پیغمبر اسلام پرتبصرہ کے معاملے میں ہندوستانی سفیرطلب

قطر نے ہندوستان میں حکمراں جماعت کے اس بیان کا خیرمقدم کیا ہے جس میں ان سرگرمیوں کے لیے پارٹی عہدیداروں کی معطلی کا اعلان کیا گیا ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

نائب صدر ایم وینکیا نائیڈو کے دورہ قطر کے درمیان بھارتیہ جنتا پارٹی کے ایک عہدیدار کی طرف سے پیغمبر اسلام کے بارے میں کئے گئے متنازعہ تبصرے پرقطر کی وزارت خارجہ نے ہندوستانی سفیر دیپک متل کو طلب کیا۔

قطر کی وزارت خارجہ نے ہندوستانی سفیر دیپک متل کو طلب کیا اور ایک سرکاری خط حوالے کیا۔ خط میں ہندوستان میں حکمراں جماعت کے ایک کارکن کی طرف سے پیغمبر اسلام اور اسلام کے خلاف کیے گئے متنازعہ ریمارکس کی مذمت کی گئی۔ مسٹر متل نے کہا کہ یہ ٹویٹس کسی بھی طرح سے حکومت ہند کے خیالات کی نمائندگی نہیں کرتے ہیں۔


قطر نے ہندوستان میں حکمراں جماعت کے اس بیان کا خیرمقدم کیا ہے جس میں ان سرگرمیوں کے لیے پارٹی عہدیداروں کی معطلی کا اعلان کیا گیا ہے۔ قطر ہندوستانی حکومت سے عوامی معافی اور ان تبصروں کی فوری مذمت کی توقع کر رہا ہے۔

قطر ایم اوایف اے کے ذریعہ جاری بیان کے تعلق سے ایک میڈیا سے ہندوستانی سفارت خانے کے ترجمان نے کہا کہ دفتر خارجہ میں ایک میٹنگ ہوئی جس میں ہندوستان میں افراد کی جانب سے مذہبی شخصیت کو بدنام کرنے والی کچھ قابل اعتراض ٹویٹس پر تشویش کا اظہار کیا گیا۔


دریں اثنا، دہلی بی جے پی میڈیا سیل کے سربراہ نوین کمار جندل کے پیغمبر محمد کے خلاف ٹویٹ سےعرب دنیا میں عدم اطمینان کی صورت حال پیداہوگئی اورہیش ٹیگ کے ساتھ ٹویٹر پر ٹرینڈ کررہے ہندوستانی مصنوعات کے بائیکاٹ کی اپیل کی گئی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔