پی ٹی آئی کے کارکنوں کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج

پولیس نے پی ٹی آئی کے درجنوں حامیوں کے ہجوم پر اس وقت آنسو گیس کے گولے داغے جب انہوں نے انتخابی نتائج مرتب کرنے والے دفتر کے باہر احتجاجی دھرنا ختم کرنے سے انکار کر دیا۔

پی ٹی آئی کے کارکنوں کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج
پی ٹی آئی کے کارکنوں کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج
user

Dw

پاکستان تحریک انصاف کے حامیوں نے راولپنڈی اور لاہور سمیت متعدد شہروں میں الیکشن کمیشن کے دفاتر کے باہر احتجاج کیا ہے۔ پولیس اور احتجاج کرنے والوں کے درمیان جھڑپیں بھی ہوئی ہیں۔پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان کی جماعت کی جانب سے آٹھ فروری کے پارلیمانی انتخابات کے حوالے سے نتائج بدلے جانے کے الزامات کے تحت الیکشن کمیشن اور دیگر حکومتی عمارتوں کے باہر پر امن احتجاج کی کال دی گئی تھی۔ کل اتوار 11 فروری کو اس احتجاج کے لیے جمع ہونے والے پی ٹی آئی کے حامیوں کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے آنسو گیس کا استعمال کیا۔

دارالحکومت اسلام آباد سے جڑے شہر راولپنڈی اور لاہور میں احتجاجی مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئیں جبکہ ملک بھر میں درجنوں دیگر مقامات پر ایسا احتجاج بغیر کسی ناخوشگوار واقعے کے عمل میں آیا۔ اس احتجاج کی کال پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں کی جانب سے ہفتے کی شام دی گئی تھی۔ اس کے جواب میں پولیس نے پہلے ہی خبردار کیا تھا کہ غیر قانونی اجتماعات کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق تاہم اس احتجاج کے دوران فوری طور پر کسی کے زخمی ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔


عمران خان کی جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے تعلق رکھنے والے آزاد امیدواروں نے انتخابات میں سب سے زیادہ نشستیں حاصل کیں اور مبینہ طور پر فوج کی حمایت یافتہ پاکستان مسلم لیگ (ن) دوسری سب سے زیادہ سیٹیں جیتنے والی جماعت کے طور پر سامنے آئی ہے۔ تاہم آزاد امیدواروں کی طرف سے حکومت کی تشکیل کے بارے میں غیر یقینی صورتحال نے ملک کو سیاسی غیر یقینی کی کیفیت سے دو چار کر دیا ہے۔ پی ٹی آئی کی حریف پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی وفاقی سطح پر حکومت سازی کے لیے ممکنہ اتحادوں پر بات چیت کر رہی ہیں۔

انتخابات کے دن ملک بھر میں موبائل فون کی بندش اور نتائج دیر سے جاری کیے جانے سے یہ شبہ پیدا ہوا کہ اسٹیبلشمنٹ سابق وزیر اعظم نواز شریف کی مسلم لیگ (ن) کی کامیابی کو یقینی بنانے کے عمل پر اثر انداز ہو رہی ہے۔ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین گوہر علی خان نے ہفتے 10 فروری کو ایک نیوز کانفرنس میں اپنے حامیوں سے پرامن احتجاج کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ پورے پاکستان میں انتخابات میں دھاندلی کی گئی ہے۔


اتوار کے روز اسلام آباد پولیس فورس کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ کچھ افراد الیکشن کمیشن اور دیگر سرکاری دفاتر کے ارد گرد غیر قانونی اجتماعات پر اکسا رہے ہیں۔ غیر قانونی اجتماعات کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔ اسی طرح کا انتباہ راولپنڈی میں بھی جاری کیا گیا تھا جبکہ لاہور میں لبرٹی مارکیٹ کے قریب درجنوں پولیس اہلکار تعینات کیے گئے۔

راولپنڈی میں پولیس نے پی ٹی آئی کے درجنوں حامیوں کے ہجوم پر اس وقت آنسو گیس کے گولے داغے جب انہوں نے انتخابی نتائج مرتب کرنے والے دفتر کے باہر احتجاجی دھرنا ختم کرنے سے انکار کر دیا۔ لاہور میں پی ٹی آئی کے تقریبا 200 حامیوں کا ایک اور اجتماع بھی پولیس کے لاٹھی چارج کے سبب منتشر ہو گیا۔ مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں اس وقت متعدد افراد کو حراست میں لیا گیا جب انہوں نے علاقے کو خالی کرنے سے انکار کر دیا۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;