایکسپورٹ پر پابندی لگائی جائے اور دوسرے دن ایکسپورٹ کو فروغ دیا جائے، اس طرح ترقی نہیں ہوتی۔


اس یاترا کے دوران میرا تعارف بیلاری سے ہوا۔ مجھے بتایا گیا کہ یہ برطانوی دور سے جینز بنانے کا ایک بڑا مرکز تھا۔ کپڑا گجرات سے آتا تھا اور لوگ اسے گھر پر کاتتے، رنگتے اور سلائی کرتے تھے۔ تقریباً 4.5 لاکھ لوگ اس کاروبار سے منسلک تھے لیکن ان کا کہنا ہے کہ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی نے ان کی کمر توڑ دی۔ اس میں اب صرف 50 ہزار لوگ رہ گئے ہیں اور یہ پہلے جیسا نہیں ہے۔ لہذا ایک امکان ہے کہ ایسے اور بھی شعبہ ہیں اور ہر ضلع کسی نہ کسی چیز میں مہارت رکھتا ہے لیکن انہیں پیسوں کی ضرورت ہے۔

ہاں، انہیں قرضوں اور تکنیکی مدد کی ضرورت ہوگی۔ سب سے بڑھ کر، انہیں پالیسیوں پر یقین کی ضرورت ہے۔

آپ آر بی آئی میں تھے۔ کیا آپ بتا سکتے ہیں کہ ایک صنعت کار کو 2 لاکھ کروڑ تک کا بینک قرض حاصل کرنے میں کوئی مسئلہ کیوں نہیں ہے جبکہ چھوٹے کاروباری لوگ جب بینک سے رجوع ہوتے ہیں تو ان سے کئی سوال پوچھے جاتے ہیں اور پھر بھی انہیں قرض نہیں دیا جاتا؟

اگر بینکوں کے پاس سیلز اور ریونیو چین کے بارے میں معلومات ہیں اور وہ دیکھتے ہیں کہ کاروبار بڑھ رہا ہے یا اس کے بڑھنے کی صلاحیت ہے تو وہ قرض دیں گے۔ یہ ہندوستان میں ہونا شروع ہو رہا ہے۔ فن ٹیک اب ہونا شروع ہو رہا ہے لیکن پھر بھی ہندوستان میں ہر چیز کو 10 گنا بڑا کرنے کی ضرورت ہے۔


میں ہندوستان میں کسی چھوٹے کاروبار کے بارے میں نہیں جانتا، ہو سکتا ہے کہ ہلدی رام اور کچھ دوسرے ہیں جو درمیانے سے بڑے کاروبار میں ترقی کر چکے ہیں لیکن امریکہ میں کئی چھوٹی فرمیں پانچ یا دس سالوں میں بڑی ہو جاتی ہیں۔ یہاں وہ مر جاتے ہیں یا چھوٹے رہتے ہیں۔ ایسا کیوں ہے؟

آپ بالکل درست فرما رہے ہیں۔ ہماری بہت سی چھوٹی کمپنیاں ترقی کرنے میں ناکام رہیں۔ ہمیں بہت سے ہلدی رام جیسے اداروں کی ضرورت ہے۔ ہمیں ترقی کرنے کے راستے اور ترغیب کی ضرورت ہے۔ یہاں چھوٹے ہونے کے فائدے ہیں۔ انسپکٹر نہیں آئے گا اور تاجر ٹیکس ادا کرنے کی استطاعت نہیں رکھتا اور وہ حکومت کے ریڈار سسٹم کے تحت کام کرتا ہے۔ حکومت ایسی پالیسیوں کے ذریعے ان کی مدد کر سکتی ہے تاکہ وہ آگے بڑھیں لیکن انہیں ہراساں نہ کیا جائے۔ انہیں بتایا جا سکتا ہے کہ حکومت 5 سال تک ان پر ٹیکس نہیں لگائے گی اور نہ ہی ان کی زندگی اجیرن بنائے گی۔ لیکن جب وہ راڈار میں آنے لائق بڑے ہو جائیں تو ان پر ٹیکس لگایا جائے، اس طرح وہ متاثر نہیں ہوں گے۔

اس پوری یاترا کے دوران کسان شکایت کرتے رہے کہ وزارت تجارت ان کی فصل کی کٹائی کے وقت درآمدی و برآمدی پالیسیوں میں تبدیلی کرتی ہے۔ اور وہ قیمت کم کر دیتے ہیں۔

یہ ایک بڑا مسئلہ ہے کیونکہ شہری علاقوں میں اعلیٰ متوسط ​​طبقے کے لوگوں کے لیے پالیسیاں بنائی جاتی ہیں۔ مثال کے طور پر اگر پیاز کی قیمتیں بڑھ جاتی ہیں، تو ہم پیاز کی درآمد کو قیمتیں کم کرنے کی اجازت دیتے ہیں لیکن جب قیمتیں زیادہ ہوتی ہیں تو ہم برآمدی پابندیاں لگا دیتے ہیں۔ برآمدات پر پابندی کسانوں کے مفاد کے خلاف ہے۔


میں نے بہت سے نوجوان مردوں اور عورتوں سے ملاقات کی۔ جب میں نے ان سے پوچھا کہ وہ کیا کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں، تو انہوں نے ہمیشہ چار یا پانچ پیشوں کا انتخاب کیا۔ وکیل، ڈاکٹر، آئی اے ایس، آرمی اور انجینئرنگ؟ انہیں نوکری ملنے کی امید بھی نہیں ہے۔ آپ کیا سوچتے ہیں؟

میں اتفاق کرتا ہوں کہ بے روزگاری ایک بڑا مسئلہ ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ سروس، تنخواہ اور پنشن کے یقینی ہونے کی وجہ سے ہر کوئی سرکاری نوکری چاہتا ہے۔ لیکن حکومت ایک یا دو فیصد لوگوں کو روزگار دے سکتی ہے۔ زراعت، ٹیکنالوجی، خدمات اور نجی شعبے ایسے ہیں جہاں روزگار بڑھانے کی ضرورت ہے۔ پہلے ہندوستان میں کنسلٹنٹ بیک آفس میں امریکہ کے سیل سروسز کے لئے کام کرتے تھے۔ اب ہندوستان میں ایسے کنسلٹنٹ ہیں جنہیں ہندوستان چھوڑنے کی ضرورت نہیں ہے بلکہ خدمات ایسے فراہم کرتے ہیں جیسے وہ امریکہ میں ہوں۔ انہیں بہت زیادہ تنخواہ ملتی ہے۔ مثال کے طور پر یہاں کے ڈاکٹر اپنی خدمات کو آؤٹ سورس کر سکتے ہیں اور ٹیلی میڈیسن کے ذریعے ملک کے لیے بہت زیادہ زرمبادلہ کما سکتے ہیں۔ اس کے لیے آپ کو انگریزی کو فروغ دینا ہوگا۔ اعلیٰ تعلیم کے لیے پرائمری اور سیکنڈری تعلیم کی ضرورت ہوگی۔ ہمارے اسکول کے طلبا پہلے ہی اپنی کلاسوں سے 3 سال پیچھے ہیں۔ تعلیم پر زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

یاترا کے دوران جس تاجر سے میری ملاقات ہوئی اس نے مجھ سے نوٹ بندی اور جی ایس ٹی کے بارے میں شکایت کی۔ انہوں نے یہ بھی شکایت کی کہ انہیں حکومت سے کوئی مدد نہیں مل رہی۔

غیر ارادی رسمیت کے نتائج ہوتے ہیں۔ فارملائزیشن کے فائدے نہیں ہوتے لیکن لاگت ہوتی ہے اور چھوٹے تاجروں کو نقصان پہنچ رہا ہے۔ کچھ جو ٹیکس ادا نہیں کر رہے تھے وہ ٹیکس نیٹ میں آ گئے ہیں لیکن اس عمل میں انہوں نے اپنے کام کو غیر مسابقتی بنا دیا۔


ہم نے سبز انقلاب، سفید انقلاب، کمپیوٹر انقلاب دیکھا ہے۔ ہم آگے کیا دیکھنے جا رہے ہیں؟

خدمات کا انقلاب اور پائیداری میں انقلاب۔ شمسی اور ہوا کی توانائی کی بہت زیادہ مانگ ہے اور رہے گی۔ موسمیاتی تبدیلی جنوبی افریقہ کو دوسروں سے زیادہ متاثر کرے گی۔ بنگلہ دیش اور پاکستان کا نقصان ہوا ہے اور ہم بھی زیادہ پیچھے نہیں ہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;