مدھیہ پردیش کی شیوراج سنگھ حکومت عوام کو دے رہی ’انتخابی دھوکہ‘... میناکشی نٹراجن

مدھیہ پردیش میں آدیواسی طبقہ کی حالت بہتر کرنے یا انہیں مضبوط کرنے کا دعویٰ تو کیا جا رہا ہے لیکن حقیقت اس کے برعکس ہے اور شیوراج حکومت انتخابی وہم پیدا کر رہی ہے۔

مدھیہ پردیش میں راہل گاندھی
مدھیہ پردیش میں راہل گاندھی
user

میناکشی نٹراجن

حال ہی میں صدر دروپدی مرمو نے مدھیہ پردیش میں دو دن کا قیام کیا۔ ریاستی حکومت کی طرف سے شہڈول ضلع کے لال پور میں برسا منڈا جینتی کے موقع پر منعقدہ ’آدیواسی گورو دیوس‘ میں مدھیہ پردیش 'پی ای ایس اے' اصول کے باضابطہ نفاذ کا اعلان کیا گیا۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ 4 دسمبر 2021 کو تانتیا بھیل کے یوم شہادت کے موقع پر وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے 1996 میں منظور شدہ پی ای ایس اے (پنچایتوں سے متعلق آئین کے نویں حصہ کی دفعات کی شیڈول ایریاز میں توسیع کرنے والا) نافذ کرنے اور اس کے اصول وضع کرنے کی بات کی۔

سب سے پہلے یہ مناسب ہوگا کہ 'پی ای ایس اے' قانون کو سمجھ لیا جائے اور اس کے تاریخی پس منظر کا بھی ادراک کیا جائے۔ برسا منڈا نے 19ویں صدی کے آخر میں 'ابوا راج' یعنی 'سوراج' کا نعرہ دیتے ہوئے جابر برطانوی راج کے خلاف جنگ لڑی اور برطانوی جیل میں شہید ہو گئے۔ آئینی کمیٹی میں اپنا نقطہ نظر رکھتے ہوئے، جے پال سنگھ منڈا نے قبائلی حقوق کے لیے آواز بلند کی تھی۔ انہوں نے مزید کہا تھا کہ ملک کو جمہوریت کی بازیابی قبائلی برادری سے سیکھنی چاہیے۔ قبائلی برادری کا کام ہمیشہ جمہوری اور شراکت داری پر مبنی رہا ہے۔


ملک کے پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو نے قبائلی روایت اور ورثے کے تحفظ کے لیے پانچ اصول بنائے تھے۔ قبائلی ورثے کا تحفظ، ان پر کسی اور ثقافتی طرز زندگی کو زبردستی مسلط کرنے کی کسی بھی قسم کی کوشش کو برداشت نہ کرنا پہلا اصول تھا۔ پانی، جنگل اور زمین کے قدرتی حقوق کی قبولیت، کم از کم بیرونی مداخلت، انتظامیہ میں اسی برادری کی شرکت اور قبائلی انسانی حقوق کا تحفظ دیگر چار اصول تھے۔

اس کی گونج آئین کے دیئے گئے بنیادی حقوق میں بھی سنائی دیتی ہے۔ قانونی طور پر اس سمت میں کوششیں کی گئی ہیں تاکہ سود خوری کے خاتمے، جنگلاتی پیداوار کی ذخیرہ اندوزی، ماہی گیری وغیرہ اور بچولیوں کو ختم کر کے کوآپریٹیو نظام کو مضبوط کیا جا سکے۔ ایس سی/ایس ٹی مظالم کے خاتمے کے قانون نے جبری مشقت، بندھوا مزدوری، جنسی استحصال، بچوں کی اسمگلنگ کا سخت نوٹس لیا۔


'پی ای ایس اے' قانون قبائلی روایت کے تحت شراکتی جمہوریت کے لیے بھوریہ کمیٹی کی سفارشات کے بعد 1996 میں منظور کیا گیا تھا۔ پانچویں اور چھٹے شیڈول میں شامل علاقوں کے لیے یہ ضروری تھا۔ تقریباً دس ریاستوں نے طے شدہ علاقے قائم کیے تھے۔ یہ قبائلی اکثریتی علاقے ہیں۔ ان طے شدہ علاقوں میں پنچایتوں کی توسیع کو 'پی ای ایس اے' کہا جاتا ہے۔

اس قانون کا مقصد قبائلی روایتی اجتماعی حقوق کو قانونی حیثیت فراہم کرنا، کمیونٹی کو جنگلات اور قدرتی انتظام میں حصہ دار بنانا اور قدرتی انتظام میں گرام سبھا کو بااختیار بنانا ہے۔ جنگلات کی پیداوار کا انتظام اور جنگلات کے حقوق میں کرداروں کا انتخاب بھی اس میں شامل کیا گیا۔


کئی ریاستیں کئی سالوں تک اس سے لاتعلق رہیں۔ اب مدھیہ پردیش سمیت کچھ ریاستوں نے اسے نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے لیکن ایسا لگتا ہے کہ یہ سب صرف آنے والے انتخابات کو ذہن میں رکھتے ہوئے کیا گیا ہے۔ ظاہر ہے کہ حکمران جماعت تقریباً ساڑھے انیس فیصد قبائلی آبادی کو اپنی طرف متوجہ کیوں نہیں کرنا چاہے گی؟ لیکن قبائلی طبقے کے تئیں اس نئی بیدار ہونے والی حساسیت کا اصل مقصد کیا، یہ بھی جان لینا ضروری ہے۔

مدھیہ پردیش کے 52739 گاؤں میں سے 22600 جنگلات کے ارد گرد واقع ہیں۔ جنگلات کے کل رقبہ 94689 مربع کلومیٹر میں سے 51919 مربع کلومیٹر پر قبائلی برادریاں آباد ہیں۔ اس سے یہ بھی خود بخود ثابت ہو جاتا ہے کہ جنگلات کے تحفظ میں ان کی شرکت کتنی ضروری ہے اور قدرتی توازن، برادری اور فطرت روایتی طور پر کس قدر رہی ہے۔ تاہم جدید ترقی کے حامی ان برادریوں کو جنگلات کے استحصال کا ذمہ دار قرار دیتے ہیں۔ مثال کے طور پر انہوں نے فور لین، اسمارٹ سٹی، پولی تھین کا کچرا اور پانی کی آلودگی وغیرہ کو پھیلایا ہے۔


مدھیہ پردیش کی حکومت نے 37420 مربع کلومیٹر کو غیر منقطع جنگلاتی علاقہ قرار دیا اور کچھ وقت پہلے جلد بازی میں ان کی نجکاری کا اعلان کیا۔ دلیل یہ تھی کہ تمام پبلک سروسز ناقص ہیں اور پرائیویٹ سروسز موثر اور کارآمد ہوتی ہیں، جیسے کہ اسکول، اسپتال وغیرہ لہٰذا جنگلات کی نجکاری سے جنگلات کا انتظام چاک و چوبند ہوگا۔

نجی کمپنیاں تو صرف تجارتی مفادات کی تکمیل کرتی ہیں۔ غریبوں کے لیے ان کی لائف انشورنس میں کوئی جگہ نہیں، نہ ہی صحت، تعلیمی اداروں میں۔ وہ بکسواہا جنگل میں ہیروں کی کھدائی بھی کریں گے، نہ صرف جنگل کے تحفظ کے لیے۔ ایسی صورت حال میں مقامی کمیونٹی کا کیا حشر ہوگا، یہ سمجھنا مشکل نہیں۔


نوآبادیاتی حکمرانوں نے صرف اپنے تجارتی مفادات کے لیے محفوظ جنگلاتی علاقے بنائے تھے۔ یہ قدم قبائلی برادری سے سب سے پہلے اٹھنے والی 'ابوا راج' کی آواز کو ختم کرنے اور اس کی بالادستی قائم کرنے کے لیے اٹھایا گیا تھا۔ قبائلی برادری کو محکمہ جنگلات کے ماتحت کر دیا گیا۔ اب پرائیویٹ کارپوریٹ کے تحت بنایا جائے گا۔ جب اس کی مخالفت کی گئی تو یہ بات بھی بلند آواز میں کہی گئی کہ جنگلات کا اصل استحصال نجی شعبہ کر رہا ہے۔ پھر حکومت کچھ دیر کے لیے تذبذب کا شکار رہی۔

اب 'پی ای ایس اے' کی نئی دوڑ شروع ہو گئی ہے۔ نئے اصول نے قبائلی حقوق کا تحفظ نہیں کیا بلکہ حقوق چھین لیے ہیں۔ نئے اصول کے مطابق گرام سبھا کے پاس صرف وہی اختیارات ہوں گے جو مدھیہ پردیش پنچایتی راج ایکٹ 1993 کے تحت دیئے گئے ہیں یعنی، ان کے پاس 'پی ای ایس اے' میں نشان زد روایتی کمیونٹی حقوق نہیں ہوں گے۔ 'پی ای ایس اے' ایکٹ 1996 کے تحت پورے مسکن پر گرام سبھا کا حق سمجھا جاتا تھا لیکن مدھیہ پردیش کے نئے اصول میں حقوق کی حد صرف پنچایت کی حد تک ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ گرام سبھا کو جنگلات کے حقوق سے متعلق کوئی تسلیم نہیں ہوگا۔ نئے 'پی ای ایس اے' قواعد جنگلات کی پیداوار اور جنگلات کے انتظام پر گرام سبھا کے حقوق پر خاموش ہیں۔ اسی طرح مرکز بانس کو ایک معمولی جنگلاتی پیداوار مانتا ہے لیکن ریاستی حکومت ایسا نہیں کرتی۔ قبائلی برادری کے لیے بانس کا استعمال ان کے طرز زندگی کا ایک لازمی حصہ ہے۔ گرام سبھا 'پی ای ایس اے' کے تحت کسی کے ماتحت نہیں ہے لیکن ان قوانین نے گرام سبھا کو ضلع پنچایت ایجنسی بنا کر رکھ دیا ہے۔ ایسی حالت میں اجتماعی حقوق کا کوئی مطلب نہیں ہے۔ اصل حق قبائلی برادری سے بہت دور ہے۔ برسا منڈا کا 'ابوا راج' کا خواب ادھورا ہے۔


میں نے حال ہی میں پڑھا کہ جب شیروں کو چنئی سے راجستھان لایا گیا تو ان شیروں کو مقامی ٹرینرز کی عدم دستیابی کی وجہ سے مشکل کا سامنا کرنا پڑا جو کہ اچھی طرح سے تمل زبان بولتے تھے۔ تمل انسٹرکٹر کچھ دن وہاں رہا۔ تب کونو میں منتقل کئے گئے چیتوں کا کیا بنا ہوگا؟ لیکن ان 250 خاندانوں کا کیا ہوگا جنہیں تیندوے کی وجہ سے اپنے گاؤں سے بے دخل کر دیا گیا ہے۔

آبادی میں 8-10 فیصد آبادی قبائلی بے دخلی کا 55 فیصد ہے۔ ان کا کیا حال ہوگا جب وہ اپنی فطرت سے ہی محروم ہوں گے۔ بے دخلی کے بعد 'پی ای ایس اے'، جنگلات کے حقوق کا پانچواں شیڈول بے اثر ہو جاتا ہے۔ کیا قبائلی غرور اس طرح زندہ رہ سکے گا؟ یا یہ صرف ایک نمائش ہے۔ بھارت جوڈڑو یاترا کے دوران دریائے نرمدا کے کنارے آباد قبائلی طرز زندگی کو جاننے اور سمجھنے کا ایک تاریخی موقع ملا۔ قبائلیوں اور فطرت دونوں کے سامنے ایک چیلنج ہے۔ ان کے باہمی تعلقات کو حساس بنائے بغیر کوئی ترقی ممکن نہیں۔ 'ابوا راج' کا مطلب ہے 'سوراج' اپنے آپ میں ترقی کا ایک متبادل راستہ ہے۔ اس طرح ماحولیاتی استحصال اور نقل مکانی کو مدنظر رکھتے ہوئے مستقبل کے منصوبے طے کیے جا سکتے ہیں۔ آج جہاں ترقی کے نام پر نقل مکانی ہوئی وہاں ایک مخصوص کلچر کا بے وقت خاتمہ ہوا۔ اس کا علم ہونا چاہیے۔ یہ بھی دیکھنا چاہیے کہ جن منصوبوں کے نام پر نقل مکانی ہوتی ہے اس سے قبائلی برادری کو کتنا فائدہ ہوتا ہے۔ یاترا کے دوران ان تمام مسائل پر بات کرنے کا موقع ملا۔ یاترا سے نیا راستہ نکلے گا، جو 'ابوا راج' ہوگا۔

(میناکشی نٹراجن کانگریس کی رہنما اور سابق رکن پارلیمنٹ ہیں)

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;