’خاتون صحافیوں کی سلامتی اور فلاح و بہبود کے لیے ٹھوس اقدامات کئے جائیں‘

دہلی یونین آف جرنلسٹس نے خواتین کو درپیش مسائل پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ خواتین کی حفاظت، سلامتی اور فلاح بہبود کے لیے ٹھوس اقدامات کرے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

نئی دہلی: دہلی یونین آف جرنلسٹس (ڈی یو جے) نے بین الاقوامی یوم خواتین پر خواتین اور بالخصوص میڈیا سے وابستہ خواتین کو درپیش مسائل پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ خواتین کی حفاظت، سلامتی اور فلاح بہبود کے لیے ٹھوس اقدامات کرے۔

ڈی یو جے کی جنرل سکریٹری سجاتا مدہوک نے جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ ان کی تنظیم اپنی ان تمام بہادر بہنوں کو سلام کرتی ہے جو ہمارے شہری حقوق کی حفاظت کے لیے جاری پرامن جدوجہد کی قیادت کررہی ہیں۔ محترمہ مدہوک نے حکومت سے اپیل کی کہ وہ سی اے اے کو جلد از جلد واپس لے۔

ڈی یو جے نے اپنی ایک قرارداد میں کہا کہ خواتین کے ساتھ بدسلوکی اور انہیں ہراساں کرنے کے واقعات کو روکنے کے لیے ٹھوس قدم اٹھائے جائیں۔ قرارداد میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے فیس بک‘ ٹوئٹر جیسے سوشل میڈیا پلیٹ فارموں کا غلط استعمال روکنے کے لیے فوری اقداما ت کیے جائیں تاکہ خواتین میڈیا اہلکار آزادی کے ساتھ بے خوف ہوکر اپنا کام کرسکیں۔

مدہوک نے دہلی میں حالیہ فسادات کے دوران اپنی جان جوکھم میں ڈال کر رپورٹنگ کرنے والی خواتین صحافیوں کی تعریف کی اور کہا کہ انہوں نے جس ہمت سے کام لے اپنی پیشہ ورانہ ذمہ داریاں ادا کی ہیں اس سے آج میڈیا کا اعتبار بلند کرنے میں مدد ملے گی۔

    next