جرمن فوج افغانستان سے اپنی بیئر بھی واپس لائے گی

جرمن فوج افغانستان سے بیئر کے ہزاروں کینز واپس لانے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔ سکیورٹی وجوہات کی بنا پر افغانستان میں تعینات فوجیوں کے بیئر پینے پر پابندی عائد ہے۔

جرمن فوج افغانستان سے اپنی بیئر بھی واپس لائے گی
جرمن فوج افغانستان سے اپنی بیئر بھی واپس لائے گی
user

Dw

افغانستان میں موجود جرمن فوجیوں پر سکیورٹی وجوہات کے باعث بیئر اور دیگر الکحل مشروبات پینے کی اجازت واپس لی جا چکی ہے، جس کے بعد جرمن فوج (بنڈس ویئر) افغانستان سے بیئر کے 65 ہزار کینز جرمنی واپس لانے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

جرمن جریدے 'ڈیئر شپیگل‘ کی ایک رپورٹ کے مطابق افغانستان سے 20,000 لیٹر بیئر کے علاوہ وائن اور سیکٹ کی 340 بوتلیں اور شینڈی بھی جرمنی واپس لائی گی۔

افغانستان میں جرمن فوج کے کمانڈر انسگار میئر نے ملک سے جرمن فوجیوں کے انخلا کے آخری مراحل کے دوران ان پر الکحل مشروبات استعمال کرنے پر پابندی عائد کر دی تھی۔ رپورٹ کے مطابق پابندی کا فیصلہ علاقے میں جرمن فوجیوں پر ممکنہ حملوں کی رپورٹس سامنے آنے کے بعد کیا گیا تھا۔

آپریشنز کمانڈ کے مطابق جرمن فوج پر افغان فوجیوں اور سکیورٹی اہلکاروں کو الکحل مشروبات فروخت کرنے پر پہلے ہی سے پابندی عائد تھی۔ یہ پابندی قانونی اور مذہبی وجوہات کی بنا پر عائد کی گئی تھی۔

نیٹو ممالک کے فوجی دستے اور جرمن بنڈس ویئر کے اہلکار رواں برس گیارہ ستمبر سے پہلے ممکنہ طور پر افغانستان سے واپس چلے جائیں گے۔

یہ امر بھی اہم ہے کہ افغانستان میں امریکی افواج کے بعد سب سے زیادہ غیر ملکی فوجی جرمن بنڈس ویئر نے تعینات کر رکھے تھے۔ افغانستان مشن جرمن فوج کی تاریخ کا سب سے بڑا اور مہنگا ترین مشن تھا۔

جرمنی کے کثیر الاشاعتی اخبار 'بلڈ‘ کے مطابق جرمن فوج واپس آتے وقت اپنا کچھ عسکری سامان افغانستان ہی میں چھوڑ آئے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔