سائبر فراڈ سے نمٹنے کے لئے قومی ہیلپ لائن: اب تک ایک کروڑ 85 لاکھ روپے کی بازیافت

وزارت داخلہ نے ڈیجیٹل ادائیگیوں کے محفوظ نظام فراہم کرنے اور سائبر فراڈ کی روک تھام کے لئے ملک گیر ہیلپ لائن کا آغاز کیا ہے، جس کی مدد سے اب تک پونے دو کروڑ سے زیادہ کی رقم کی بازیافت کی جا چکی ہے

سائبر کرائم / Getty Image
سائبر کرائم / Getty Image
user

یو این آئی

نئی دہلی: وزارت داخلہ نے ڈیجیٹل ادائیگیوں کے محفوظ نظام فراہم کرنے اور سائبر فراڈ کی روک تھام کے لئے ملک گیر ہیلپ لائن کا آغاز کیا ہے۔ وزارت داخلہ نے جمعرات کے روز جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ قومی ہیلپ لائن نمبر 155260 ایسا رپورٹنگ پلیٹ فارم ہے، جو مالی دھوکہ دہی کی روک تھام میں مددگار ثابت ہوگا۔

سائبر فراڈ کا شکار ہونے والے لوگ اس نمبر پر اپنی شکایات درج کراسکیں گے تاکہ ان کو ہونے والے نقصانات کو مجرموں سے وصولا جا سکے۔ یہ ہیلپ لائن گزشتہ اپریل میں محدود پیمانے پر شروع کی گئی تھی۔ اسے ریزرو بینک آف انڈیا اور دیگر بڑے بینکوں کے اشتراک سے مرکزی وزارت داخلہ کے زیر اہتمام سائبر کرائم کوآرڈینیشن سینٹر نے شروع کیا ہے۔


یہ ہیلپ لائن پہلے ہی سات ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں چھتیس گڑھ، دہلی، مدھیہ پردیش، راجستھان، تلنگانہ، اتراکھنڈ اور اتر پردیش میں کام کر رہی ہے۔ اس ہیلپ لائن کی مدد سے، اب تک ان ریاستوں اور مرکز ی علاقوں کے لوگوں کے ایک کروڑ 85 لاکھ روپے کی بازیافت ہوئی ہے۔ اس میں دہلی اور راجستھان میں بالترتیب 58 اور 53 لاکھ روپے کے سائبر فراڈ شامل ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔