تل ابیب پہلی مرتبہ دنیا کا مہنگا ترین شہر بن گیا

اسرائیلی شہر تل ابیب نے مہنگا ہونے کے اعتبار سے پیرس کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ پیرس اور سنگاپور ایک ساتھ دوسرے مقام پر ہیں۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

Dw

سن 2020 کے مقابلے میں اسرائیل کے شہر تل ابیب نے پانچ درجے اوپر کی جانب پہنچ کر دنیا کا مہنگا ترین شہر ہونے کا درجہ حاصل کیا۔ سن 2020 میں مہنگے ترین شہر کی پہلی پوزیشن پر تین شہر براجمان تھے، ان شہروں میں پیرس، ہانگ کانگ اور زیورچ شامل تھے۔

رواں برس کی رپورٹ میں یہ تینوں شہر مہنگے ترین ہونے کے درجے سے تنزلی کر گئے ہیں۔ پیرس اور سنگا پور ایک ساتھ دوسری پوزیشن پر ہیں۔ زیورچ تیسرے اور ہانگ کانگ چوتھا مہنگا ترین مقام ہے۔ مہنگے ترین شہروں کی درجہ بندی میں امریکا کا نیویارک سٹی چھٹی پوزیشن پر ہے جب کہ ساتویں پر جنیوا ہے۔


شہری زندگی مہنگی ہونی کی وجوہات

تل ابیب کے دنیا میں مہنگا ترین شہر ہونے کی اولین وجہ ڈالر کے مقابلے میں اسرائیلی کرنسی شیکل کی قدر میں پیدا ہونے والی غیر معمولی بہتری ہے۔ اس اسرائیلی شہر میں ٹرانسپورٹ کے کرائے جہاں بڑھے ہیں وہاں کھانے پینے کی عام ضروریاتِ زندگی کی اشیا بھی مہنگی ہو گئی ہیں۔

رواں برس کے معاشی ڈیٹا کو اکٹھا کرنے کا عمل اگست اور ستمبر میں مکمل کر لیا جاتا ہے اور انہی اعداد و شمار کی بنیاد پر مختلف ممالک اور شہروں کی درجہ بندی کا سلسلہ مکمل کیا جاتا ہے۔ انہی مہینوں میں سمندر کے ذریعے سامان کی ترسیل کی قیمتوں میں بھی خاطرخواہ اضافہ ہوا تھا۔


معاشی اندازوں کے مطابق اوسط کے اعتبار سے دنیا کے قریب سبھی ممالک میں عام اشیا کی قیمتوں میں ساڑھے تین فیصد کا اضافہ دیکھا گیا ہے۔ قیمتوں میں اضافے کی بنیادی وجہ کورونا وبا کی وجہ سے اشیا کی طلب یا ڈیمانڈ میں اضافہ اور سپلائی میں کمی ہے۔

دوسرے کون سے شہروں میں مہنگائی بڑھی ہے

جرمن دارالحکومت برلن مہنگائی کے اعتبار سے گزشتہ برس بیالیسواں درجے پر تھا اور رواں برس اس کی پوزیشن آٹھ درجے نیچے چلی گئی ہے اور مہنگی شہری زندگی کی درجہ بندی میں یہ پچاسویں مقام پر ہے۔ اس طرح برلن اِن مہنگی زندگی رکھنے والے شہروں کی فہرست میں سب سے سستا شہر بن گیا ہے۔ جرمنی کے مالیاتی مرکز کی حیثیت رکھنے والے فرینکفرٹ کی پوزیشن انیسویں ہے۔


مہنگا ترین شہر بننے کی سب سے بڑی چھلانگ ایرانی دارالحکومت تہران نے لگائی ہے۔ سن 2020 میں یہ 79 ویں پوزیشن پر تھا اور سن 2021 میں یہ 29 ویں درجے پر پہنچ گیا ہے۔ تہران کی پوزیشن میں تبدیلی کی وجہ ایران پر عائد امریکی اقتصادی پابندیاں ہیں۔

دنیا کے سستے ترین شہر کے طور پر خانہ جنگی و سیاسی افراتفری کے شکار ملک شام کے دارالحکومت دمشق نے اپنی پوزیشن کو برقرار رکھا ہے۔ سستے ترین شہروں میں دوسری پوزیشن پر ایسے ہی عدم استحکام کے شکارملک لیبیا کا دارالحکومت طرابلس ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔