ملک کی پہلی مسلم خاتون ریسلنگ کوچ فاطمہ بانو

فاطمہ بانو نے قومی تربیتی کیمپ میں گیتا ببیتا پھوگاٹ اور ساکشی ملک جیسی مشہور پہلوانوں کو بھی تربیت دی ہے۔

سوشل میڈیا 
سوشل میڈیا
user

یو این آئی

اندور: ملک کی واحد مسلم ریسلنگ کوچ فاطمہ بانو نے اتوار کو اپنا 45واں یوم پیدائش منایا اس موقع پر مدھیہ پردیش کے ارجن ایوارڈ یافتہ کوچ کرپا شنکر سمیت اہم شخصیات نے مبارکباد دی ہے ۔

فاطمہ نے معاشرے میں گھر سے ہونے والی مخالفت کو نظرانداز کرتے ہوئے ریسلنگ میں بڑی کامیابیاں حاصل کیں اور ملک کی پہلی خاتون ریسلنگ کوچ بن گئیں۔ آج فاطمہ بھوپال میں ریسلنگ کی بہترین کوچ کی حیثیت سے کام کررہی ہیں جس نے ملک اور مدھیہ پردیش میں ریسلنگ کی کامیابیوں میں اضافہ کیا ہے۔ انہوں نے مذہب کی بندشوں کو توڑ کر ملک میں پہلی مسلمان خاتون ریسلنگ کوچ بننے کا اعزاز حاصل کیا اور اپنے خرچ پر بین الاقوامی سطح کی خواتین ریسلنگ کھلاڑیوں کا ایک گروپ تشکیل دیا۔ انہوں نے قومی تربیتی کیمپ میں گیتا ببیتا پھوگاٹ اور ساکشی ملک جیسی مشہور پہلوانوں کو بھی تربیت دی ہے۔

فاطمہ ابتدا میں جوڈوکی کھلاڑی تھیں۔ 45 سالہ فاطمہ نے 1997 میں کشتی شروع کی تھی۔ ان کے والد سید نصراللہ بی ایچ ایل میں تھے اور والدہ نشا بانو گھریلو خاتون تھیں۔ فاطمہ کو مدھیہ پردیش کا 2001 میں اعلی کھیل ایوارڈ وکرم ایوارڈ سے نوازا گیا ہے اور وہ اس مقام کو حاصل کرنے والی مدھیہ پردیش کی پہلی پہلوان ہیں۔ وہ 2004 سے 2016 تک مدھیہ پردیش کے محکمہ کھیل میں کوچ کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکی ہیں۔ انہوں نے 2002 میں کوچ کی حیثیت سے اپنی دوسری اننگز کا آغاز کیا اور گاوں سے دیہی علاقوں میں ایسی خواتین کی صلاحیتوں کے ذریعہ قومی اور بین الاقوامی سطح پر متردد تمغے جیتنے میں کامیاب رہیں۔ اندور کے ارجن ایوارڈ یافتہ پہلوان اور معروف کوچ کرپا شنکر نے فاطمہ کو ان کی سالگرہ پر مبارکباد دی ہے۔

1975 میں پیدا ہوئی فاطمہ بچپن سے ہی بہتر قدوقامت کی مالک تھیں انہوں نے کھیلوں کا آغاز خواتین کی کبڈی سے کیا اور مدھیہ پردیش کے لئے تین نیشنل مقابلے کھیلے۔کبڈی میں ہاتھ آزمانے کے بعد انہوں نے جوڈو کے انتخاب کیا تھا انہوں نے مدھیہ پردیش کے 10 قومی مقابلوں میں بھی حصہ لیا۔ پھر سوچا کیوں نہیں کہ کچھ مختلف کریں اور کشتی سیکھیں ۔جب فاطمہ نے ریسلنگ سیکھنا شروع کی تو انہیں بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ اس کے بعد بھی فاطمہ اپنے والد سید نصر اللہ اور والدہ نشا بانو کی ناراضگی کی پرواہ کیے بغیر اکھاڑے میں اپنا ہاتھ آزماتی رہیں۔ اس کی شروعات بھوپال میں گپو استاد کے اکھاڑے سے ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ مجھے مدھیہ پردیش حکومت کا کھیل کا سب سے بڑا اعزاز وکرم ایوارڈ دیا گیا۔ صرف یہی نہیں ، میرے شوہر شاکرجی کو بھی 'وشامیترا ایوارڈ' سے نوازا گیا۔ ویسے میں مدھیہ پردیش اسپورٹس اینڈ یوتھ ویلفیئر ڈیپارٹمنٹ میں 10 سال تک کھیلوں کی افسر بھی تھی۔ میں نے بعد میں یہ ملازمت چھوڑ دی اور 2006 سے اپنے شوہر کی مدد سے ریسلنگ اکیڈمی شروع کی اور لڑکیوں کو مفت کوچنگ دینا شروع کردی۔

مسلمان لڑکیوں کو اکھاڑے میں لانا کوئی چھوٹا کام نہیں تھا۔ میں گھر گھر گھومتی اور بچوں کے والدین سے التجا کرتی کہ وہ اپنی بیٹیوں کو ریسلنگ سکھائیں۔ آپ سمجھ سکتے ہیں کہ لڑکیوں کو اکھاڑے میں بھیجنے کے لئے مجھے کن کن کاموں کا سامنا کرنا پڑا ہے ، لیکن میں نے ہار نہیں مانی اور اپنے مقاصد کو جاری رکھا۔

مردوں کے کھیل کے طور پر 'ریسلنگ' کو منتخب کرنے کے بارے میں میرے پاس قطعی طور پر کوئی قابلیت نہیں ہے لیکن یہ ایک حقیقت ہے کہ میں ملک کی پہلی مسلم خاتون ریسلنگ کوچ بھی ہوں۔ میں چاہتی ہوں کہ آنے والے وقت میں مدھیہ پردیش کی لڑکیاں تمغے جیتیں اور زیادہ خوشی اس وقت ہوگی جب ایک مسلمان لڑکی کے گلے میں میڈل ہوگا ، تب میرا مقصد پورا ہوگا۔