کیا عمران حکومت ’ہمارے بچوں کی موت‘ کی منتظر ہے، والدین کا احتجاج

چینی صوبے ہوبے میں پھنسے ہوئے پاکستانی طلبہ کے والدین نے بدھ انیس فروری کو اسلام آباد میں احتجاج کے دوران مطالبہ کیا کہ ان کے بچوں کو فی الفور واپس پاکستان لایا جائے۔

سوشل میڈیا
سوشل میڈیا
user

ڈی. ڈبلیو

چینی شہر ووہان میں پھوٹنے والی کورونا وائرس کی وبا اب تک نہ صرف چین کے کئی علاقوں میں بلکہ دنیا کے 30 سے زائد ممالک تک بھی پہنچ چکی ہے۔

چینی حکومت نے صوبے ہوبے کو گزشتہ کئی ہفتوں سے الگ تھلگ کر رکھا ہے۔ وہاں سے نہ تو لوگوں کو نکلنے کی اجازت ہے اور نہ ہی کوئی وہاں جا سکتا ہے۔

اس چینی صوبے کی کئی یونیورسٹیوں میں بین الاقوامی طلبہ بھی کافی بڑی تعداد میں زیر تعلیم ہیں۔ کورونا وائرس کی وبا پھیلنے کے بعد زیادہ تر ممالک وہاں سے اپنے طلبہ اور شہریوں کو خصوصی پروازوں کے ذریعے نکال چکے ہیں۔ کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ شہر ووہان کے علاوہ صوبے ہوبے کے کئی دیگر شہروں میں بھی پاکستانی طلبہ کی کافی بڑی تعداد موجود ہے۔ پاکستانی حکام کی طرف سے تاہم ابھی تک ایسے طلبہ کو متاثرہ چینی علاقوں سے نکالنے کے لیے کوئی قدم نہیں اٹھایا گیا۔

سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی کئی ویڈیوز میں صوبے ہوبے میں پھنسے پاکستانی طلبہ کی طرف سے وہاں موجود مسائل اور وطن واپسی کے سلسلے میں چین میں موجود پاکستانی سفارت خانے اور پاکستانی حکومت کی عدم دلچسپی سے متعلق شکایات سنی جا سکتی ہیں۔

چین میں پھنسے ایسے طلبہ کے حوالے سے پاکستانی سوشل میڈیا پر بھی بحث جاری ہے۔ بہت سے لوگوں کی رائے ہے کہ چونکہ پاکستان کے پاس ایسی سہولیات اور ذرائع کی انتہائی کمی ہے، جو اس وبا پر قابو پانے کے لیے ضروری ہیں، اس لیے اگر یہ وائرس پاکستان پہنچ گیا اور وبائی شکل اختیار کر گیا، تو کافی زیادہ جانی نقصان کا سبب بن سکتا ہے۔

دوسری طرف ایسے طلبہ کے والدین شدید پریشانی میں مبتلا ہیں۔ ایسے ہی ایک طالب علم کے والد ارشد علی ابڑو نے ڈی ڈبلیو سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستانی حکومت کی طرف سے عدم توجہ پر شدید غم و غصے کا اظہار کیا۔ ان کا بیٹا میڈیکل کا طالب علم ہے اور چینی صوبے ہوبے کے شہر جِنگ ژو میں زیر تعلیم ہے۔

ارشد علی ابڑو کے مطابق حالانکہ جِنگ ژو شہر ووہان سے تقریباﹰ ڈھائی سو کلومیٹر دور ہے مگر اب وہاں بھی یہ وائرس پہنچ چکا ہے اور اسی باعث یونیورسٹی اور شہری انتظامیہ نے طالب علموں کو اپنی یونیورسٹی تک ہی محدود رہنے کا حکم دیا ہے: ''اشیائے خورد و نوش کی کمی ہے مگر یونیورسٹی انتظامیہ کی طرف سے طلبہ کی نقل و حرکت کو اس قدر محدود کر دیا گیا ہے کہ ہفتے میں ایک بار پورے گروپ کے کسی ایک طالب علم کو باہر جا کر ضرورت کا سامان لانے کی اجازت ملتی ہے۔‘‘

جِنگ ژو میں ہی موجود ایک پاکستانی طالب علم نے ڈی ڈبلیو کو بتایا کہ ان کے شہر میں اب تک ایک ہزار سے زائد افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہو چکی ہے۔ محمد شہیر نامی اس طالب علم کے مطابق کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں میں ایک پاکستانی طالب علم بھی شامل ہے۔ شہیر کے مطابق اس کیس کے بعد انہیں حکام کی جانب سے اپنے کمروں تک ہی محدود رہنے کی ہدایات دے دی گئی تھیں۔

اسلام آباد حکومت نے اب تک چین میں پھنسے ہوئے پاکستانی طالب علموں کو واپس وطن لانے کے لیے کوئی عملی اقدامات نہیں کیے اور مستقبل قریب میں بھی ایسا ہونے کا بظاہر کوئی امکان نظر نہیں آتا۔

والدین اور وزیر صحت کی ملاقات بے نتیجہ

چین میں پھنسے ہوئے پاکستانی طلبہ کے والدین 19 فرووی کو اسلام آباد میں جمع ہوئے، جہاں حکومت نے انہیں اس سلسلے میں بات چیت کے لیے بلایا تھا۔

پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے صحت سے متعلقہ امور کے خصوصی معاون ڈاکٹر ظفر مرزا اور خصوصی مشیر زلفی بخاری اس ملاقات میں شریک ہوئے تاہم اس کا کوئی ٹھوس نتیجہ نہ نکلا۔ اس موقع پر ان والدین نے حکومت کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔ مظاہرین کا موقف تھا کہ حکومت پاکستانی طلبہ کو چین سے واپس لانے کے حوالے سے غلط بیانی سے کام لے رہی ہے اور انہیں چین سے ایسے طالب علموں کی واپسی کے سلسلے میں نہ تو کسی لائحہ عمل سے آگاہ کیا گیا ہے اور نہ ہی اس حوالے سے کسی تاریخ کا اعلان کیا گیا ہے۔

ارشد علی ابڑو کے مطابق نیپال، بنگلہ دیش اور بھارت کے علاوہ کئی افریقی ملک بھی خصوصی پروازوں کے ذریعے اپنے طلبہ کو چین سے واپس لے جا چکے ہیں مگر پاکستان ابھی تک اس کے لیے تیار نظر نہیں آتا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ بچے خود اپنے خرچے پر بھی واپس آ سکتے ہیں مگر پاکستانی حکومت اس پر بھی تیار نہیں ہے۔ ابڑو نے کہا کہ ان طلبہ کو خصوصی پروازوں کے ذریعے پاکستان واپس لایا جائے اور انہیں احتیاطاﹰ کسی جگہ دو ہفتوں کے لیے قرنطینہ میں رکھا جائے تاکہ اگر کورونا وائرس کا کوئی خطرہ ہو بھی تو اس سے بچا جا سکے۔ انہوں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''اگر آپ ہمارے بچوں کو واپس نہیں لا سکتے تو کم از کم انہیں چین میں ہی کسی ایسی جگہ منتقل کیا جائے، جہاں ان کے اس خطرناک وائرس سے متاثر ہونے کا امکان نہ ہو۔‘‘

ارشد علی ابڑو نے اپنی گفتگو میں یہ بھی پوچھا کہ آیا پاکستانی حکومت اس بات کا انتظار کر رہی ہے کہ روشن قومی مستقبل کی خاطر اعلیٰ تعلیم کے لیے چین جانے والے یہ پاکستانی طلبا و طالبات اس مہلک وائرس کا شکار ہو جائیں؟ انہوں نے کہا، ''اگر حکومت نے مناسب اقدامات نہ کیے تو پھر والدین احتجاج کا راستہ اپنائیں گے کیونکہ وہ حکومت کی طرح اپنے بچوں کو لاوارثوں جیسا نہیں چھوڑ سکتے۔‘‘