یوکرین میں جنگ: جرمن اسلحہ ساز کمپنی کے کاروبار میں اضافہ

جرمنی میں ہتھیار تیار کرنے والی کمپنی ہیکلر اینڈ کوخ نے بتایا ہے کہ رواں سال کے ابتدائی تین ماہ میں اُن کے کاروبار میں نمایاں اضافے کے ساتھ ساتھ نیٹ منافع بھی دوگنا سے زیادہ ہو چکا ہے۔

یوکرین میں جنگ: جرمن اسلحہ ساز کمپنی کے کاروبار میں اضافہ
یوکرین میں جنگ: جرمن اسلحہ ساز کمپنی کے کاروبار میں اضافہ
user

Dw

یوکرین میں فروری کے اوآخر میں روس کی طرف سے حملوں کا سلسلہ شروع کیا گیا تھا۔ اب جرمن اسلحہ ساز کمپنی ہیکلر اینڈ کوخ نے اپنے کاروبار میں نمایاں اضافے کا اعلان کیا ہے۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کی رپورٹ کے مطابق ہیکلر اینڈ کوخ کمپنی نے سن 2022 کی پہلی سہ ماہی کے دوران گزشتہ برس کے مقابلے میں 22.2 فیصد، یعنی 77.5 ملین یورو کا اضافی اسلحہ فروخت کیا ہے۔ اس دوران کمپنی کا نیٹ منافع 3.3 ملین یورو سے بڑھ کر 8.1 ملین یورو تک پہنچ چکا ہے۔


بہترین افتتاحی سہ ماہی

ایچ اینڈ کے نامی اس جرمن اسلحہ ساز کمپنی کے چیف فائنینشل افسر بیورن کرؤنرٹ نے کہا کہ کمپنی کی تاریخ کی یہ سب سے بہترین افتتاحی سہ ماہی تھی۔ انہوں نے مثبت نتائج کی وجہ اسلحے کی بھاری مانگ اور کام کے زیادہ مؤثر طریقوں کو قرار دیا۔

کمپنی کے اعداد وشمار پر یوکرین میں جنگ کے بظاہر اثرات تو دکھائی نہیں دے رہے کیونکہ فروری کے اوآخر سے اور مارچ کے اختتام تک، کسی ملک نے نہ تو اسلحے کے آرڈر دیے اور نہ ہی کسی طرح کی ڈیلیوری وصول کی تھی۔ واضح رہے اس کمپنی کی جانب سے کاروبار کے بارے میں مزید تفصیلات نہیں جاری کی گئی ہیں۔


'روس کے ہمسایہ ممالک ہتھیاروں کا ذخیرہ بڑھا رہے ہیں‘

کمپنی کے مالک ژینس بوڈو کوخ کے مطابق سن 2014 میں روس کی جانب سے کریمیا پر قبضے کے بعد ماسکو کے ہمسایہ ممالک کی طرف ہتھیاروں کی مانگ میں اضافہ ہوا ہے اور اس میں مزید اضافے کی توقع بھی کی جارہی ہے۔

انہوں نے کہا، ''نیٹو کی مشرقی یورپی رکن ریاستیں اپنے ہتھیاروں کے ذخیرے بڑھا رہی ہیں یا پھر ان میں جدت لا رہی ہیں۔ اپنی دفاعی صلاحیتوں کو یقینی بنانے کے لیے سرمایہ کاری کی جا رہی ہے۔‘‘


کوخ نے تاہم اس بارے میں وضاحت نہیں پیش کی کہ کون سے ممالک نے رواں سال کے ابتدائی تین مہینوں میں ان کی کمپنی کو اسلحے کے آرڈر دیے۔ البتہ یہ ضرور بتایا جاتا ہے کہ ہیکلر اینڈ کوخ کمپنی ناروے، لیتھوینیا اور لیٹویا کو ماضی میں رائفلیں سپلائی کرتی رہی ہے اور ان تینوں ممالک کے ایچ اینڈ کے ساتھ ایسے معاہدے بھی طے ہیں، جس کے تحت دوبارہ آرڈر دیے جاسکتے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔