روس کو شکست دینا 'ناممکن' تاہم جنگ کا خاتمہ ممکن ہے: پوتن

وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ وہ بارہا کہ چکا ہے کہ یہ کییف پر منحصر ہے کہ وہ روسی حکام کے ساتھ کب بات چیت میں شامل ہونا چاہتا ہے۔

روس کو شکست دینا 'ناممکن' تاہم جنگ کا خاتمہ ممکن ہے، پوٹن
روس کو شکست دینا 'ناممکن' تاہم جنگ کا خاتمہ ممکن ہے، پوٹن
user

Dw

روسی صدر ولادیمر پوتن نے ایک خصوصی انٹرویو میں کہا ہے کہ جنگ کے خاتمے کا فیصلہ یوکرین پر منحصر ہے۔ روس کے صدر ولادیمیر پوتن کا کہنا ہے کہ روس کو شکست دینا ''ناممکن'' ہے۔ دائیں بازو کے خیالات کے فاکس نیوز کے سابق میزبان ٹکر کارلسن کے ساتھ ایک طویل انٹرویو میں انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ جنگ کا خاتمہ یوکرین کے ہاتھ میں ہے۔

پوتن نے کہا کہ روس کا پولینڈ یا لاتویا پر حملہ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔ انہوں نے اس جانب بھی اشارہ کیا کہ روسی قید میں وال اسٹریٹ جرنل کے صحافی ایون گرشکووچ کو جیل سے رہا کرنے کا ایک معاہدہ بھی ممکن ہے۔ روسی صدر کا کہنا تھا، ''اب تک، میدان جنگ میں روس کو اسٹریٹجک طور پر شکست دینے کے بارے میں ہنگامہ خیز باتیں اور چیخ و پکار ہوتی رہی ہے لیکن بظاہر انہیں اب یہ اس بات کا احساس ہو رہا ہے کہ یہ نتائج حاصل کرنا بہت مشکل ہے، میری رائے میں تو یہ ناممکن ہے۔''


کریملن کا کہنا ہے کہ پوتن نے کارلسن کو انٹرویو دینے سے اتفاق اس لیے کیا، کیونکہ ان کا نقطہ نظر بہت سے دیگر مغربی خبر رساں اداروں کی برعکس یوکرین کے تنازعے کی ''یک طرفہ'' رپورٹنگ سے مختلف تھا۔ واضح رہے کہ فاکس نیوز کے سابق میزبان کارلسن کو سازشی نظریات پھیلانے کے لیے جانا جاتا ہے اور انہیں گزشتہ برس قدامت پسند امریکی نشریاتی ادارے فاکس نیوز نے بغیر کوئی وجہ بتائے برطرف کر دیا تھا۔

وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کے ترجمان جان کربی نے انٹرنیٹ پر پوتن کے انٹرویو کے پوسٹ کیے جانے سے قبل ہی اس کا اثر کم کرنے کے لیے ایک بیان جاری کیا اور کہا کہ ''یاد رکھیں، آپ ولادیمیر پوتن کو سن رہے ہیں۔ اور آپ کو ان کی کسی بھی بات کو اہمیت نہیں دینا چاہیے۔''


فروری سن 2022 میں یوکرین پر روسی حملے کے بعد سے کسی امریکی نے پوتن کا پہلی بار انٹرویو کیا، جس میں انہوں نے روسی زبان میں بات کی اور یوکرین پر روسی حملے کی ذمہ داری کییف پر ڈالی۔ انہوں نے اصرار کیا کہ دونوں ممالک اپریل سن 2022 میں استنبول میں ہونے والے مذاکرات میں دشمنی ختم کرنے سے متعلق ایک معاہدے پر متفق ہونے کے راستے پر تھے، تاہم جیسے ہی کیف کے قریب سے روسی فوجیوں نے انخلاء کیا یوکرین مبینہ طور پر اس سے پیچھے ہٹ گیا۔

اس سوال پر کہ کیا روس نیٹو کے رکن ملک پولینڈ میں فوج بھیجنے پر غور کرے گا، پوتن نے کہا: ''صرف ایک صورت میں، اگر پولینڈ روس پر حملہ کرتا ہے۔ کیوں؟ اس لیے کہ ہمیں پولینڈ، لاتویا یا کسی اور جگہ سے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ ہم ایسا کیوں کریں گے؟ ہمیں اس میں کوئی بھی دلچسپی نہیں ہے۔''


امریکی قانون سازوں میں ابھی بھی یہ بحث جاری ہے کہ آیا یوکرین کی جنگی کوششوں کو مزید رقم فراہم کی جائے یا نہیں۔ ریپبلکن اکثریتی ایوان نمائندگان میں سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے قریبی ساتھی یوکرین کی امداد کے خلاف بھی ہیں۔

روسی صدر پوتن نے کہا کہ امریکہ کو اپنے اہم گھریلو مسائل پر زیادہ توجہ دینی چاہیے۔ انہوں نے کہا: ''میں آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ ہم اس معاملے پر کیا کہہ رہے ہیں اور ہم امریکی قیادت کو کیا بتا رہے ہیں۔ اگر آپ واقعی لڑائی بند کرنا چاہتے ہیں تو آپ کو ہتھیاروں کی سپلائی بند کرنے کی ضرورت ہے۔''


ان کا مزید کہنا تھا، ''کیا یہ بہتر نہیں ہوگا کہ روس کے ساتھ بات چیت کی جائے؟ ایک معاہدہ کرتے ہیں۔ آج جو صورت حال پیدا ہو رہی ہے، اس کو اس طرح سے سمجھتے ہوئے کہ روس آخر تک اپنے مفادات کے لیے لڑتا رہے گا۔'' وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ وہ بارہا کہ چکا ہے کہ یہ کییف پر منحصر ہے کہ وہ روسی حکام کے ساتھ کب بات چیت میں شامل ہونا چاہتا ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;