عثمان خواجہ کے لیے اچھی خبر، آخری ایشز ٹیسٹ کے لیے ٹیم میں رہیں گے برقرار!

سلیکٹرز کے پاس واحد متبادل رہ گیا ہے کہ وہ مارکس ہیرس کو ڈراپ کر کے خواجہ کو بطور سلامی بلے باز ٹیم میں شامل کریں، ہیرس نے اس سیریز میں 29.83 کی اوسط سے 179 رنز بنائے ہیں۔

عثمان خواجہ، تصویر آئی اے این ایس
عثمان خواجہ، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

سڈنی: آسٹریلیائی کپتان پیٹ کمنز نے اشارہ دیا ہے کہ سڈنی ٹیسٹ میں شاندار کارکردگی کے بعد عثمان خواجہ پانچویں ٹیسٹ میں بھی اپنی جگہ برقرار رکھ سکتے ہیں۔ کمنز سلیکشن کمیٹی کا حصہ نہیں ہیں لیکن انہوں نے کہا کہ خواجہ اس وقت اپنے کھیل پر مکمل کنٹرول رکھے ہوئے ہیں۔ تاہم ہفتہ کے روز سڈنی ٹیسٹ میں اپنی دوسری سنچری بنانے کے بعد خواجہ نے کہا تھا کہ وہ اگلے ٹیسٹ میچ میں ٹیم سے باہر ہو سکتے ہیں۔ کورونا سے متاثر ہونے کے بعد گابا ٹسٹ میں سنچری بنانے والے ٹریوس ہیڈ سڈنی ٹسٹ نہیں کھیل سکے اور خواجہ نے ان کی جگہ لی تھی۔

سلیکٹرز کے پاس واحد متبادل رہ گیا ہے کہ وہ مارکس ہیرس کو ڈراپ کر کے خواجہ کو بطور سلامی بلے باز ٹیم میں شامل کریں۔ ہیرس نے اس سیریز میں 29.83 کی اوسط سے 179 رنز بنائے ہیں جس میں میلبورن میں سخت حالات میں نصف سنچری بھی شامل ہے۔ تاہم وہ سڈنی کی دونوں اننگز میں اچھے آغاز کو بڑے اسکور میں تبدیل نہ کر سکے۔


کمنز نے کہا کہ میں پہلے ہی کہہ چکا ہوں کہ میں سلیکٹر نہیں ہوں لیکن جب کوئی واپس آتا ہے اور دو سنچریاں بناتا ہے تو اسے اگلے ہفتے باہر کرنا بہت مشکل ہوتا ہے، ہم اگلے چند دنوں میں سلیکٹرز سے اس پر بات کریں گے، سلیکٹرز بھی آئندہ کچھ روز میں اس پر بات کریں گے۔ لیکن جب کوئی شاندار فارم میں کھیل رہا ہو، اس کے پاس عثمان خواجہ جیسے تجربہ کار ہو اور وہ شاندار طریقہ سے کھیلتا ہے۔

خواجہ نے گزشتہ تین سال میں فرسٹ کلاس کرکٹ میں صرف تین مواقع پر اور اپنے کیریئر کے کل 166 میچوں میں سے 24 میچوں میں اننگز کا آغاز کیا۔ بطور اوپنر ٹیسٹ کرکٹ میں ان کے نام دو سنچریاں ہیں۔ آسٹریلیا کے ایشز اسکواڈ میں خواجہ کو بطور اضافی بلے باز شامل کرنے کی ایک بڑی وجہ ان کی بہترین صلاحیت تھی۔ اگر ڈیوڈ وارنر کی ٹوٹی ہوئی پسلیاں انہیں کھیلنے کی اجازت نہ دیتیں تو خواجہ ایڈیلیڈ میں ان کی جگہ لے لیتے۔


کمنز نے کہا، "ایسا لگا کہ وہ نمبر ایک سے نمبر چھ تک کسی بھی بلے باز کی جگہ لے سکتے ہیں۔ میں جانتا ہوں کہ ایشیا میں ماضی میں ان کے کھیل پر سوالیہ نشان لگ چکا ہے۔ لیکن، آپ دیکھیں کہ وہ اس وقت کس طرح اسپن کھیل رہے ہیں۔" وہ ریورس سوئپ کھیل رہے ہیں، جھاڑو۔ وہ اپنے کھیل پر مکمل کنٹرول رکھتے ہیں ۔ اسی لیے آپ کو یہ تجربہ پسند آتا ہے۔"

آخری ٹیسٹ کے لیے تیزگیندبازی حملہ میں بھی تبدیلی ہوسکتی ہے۔ جے رچرڈسن اور مائیکل نیسر مقابلے میں ہیں۔ لیکن، ہوبارٹ میں آسٹریلیا جس الیون کے ساتھ جائے گی، وہ انگلینڈ کے لوئر آرڈر کو آؤٹ کرنے میں ناکام رہنے کے بعد کلین سویپ کا ہدف نہیں رکھیں گے۔ یہ لگاتار دوسرا سال ہے کہ آسٹریلیائی ٹیم سڈنی میں مضبوط پوزیشن میں ہونے کے باوجود جیت درج نہیں کر سکی ہے۔ لیکن کمنز کا خیال تھا کہ ان کا حساب درست تھا۔ انہوں نے کہا کہ میں فی اوور میں تقریباً ساڑھے تین رنز چاہتا تھا، حالانکہ پچ اس وقت بھی زیادہ پریشان نہیں کر رہی تھی، میں نے سوچا کہ اگر انہوں نے اچھی بیٹنگ کی تو 350 کا ہدف حاصل کیا جا سکتا ہے۔ 110 اوور کافی تھے لیکن ہمارے ذہن میں تھا کہ یہ تھوڑا مشکل ہوسکتا ہے، اس سال ہم نے پچھلے سال کے مقابلے میں کچھ بہتری کی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔