الوداع! الوداع ماہِ رمضان الوداع

جمعۃ الوداع کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بخوبی لگایا جا سکتا ہے کہ خود اللہ رب العزت نے قرآن مجید میں الجمعہ کے نام سے سورت مبارکہ نازل کر کے اِس دن کی اہمیت کو اہل اسلام کے لئے مسلم کر دیا

Getty Images
Getty Images
user

قومی آوازبیورو

عالمِ اسلام میں پورے سال ماہ رمضان کا انتظار کیا جاتا ہے اور ہرمسلمان کی دلی خواہش ہوتی ہے کہ اس ماہ میں وہ اپنی جھولی عبادات سے بھرلے۔ عبادت کے ساتھ اس ماہ کو وہ تہوار کے طور پر مناتا ہے۔ روزہ رکھنے سے اس کو جو خوشی ملتی ہے اس کو الفاظ میں بیان کرنا تھوڑا مشکل ہے لیکن گزشتہ دو سال سے وہ اس با برکت اور رونق سے پُر ماہ میں خوفزدہ ہے، اس کی وجہ ہے کورونا کی وبا۔ مسلمان کی خواہش ہے کہ ماہ رمضان الوداع نا ہو بلکہ یہ وبا اس دنیا سے ہمیشہ کے لئے وداع ہو جائے۔

رمضان المبارک کا مہینہ اپنی برکتوں اور فضیلتوں کے ساتھ ہمارے درمیان موجود ہے اور اپنے اختتام کو پہنچ رہا ہے۔ اس ماہ کے آخری عشرے کی طاق راتیں شبِ قدر کہلاتی ہیں یعنی ان راتوں میں اللہ کی کتاب قرآن کریم جو پیغمبر اکرمؐ کے سینہ پر نازل ہوئی، یہ قرآن کی نزول کی راتیں شمار ہوتی ہیں۔ ان راتوں میں پوری دنیا میں مسلمان رات بھر اللہ کی عبادات میں مصروف عمل رہتے ہیں، اسی طرح انہی آخری ایام میں ایک یوم جمعہ ہے، جسے عام زبان میں ہم ’جمعۃ الوداع‘ کہتے ہیں۔


پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کا ارشاد گرامی ہے کہ جمعۃ المبارک کا دن تمام دنوں سے افضل و برتر ہے۔ اس لیے مسلمانوں کے لیے یہ دن سلامتی و رحمت کا حامل ہے، جسکی بڑی اہمیت و فضلیت ہے۔ رمضان کریم کے جمعہ کی اہمیت اور بھی زیادہ ہو جاتی ہے کیونکہ اس جمعۃ المبارک میں رمضان الکریم کی فضیلتیں بھی شامل ہو جاتیں ہیں لیکن جو فضلیت اور مرتبت رمضان المبارک کے آخری جمعۃ المبارک کو حاصل ہے وہ کسی اور دن کو حاصل نہیں ہے۔

رمضان المبارک میں جمعۃ الوداع کو خصوصی اہمیت اور درجہ حاصل ہے، دنیا بھر کے مسلمان جمعۃ الوداع کو خصوصی مذہبی عقیدت اور جذبے سے مناتے ہیں۔ ویسے تو بیشک تمام دن اور تمام راتیں ہی اللہ رب العزت کے قانونِ قدرت میں ہیں مگر اِس کے باوجود خود اللہ عزوجل نے بعض ایام کو دوسرے ایام پر اور بعض راتوں کو دوسری راتوں پر فوقیت دے رکھی ہے۔


ہفتے کے سات ایام میں جمعہ کے دن کو رب تعالیٰ نے خصوصی فضیلت عطا کی ہے اور اِس دن کو بے شمار رحمتوں اور برکتوں سے نواز رکھا ہے۔ ماہِ رمضان کے آخری جمعہ کو جمعۃ الوداع کا درجہ حاصل ہے۔ یہ دن اہل ایمان کو اِس بات کی بھی نوید سناتا ہے، کہ رب تعالیٰ کا مہمان ماہ رمضان المبارک اب کچھ ہی دنوں بعد رخصت ہونے کو ہے اور آج کے بعد آئندہ رمضان تک آنے والے جمعۃ المبارک کے ایام کی فضیلت تو اپنی جگہ برقرار ہے مگر اْن میں رمضان کی برکتیں نہ ہوں گی۔

جمعۃ الوداع کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بخوبی لگایا جا سکتا ہے کہ خود اللہ رب العزت نے قرآن مجید میں الجمعہ کے نام سے سورت مبارکہ نازل کر کے اِس دن کی اہمیت کو اہل اسلام کے لئے مسلم کر دیا۔ جمعۃ المبارک کو دین اسلام میں خاص دن کی حیثیت حاصل ہے، اِس دن کو دنوں کا سردار بھی کہا جاتا ہے۔ اس دن کی اصل روح کے مطابق اپنے عقائد اور شعائر کی درستگی کر لی جائے تو پوری انسانیت فیض یاب ہو سکتی ہے۔


جمعۃ المبارک کی قرآن و حدیث میں بہت زیادہ فضیلت و اہمیت بیان ہوئی ہے، سورۃ الجمعہ کے اندر آخری رکوع میں مسلمانوں کو جمعہ کی ادائیگی پر زور دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ تمام کاروبار چھوڑ کر جمعہ کی ادائیگی کے لئے چلے آؤ اور جمعہ ادا کرنے کے بعد جا کر اپنا کاروبار کرو۔ رمضان المبارک میں جہاں نوافل کا ثواب فرضوں کے برابر ہو جاتا ہے اور فرائض کا ثواب ستر گنا کر دیا جاتا ہے، وہاں اس ماہ مقدس کے جمعہ کا ثواب بھی بہت زیادہ بڑھا دیا جاتا ہے، جمعۃ الوداع کو دیگر ایام سے اس لحاظ سے انفرادیت حاصل ہے کہ اس کے بعد مسلمانوں کو عید الفطر کی شکل میں ایک بہت بڑا انعام ملنا ہوتا ہے۔ خدا کرے یہ جمعۃ الوداع آخری ہو جو ہمیں وبا کے خوف میں گزارنا پڑ رہا ہے۔ ہم سب کی زندگی میں جمعۃ الوداع ہمیشہ خوشیاں لے کر آئے اور ہمیں کبھی بھی کوئی بھی دن لاک ڈاؤن یا خوف کے سائے میں نہ جینا پڑے۔ آمین

(بشکریہ اے آر وائی نیوز)

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔