کورونا وبا کے دور میں جرمن شہریوں کا وزن بڑھ گیا

جرمنی میں گزشتہ تقریبا ایک برس کی لاک ڈاؤن جیسی بندشوں کے دوران گھر سے کام کرنے کی وجہ سے لوگ موٹے ہونے لگے ہیں۔ صحت سے متعلق ایک نئی تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ وبا کے بعد سے لوگوں کا وزن بڑھ گیا ہے۔

کورونا کی وبا کے دور میں جرمن شہریوں کا وزن بڑھ گیا
کورونا کی وبا کے دور میں جرمن شہریوں کا وزن بڑھ گیا
user

ڈی. ڈبلیو

گزشتہ برس موسم بہار میں جرمنی میں لاک ڈاؤن جیسی بندشوں کے نفاذ کے بعد سے ہی جرمن شہریوں میں موٹاپے میں اضافہ ہوا ہے۔ یہ بات جرمنی میں امراض اور صحت سے متعلق اہم سائنسی ادارے رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ کی ایک نئی تحقیق سے سامنے آئی ہیں۔ ادارے کی یہ نئی تحقیق بدھ نو دسمبر کو شائع ہوئی ہے۔

اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مہلک کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے سد باب کے لیے جو تدابیر اور اقدامات کیے گئے، ان کے جرمن شہریوں کی صحت پر کس طرح کے منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ اس تحقیق سے معلوم ہوا کہ اس برس اپریل اور اگست کے درمیان جرمن شہریوں کا اوسطاًتقریبا ایک کلو وزن بڑھ گیا۔


اس رپورٹ کے مطابق کورونا وائرس کی وبا میں لاک ڈاؤن جیسی بندشوں کے دوران جہاں لوگوں کی روز مرہ کی طرز زندگی میں تبدیلیاں آئیں وہیں غیر صحت مند غذائی اشیاکے کھانے میں بھی اضافہ ہوا اور اسی وجہ سے لوگوں کا وزن بڑھنے لگا۔

ڈاکٹروں کے پاس بھی جانا کم ہوا


رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ کی اس تازہ رپورٹ کے مطابق موسم بہار کے پہلے لاک ڈاؤن کے دوران لوگوں کا ڈاکٹروں کے پاس علاج کے لیے بھی آنا جانا کم ہوا، جس میں عام ڈاکٹروں کے ساتھ ساتھ خصوصی امراض کے ماہر ین بھی شامل ہیں۔

اس اسٹڈی کے مطابق جرمن شہریوں نے اس دوران بظاہر، ''طبی سروسز کے استعمال کو بھی کافی حد تک ترک ہی کر دیا تھا۔'' جرمن اسپتالوں نے بھی کووڈ 19 کے مریضوں کی تعداد میں اضافے کے پیش نظر، تاکہ اسپتالوں میں جگہ کی قلت نہ ہونے پائے، اپنی بہت سی معمول کی سرگرمیوں کو بھی مؤخر کر دیا تھا۔


اس سروے کے لیے جرمنی میں اس برس اپریل سے ماہ ستمبر کے دوران 15 برس سے اوپر کے تقریباً 23 ہزار افراد سے فون پر بات چیت کی گئی۔اس تحقیق سے ان ابتدائی خدشات کی تصدیق نہیں ہو پائی کہ وبائی مرض یا پھر اس پر قابو پانے کے اقدامات نفسیاتی عوارض میں اضافے کا باعث بنے یا نہیں۔

تحقیق میں کہا گیا ہے، ''عام آبادی میں افسردگی کی علامات یا پھر گھریلو سطح پر جو حمایت یا پھر مدد حاصل ہوتی ہے، اس میں کوئی خاص فرق نہیں پایا گیا۔'' تاہم رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ نے اس بات پر بھی زور دیا کہ ملک میں صحت کی مجموعی صورتحال سے متعلق ایک حتمی تصویر اب بھی دستیاب نہیں ہے اور اس کے لیے مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔


اس رپورٹ کے مطابق اس دوران لوگوں کے سگریٹ پینے کی عادت میں بھی کمی آئی ہے تاہم یہ بات واضح نہیں ہے کہ آیا وبا کے پیش نظر کمی آئی یا پھر کوئی اور وجہ ہوسکتی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔