مائیکروسافٹ اور حکومت کے مابین فصلوں کے انتظام اور اسمارٹ زراعت سے متعلق معاہدے پر دستخط

مائیکروسافٹ کمپنی ملک کی چھ ریاستوں کے 10 اضلاع کے منتخب شدہ 100 دیہی علاقوں میں پائلٹ پروجیکٹ شروع کرے گی

علامتی تصویر
علامتی تصویر
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: مائیکروسافٹ کمپنی ملک کی چھ ریاستوں کے 10 اضلاع کے منتخب شدہ 100 دیہی علاقوں میں پائلٹ پروجیکٹ شروع کرنے کے لئے آگے آیا ہے تاکہ اسمارٹ اور منظم زراعت کے لئے کاشت کاروں کو انٹرفیس فراہم کیا جا سکے جس میں کٹائی کے بعد کے انتظام اورتقسیم شامل ہیں۔

اس سلسلے میں بدھ کے روز وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر کی موجودگی میں ایک معاہدے پر دستخط ہوئے۔ اس کے تحت اترپردیش ، مدھیہ پردیش ، گجرات ، ہریانہ ، راجستھان اور آندھرا پردیش کے منتخب دیہات میں پائلٹ پروجیکٹس شروع کئے جائیں گے۔ مائیکرو سافٹ اس پروجیکٹ کے لئے اپنے مقامی پارٹنر، ’کراپ ڈیٹا‘ کے ساتھ شامل ہوا ہے۔

اس سلسلے میں، وزیر نریندر تومر اور دونوں وزرائے مملکت کی موجودگی میں مفاہمت نامہ اور سہ فریقی عمل کا تبادلہ ہوا۔ پروجیکٹ ایک سال کا ہے اور دونوں فریق اس کی لاگت برداشت کریں گے۔ یہ منصوبہ منتخب 100 دیہاتوں میں کسانوں کی بہتری کے لئے مختلف کام انجام دے گا، جس سے ان کی آمدنی میں اضافہ ہوگا۔ اس منصوبے سے کسانوں کی ان پٹ لاگت میں کمی آئے گی اور کاشتکاری میں آسانی ہوگی۔

ملک میں وائبرینٹ ڈجیٹل زرعی ماحولیاتی نظام کی تشکیل کے لئے دوسرے سرکاری اور نجی شعبے کے ساتھ مل کر اسی طرح کے پائلٹ منصوبے چلانے کی تجویز ہے۔

حکومت کا مقصد غیر متضاد معلومات کے مسئلے کو ختم کرکے کسانوں کی آمدنی میں اضافہ کرنا ہے۔ اس مقصد کو حاصل کرنے کے مقصد سے متعدد نئے اقدامات کا آغاز کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ایک اہم اقدام قومی کسانوں کے ڈیٹا بیس پر مبنی ایگری فنڈز کی تشکیل ہے۔ حکومت ملک بھر سے کسانوں کے اراضی کے ریکارڈ کو جوڑ کر کسانوں کا ڈیٹا بیس تیار کررہی ہے۔

وزیر اعظم کسان، مٹی ہیلتھ کارڈ اور پردھان منتری فصل کی انشورنس اسکیم سے متعلق حکومت کے پاس دستیاب اعداد و شمار کو مستحکم کردیا گیا ہے اور دیگر اعداد و شمار کو شامل کرنے کا عمل جاری ہے۔ وزیر زراعت نے وزارت زراعت کی تمام اسکیموں میں جو بھی اثاثے بنائے جائیں گے اسے جیو ٹیگنگ کرنے کی ہدایت بھی جاری کردی ہے۔

2014 کے بعد سے ، حکومت نے کسانوں کی سہولت اور ان کی آمدنی میں اضافہ کے لئے کاشتکاری میں جدید ٹکنالوجی کے استعمال پر بہت زور دیا ہے۔ ٹکنالوجی کے استعمال سے کاشتکاری کاشتکاروں کے لئے منافع بخش سودا ثابت ہوگا ، اسی طرح نئی نسل بھی زراعت کی طرف راغب ہوگی۔

نریندر تومر نے کہا کہ حکومت کی شفافیت والی سوچ کے مطابق وزیر اعظم کسان سمان ندھی (پی ایم کسان) سمیت دیگر اسکیموں کی رقم براہ راست مستحقین کے بینک کھاتوں میں جمع کی جارہی ہے۔ اسی طرح وزیر اعظم کے لئے بھی منریگا کی ترجیحات ہیں ۔ اس سے پہلے ، منریگا میں پیشرفت ہوئی تھی ، لہذا جب ان سے پوچھا گیا تو یہ منظر نامے کو صحیح طور پر بتانا ممکن نہیں تھا، پہلے اس اسکیم میں کئی طرح کی شکایات ہوتی تھیں، لیکن اب یہ خوشی کی بات ہے کہ ٹکنالوجی کا استعمال ہی اس کے ذریعہ کیا جاسکتا ہے۔ منریگا کے تمام اعداد و شمار حکومت کے پاس موجود ہیں ، لہذا آج اجرت کی رقم براہ راست مزدوروں کے بینک کھاتوں میں جاتی ہے۔ آج ، منریگا میں لگ بھگ 12 کروڑ افراد جاب کارڈ ہولڈر ہیں ، جن میں سے تقریبا سات کروڑ لوگ کام لینے آتے رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ زرعی معیشت ہمارے ملک کی ریڑھ کی ہڈی ہے۔ زرعی شعبے نے کورونا کی وبا جیسے منفی حالات میں بھی ملکی معیشت میں مثبت کردار ادا کیا ہے۔ زراعت کا کوئی بھی نقصان ملک کا نقصان ہے لہذا وزیر اعظم نے بہت سے کاموں کو ہاتھ میں لیا۔ یکے بعد دیگرے ، چھوٹے کاشتکاروں کے لئے کاشتکاری کو منافع بخش بنانے کے لئے اسکیمیں بنائی اور نافذ کی جارہی ہیں۔

اس پروگرام میں وزیر مملکت برائے زراعت پروشوتم روپالا اور کیلاش چودھری ، سکریٹری سنجے اگروال ، ایڈیشنل سکریٹری وویک اگروال ، مائیکروسافٹ انڈیا کے صدر اننت مہیشوری ، ایگزیکٹو ڈائریکٹر نوتیج بل اور ڈائریکٹر- اسٹریٹجک سیلزمسز سمت نندنی سنگھ اور کراپ ڈیٹا ٹکنالوجی پرائیوٹ نے شرکت کی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔