اسٹوکس کا موازنہ کسی سے نہیں کیا جاسکتا: گمبھیر

گوتم گمبھیر نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ بہت سارے ایسے کھلاڑی ہوں گے جو اسٹوکس کی طرح بننا چاہیں گے لیکن بدقسمتی سے اس وقت ورلڈ کرکٹ میں ان جیسا کوئی نہیں ہے۔

بین اسٹوکس، تصویر گیٹی ایمج
بین اسٹوکس، تصویر گیٹی ایمج
user

یو این آئی

نئی دہلی: ہندوستان کے سابق اوپنر گوتم گمبھیر نے انگلینڈ کے بین اسٹوکس کو دنیا کا نمبر ون آل راؤنڈر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس وقت ان کا موازنہ ہندوستان کے کسی بھی کرکٹر سے نہیں کیا جاسکتا ہے۔ گمبھیر نے اسٹار اسپورٹس شو کرکٹ کنکٹڈ میں اسٹوکس کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ آپ فی الحال اسٹوکس کے ساتھ ہندوستان میں کسی کا موازنہ نہیں کرسکتے ہیں۔ کیوں کہ اسٹوکس کی اپنی الگ سطح ہے۔ انہوں نے ٹیسٹ، ون ڈے اور ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں جو کچھ کیا مجھے نہیں لگتا کہ کسی اور نے یہ کیا ہے۔ ہندوستان کو چھوڑ دیں اس وقت عالمی کرکٹ میں کوئی بھی کھلاڑی ایسا نہیں ہے جو ان کے آس پاس موجود ہو۔

انہوں نے کہا کہ ہر کپتان کا خواب ہوتا ہے کہ اسٹوکس جیسا کھلاڑی اس کی ٹیم میں ہو خواہ بیٹنگ ہو، بولنگ ہو یا فیلڈنگ، اسٹوکس ہر شعبے میں قائد ہیں۔ لیڈر بننے کے لئے آپ کو واقعی قائد کہلانے کی ضرورت نہیں ہے۔ آپ کو کپتان بننے کے لئے کپتان کہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ آپ اپنی کارکردگی سے قائد بھی بن سکتے ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ بہت سارے ایسے کھلاڑی ہوں گے جو اسٹوکس کی طرح بننا چاہیں گے لیکن بدقسمتی سے اس وقت ورلڈ کرکٹ میں ان جیسا کوئی نہیں ہے۔

2019 کے بعد سے اسٹوکس انگلینڈ کے سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی رہے ہیں۔ انھوں نے سب سے زیادہ نصف سنچری اور سنچری، بہترین اسٹرائک ریٹ اور سب سے زیادہ مین آف دی میچ کے ساتھ ساتھ مین آف دی سیریز کے ایوارڈ اپنے ملک کے لئے حاصل کیے ہیں۔ ویسٹ انڈیز کے خلاف دوسرے اور ما قبل آخر ٹیسٹ میں 29 سالہ کھلاڑی اسٹوکس ایک ایلیٹ کلب میں شامل ہونے والے چوتھے آل راؤنڈر اور دوسرے انگلش کرکٹر بن گئے ہیں جنہوں نے 4000 رنز، 10 سنچریاں اور 150 سے زیادہ وکٹیں حاصل کی ہیں۔

اس ہفتے سے قبل اسٹوکس نے مانچسٹر میں دوسرے ٹیسٹ میں اپنی بہترین کارکردگی کی بدولت آئی سی سی ٹیسٹ رینکنگ میں آل راؤنڈرز کے زمرے میں جیسن ہولڈر کو پیچھے چھوڑتے ہوئے ٹاپ پوزیشن حاصل کرلی تھی۔ اسٹوکس نے پہلی اننگز میں سنچری بنائی، اس کے بعد دوسری میں تیز ترین ففٹی بنائی اور تین وکٹیں حاصل کیں۔ اس سے قبل انہوں نے ساؤتھمپٹن میں چھ وکٹیں حاصل کی تھیں اور دو اننگز میں 46 اور 43 رنز بنائے تھے۔

next