نیشنل اسٹاک ایکسچینج آف انڈیا لمیٹڈ مسلسل تیسرے سال دنیا کا سب سے بڑا ڈیریویٹیو ایکسچینج بنا

رینکنگ فیوچرز انڈسٹری ایسوسی ایشن (ایف آئی اے)، ڈیریویٹوز ٹریڈنگ باڈی، جو ڈیریویٹیو ڈیلز کے لیے انڈسٹری کی سب سے بڑی تنظیم ہے، کے زیر انتظام ڈیٹا پر مبنی ہے۔

اسٹاک ایکسچینج، تصویر آئی اے این ایس
اسٹاک ایکسچینج، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

ممبئی: ملک کا سب سے بڑا اسٹاک ایکسچینج نیشنل اسٹاک ایکسچینج آف انڈیا لمیٹڈ (این ایس ای) مسلسل تیسرے سال دنیا کا سب سے بڑا ڈیریویٹو ایکسچینج بننے میں کامیاب ہوگیا ہے۔ رینکنگ فیوچرز انڈسٹری ایسوسی ایشن (ایف آئی اے)، ڈیریویٹوز ٹریڈنگ باڈی، جو ڈیریویٹیو ڈیلز کے لیے انڈسٹری کی سب سے بڑی تنظیم ہے، کے زیر انتظام ڈیٹا پر مبنی ہے۔ کیلنڈر سال 2021 کے لیے ورلڈ فیڈریشن آف ایکسچینج (ڈبلیو ایف ای) کے اعداد و شمار کے مطابق تجارت کی تعداد کے لحاظ سے این ایس ای کو کیش ایکویٹیز میں چوتھے نمبر پر رکھا گیا ہے۔

وکرم لیمے، منیجنگ ڈائریکٹر اور سی ای او(این ایس ای) نے بتایا کہ "این ایس ای کا ایک عالمی رہنما کے طور پر ابھرنا اور مسلسل تیسرے سال دنیا میں سب سے بڑے ڈیریویٹیو ایکسچینج کے ساتھ ساتھ تجارت کی تعداد کے لحاظ سے کیش ایکویٹی میں چوتھا سب سے بڑا تبادلہ ہونا، یہ ہمارے ملک کے لیے بڑے فخر کی بات ہے۔ ہم واقعی حکومت ہند، سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج بورڈ آف انڈیا، ریزرو بینک آف انڈیا، ٹریڈنگ اور کلیئرنگ ممبران، مارکیٹ کے شرکاء اور اپنے تمام اسٹیک ہولڈرز کے کئی سالوں سے ہمارے ساتھ مسلسل تعاون کے لیے شکر گزار ہیں۔ ہماری کامیابیاں ان کے تعاون کے بغیر ممکن نہیں تھیں۔


این ایس ای کو ایکویٹی ڈیریویٹیوز اور کرنسی ڈیریویٹیوز میں تجارت کیے جانے والے معاہدوں کی تعداد کے لحاظ سے دنیا کے سب سے بڑے ایکسچینج کے طور پر درجہ بندی کی جاتی ہے۔ دستاویز کی سطح پر این ایس ای نے انڈیکس کے اختیارات اور کرنسی کے اختیارات میں تجارت کیے جانے والے معاہدوں کی تعداد کے لحاظ سے پہلے نمبر پر رکھا ہے۔ انڈیکس کے اختیارات کے معاہدے نفٹی بینک انڈیکس میں پہلے نمبر پر ہیں اور نفٹی 50 انڈیکس انڈیکس آپشنز کے زمرے میں تجارت شدہ معاہدوں کی تعداد کے لحاظ سے عالمی سطح پر دوسرے نمبر پر ہے۔ امریکی ڈالر - روپے کے اختیارات کا معاہدہ کرنسی کے اختیارات کے زمرے میں تجارت کیے جانے والے معاہدوں کی تعداد کے لحاظ سے پہلے نمبر پر ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔