افغانستان: کابل کی خواتین ملازمین کو نئے میئر نے گھر پر رہنے کا دیا مشورہ

کابل کے میئر نے ویڈیو پیغام میں کہا کہ ہم نے خواتین کو کام کی اجازت دی ہے، لیکن وہاں جہاں مرد کام نہیں کر سکتے، مثلاً خواتین کے بیت الخلاء میں مردوں کو جانے کی اجازت نہیں، وہاں خواتین کام کریں گی۔

علامتی، تصویر آئی ے ین ایس
علامتی، تصویر آئی ے ین ایس
user

یو این آئی

کابل: افغانستان کے کابل میں طالبان کے نئے میئر حمد اللہ نعمانی نے شہر کی محنت کش خواتین کو کچھ عرصہ گھر پر رہنے کا مشورہ دیا ہے تاکہ مردوں کو ان کی جگہ نوکریاں دی جا سکیں۔ لیکن خواتین سے کہا گیا ہے کہ وہ ان کاموں کو جاری رکھیں جو صرف خواتین ہی کر سکتی ہیں۔ نیوز ایجنسی ریا نووستی نے نعمانی کے حوالے سے بتایا کہ "طالبان ضروری سمجھتے ہیں کہ خواتین کو ایک مدت تک کام کرنے سے روکا جائے" اور یہ کہ خواتین کو صرف وہ کام کرنے کی اجازت دی جائے گی جو مرد نہیں کر سکتے۔

طالبان میئر کے مطابق شہر میں تعمیراتی، انجینئرنگ اور ضلع انتظامیہ میں کل افرادی قوت کا 27 فیصد خواتین ہیں۔ میئر نے ایک ویڈیو پیغام میں بتایا کہ "ہم نے خواتین کو کام کرنے کی اجازت دی ہے جن کے کام مرد نہیں کر سکتے اور جو مردوں کے لیے نہیں ہیں۔ مثال کے طور پر ہم ان خواتین کے بارے میں بات کر رہے ہیں جو شہر میں خواتین کے بیت الخلاء میں کام کرتی ہیں، جہاں مردوں کو جانے کی اجازت نہیں ہے۔


ویڈیو کو العربیہ ٹی وی چینل نے ٹوئٹر پر پوسٹ کیا ہے۔ اس کے علاوہ میئر کے مطابق ضلع میں خواتین ملازمین ہیں اور مرکزی دفتر میں مردوں کو ان کی جگہ نہیں لیا جا سکتا۔ وہ بجلی اور تعمیراتی شعبوں میں کام کرتی ہیں، لیکن ہم نے خواتین سے کہا ہے کہ جب تک حالات معمول پر نہ آئیں اور اس وقت تک ان کی تنخواہیں ادا کی جائیں گی۔ طالبان کا نیا حکم کابل میں خواتین کے امور کی وزارت میں خواتین عملے کے اراکین کے داخلے پر پابندی کے چند دن بعد آیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔