برطانیہ: کبھی جیل میں ڈالا اور اب مہاتما گاندھی کو برطانوی سکے پر جگہ دی

ہندووں کے تہوار دیوالی کے موقع پر برطانیہ نے پانچ پاونڈ کا ایک خصوصی یادگاری سکّہ جاری کیا۔ جد و جہد آزادی کے رہنما مہاتما گاندھی کو پہلی مرتبہ کسی برطانوی سرکاری سکّے پر جگہ دی گئی ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

Dw

برطانیہ کے وزیر خزانہ رِشی سوناک نے کہا کہ دیوالی کے تہوار کے موقع پر اس یادگاری سکے کو جاری کرتے ہوئے وہ فخر محسوس کررہے ہیں۔ سوناک کا کہنا تھا،”ہندو مذہبی عقیدے پر عمل کرنے والے ایک شخص کے طورپر مجھے فخر ہے کہ میں دیوالی کے موقع پر اس سکے کو جاری کر رہا ہوں۔"

برطانوی وزیر خزانہ کا کہنا تھا،”مہاتما گاندھی نے بھارت کی آزادی کی تحریک میں بنیادی کردار ادا کیا اور ان کی قابل ذکر زندگی کی یاد میں پہلی مرتبہ کوئی برطانوی سکہ جاری کرنا انتہائی شاندار ہے۔"


سوناک کا مزید کہنا تھا کہ یہ سکہ ایک ایسے رہنما کو مناسب خراج عقیدت ہے جس نے اپنی ذات سے پوری دنیا کو متاثر کیا۔

بھارتی ہندو دیوالی کے مذہبی تہوار کے موقع پر بالعموم ایک دوسرے کو تحائف پیش کرتے ہیں جن میں سونے اور چاندی سے تیار اشیاء، زیورات اور سکے وغیرہ شامل ہوتے ہیں۔ بھارت میں اس برس دیوالی کا تہوارکل منایا گیا۔


گاندھی برطانوی سکے پرپہلی مرتبہ

اس سکے میں ایک طرف بھارت کا قومی پھول کنول بنا ہوا ہے اور اس پر مہاتما گاندھی کا مشہور قول”میری زندگی ہی میرا پیغام ہے‘‘ کندہ ہے۔ اسے حنا گلوور نے ڈیزائن کیا ہے۔

یہ سکہ برطانوی شاہی ٹکسال 'رائل منٹ‘ کے وسیع تر دیوالی کلیکشن کا حصہ ہے۔ یہ پہلا موقع ہے جب مہاتما گاندھی کو کسی برطانوی سکے پر جگہ دی گئی ہے۔ یہ سکہ سونے اور چاندی دونوں میں دستیاب ہوگا۔


گو کہ اس سکے کی سرکاری اور قانونی حیثیت ہوگی تاہم اسے عام چلن کے لیے جاری نہیں کیا گیاہے۔ یہ دیوالی کے موقع پر جاری کیے جانے والے دیگر اشیاء کے ساتھ جمعرات سے فروخت کے لیے دستیاب ہے۔

رائل منٹ نے دیوالی کے موقع پرسونے کی چھڑیں بھی فروخت کے لیے تیار کی ہیں جن پر ہندوعقیدے کے مطابق دولت کی دیوی لکشمی کا عکس کندہ ہے۔


سوناک نے تمام شعبہ حیات سے تعق رکھنے والی اقلیتی کمیونٹی کی نمائندگی کو اجاگر کرنے والی مہم کے حصے کے طور پر گزشتہ برس ”تنوع پر مبنی برطانیہ" کے عنوان سے 50 پینی کا ایک نیا سکہ جاری کیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔