جاپان: چاند پر اترنے والا پانچواں ملک

جاپان کی ٹکنالوجی چاند کے چٹانی یا ناہموار خطوں کے درمیان نسبتاً چھوٹے علاقوں میں خلائی جہاز کا اترنا ممکن بنائے گی۔ یہ قابلیت مستقبل میں اہم ہو گی کیونکہ دنیا کی توجہ اب چاند کے جنوبی قطب پر مرکوز ہے

<div class="paragraphs"><p>Getty Images</p></div>

Getty Images

user

مدیحہ فصیح

جاپان نے 20 جنوری 2024 کو چاند کی تحقیقات کے لیے اپنا اسمارٹ لینڈر فار انویسٹی گیٹنگ مون یا ایس ایل آئی ایم (سلَم)، خلائی جہاز چاند کی سطح پر اتارا اور اس نے روورز کو تعینات کیا۔ یہ جاپان کی پہلی مون لینڈنگ ہے اور یوں جاپان چاند پر کامیابی سے اترنے والا دنیا کا پانچواں ملک بن گیا ہے۔ یہ کامیابی خلائی ٹیکنالوجی میں جاپان کی پوزیشن کو مستحکم کرتی ہے۔ باوجود اس کے کہ لینڈر کو بجلی کا مسئلہ درپیش ہے ، یہ واقعہ سیاسی اور تکنیکی دونوں اعتبار سے اہمیت رکھتا ہے ۔

امریکی خلائی ایجنسی، ناسا اور دیگر خلائی ایجنسیوں کی طرح جاپان ایرو اسپیس ایکسپلوریشن ایجنسی یا جے اے ایکس اے، نئی تکنیکوں کا مظاہرہ کر کے اور سائنسی ڈیٹا اکٹھا کرکے تحقیق اور ٹیکنالوجی کو آگے بڑھانا چاہتی ہے۔ جاپان کی لینڈنگ بھی قمری سرگرمیوں میں بڑھتی ہوئی عالمی دلچسپی کا ایک حصہ ہے ۔ ذرائع ابلاغ اور اسپیس و سائنس پر مبنی ویب سائٹس کے مطابق جاپان نے ہدف کے 100 میٹر (328 فٹ) کے اندر چاند پر اترنے کا ایک بے مثال ’پائن پوائنٹ‘ حاصل کیاہے۔ جاپان ایرو اسپیس ایکسپلوریشن ایجنسی (جے اے ایکس اے) نے کہا ہے کہ (پروب) تحقیقات کے شمسی بجلی سے محروم ہونے سے پہلے ہی اسے سلم کے لینڈنگ کے بارے میں تمام ڈیٹا ٹچ ڈاؤن کے 2 گھنٹے اور 37 منٹ میں موصول ہو گیا۔ غلط زاویہ کی وجہ سے سلم کے سولر پینل ممکنہ طور پر بجلی پیدا کرنے میں ناکام رہے ، لیکن سورج کی روشنی کی سمت میں تبدیلی اسے دوبارہ طاقت دے سکتی ہے۔

درست ٹیکنالوجی

جاپان کی کامیابی صرف علامتی نہیں ہے ۔ جاپان لینڈر کے ساتھ کئی نئی ٹیکنالوجیز کا مظاہرہ کر رہا ہے۔ خلائی جہاز کا نام، اسمارٹ لینڈر فار انویسٹی گیٹنگ دی مون (سلم)، خلائی جہاز کی درستگی سے اترنے والی نئی ٹیکنالوجی کا حوالہ دیتا ہے۔ یہ ٹکنالوجی مستقبل کی لینڈنگ میں خلائی جہاز کو چٹانی یا ناہموار خطوں کے درمیان نسبتاً چھوٹے علاقوں میں اترنے میں مدد کر سکتی ہے، بجائے اس کے کہ بڑی ہموار سطح تلاش کی جائے۔ یہ قابلیت مستقبل میں اہم ہو گی کیونکہ تحقیق کرنے والے ممالک کی توجہ چاند کے جنوبی قطب کے مخصوص علاقوں پر مرکوز ہے۔ وہ ایسے علاقوں کی نشاندہی کر رہے ہیں جن میں مفید وسائل ہونے کا امکان زیادہ ہے، جیسے کہ برف کی شکل میں پانی، لہٰذا درست لینڈنگ ٹیکنالوجی خطرات سے بچنے اور بغیر کسی واقعے کے ان علاقوں تک پہنچنے میں معاون ثابت ہوگی۔

خلائی جہاز سلم، جسے مون سنائپر نام بھی دیا گیا ہے، کو بنیادی طور پر انتہائی درست قمری لینڈنگ کے لیے درکار ٹیکنالوجی کو ثابت کرنے کی ذمہ داری سونپی گئی تھی۔ اسے چاند کے شیولی کریٹر کے کنارے پر ایک مخصوص جگہ سے 328 فٹ (100 میٹر) زون کے اندر اترنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا، جو پچھلے لینڈرز کے مقابلہ بہت چھوٹا ہے جن کے لینڈنگ زونز کئی کلومیٹر تک پھیلے ہوئے ہیں۔ سلم نے وژن پر مبنی نیویگیشن سسٹم کا استعمال کیا جس نے چاند کی سطح کی تصاویر لیں۔ اس کے نظام نے تیزی سے ان تصاویر کا جے اے ایکس اے کے پچھلے مشنوں کے ڈیٹا سے تیار کئے گئے چاند کے نقشوں پر موجود گڑھے کے نمونوں سے موازنہ کیا۔


جاپان ایرو اسپیس ایکسپلوریشن ایجنسی نے یہ تحقیقات کاگوشیما پریفیکچر کے تانیگاشیما اسپیس سینٹر سے ستمبر 2023 میں XRISM نامی ایکس رے خلائی دوربین کے ساتھ شروع کی تھی، جسے زمین کے نچلے مدار میں تعینات کیا تھا اور حال ہی میں اس کی پہلی آزمائشی تصاویر کو دکھایا گیا تھا۔ سلم کرسمس کے دن چاند کے مدار میں پہنچا اور 20 جنوری کو تاریخی لینڈنگ کی۔ SLIM کے پاس دو منی روورز بھی تھے، جنہیں لیونر ایکسکرشن وہیکل ایل ای وی-1 اور ایل ای وی-2 کہا جاتا ہے۔ یہ دونوں چھوٹے روبوٹ منصوبہ کے مطابق تعینات کیے گئے اور ایل ای وی-1 چاند کی سطح پر کام کر رہا ہے۔ ایل ای وی-1 میں ایک کیمرہ، نیز سائنسی آلات شامل ہیں، اور چاند پر (manoeuvre) تدابیر کے لیے ہاپنگ میکانزم کا استعمال کرتا ہے جب کہ حکومت، صنعت اور ماہرین کے درمیان شراکت میں تیار کیا گیاLEV-2 ایک ایسا دائرہ ہے جو ہتھیلی میں فٹ ہو سکتا ہے۔ چاند کی سطح پر آنے کے بعد، اس کے دونوں حصے قدرے الگ ہو جاتے ہیں، جس سے اسے گھومنے میں مدد ملتی ہے۔

بعد ازاں بجلی کا مسئلہ پیش آیا اور 21 جنوری کو JAXA نے ایکس (ٹویٹر)پر مختلف اپ ڈیٹس میں کہا کہ لینڈر کو ڈیڈ قرار نہیں دیا گیا ہے، اس کے ہینڈلرز ممکنہ بحالی کے لیے کام کر رہے ہیں۔ جب SLIM کی بیٹری کی طاقت چاند کی سطح پر 12 فیصد تک کم ہو گئی، تو لینڈر جان بوجھ کر بند ہو گیا تاکہ بحالی کے آپریشن کے لیے دوبارہ شروع نہ ہونے سے بچا جاسکے (بیٹری کے زیادہ خارج ہونے کی وجہ سے دوبارہ شروع ہونا مشکل ہوتا)۔ ٹیلی میٹری ڈیٹا کے مطابق، SLIM کے سولر پینل کا رخ مغرب کی طرف ہے۔ لہٰذا اگر سورج کی روشنی چاند کی سطح پر مغرب سے چمکنے لگے تو بجلی پیدا ہونے کا امکان ہے ۔

خلا میں مقابلہ

چین، ہندستان اور جاپان - وہ تین ممالک جو 2000 سے کامیابی کے ساتھ چاند پر اترے ہیں اور خلا سمیت متعدد شعبوں میں مقابلے میں مصروف ہیں۔ تینوں عالمی سطح پر قائدانہ کردار ادا کرنا چاہتےہیں – کہ وہ ایسا کچھ کرنے کے قابل ہے جو بہت کم قوموں نے کیا ہے۔ جاپان کی لانچ ہندستان کے چاند پر اترنے کے صرف چھ ماہ بعد اور ایک امریکی کمپنی ایسٹروبوٹک کی ناکام کوشش کے چند ہفتوں بعد ہوئی ہے۔ روس اور نجی کمپنی آئی اسپیس(iSpace ) دونوں نے 2023 میں لینڈنگ کی ناکام کوششیں کیں۔ جاپان کی کامیاب لینڈنگ یہ ظاہر کرتی ہے کہ وہ اس عالمی کوشش میں ایک اہم کھلاڑی ہے۔

امریکہ، حالیہ ناکامیوں کے باوجود، اب بھی خلائی اور چاند کی تلاش میں واضح رہنما ہے۔ امریکہ کی قومی ہوا بازی اور خلائی انتظامیہ (NASA) ناسا نے اپنے اگلے آرٹیمس مشن میں تاخیر کا اعلان کیا ہے، ناسا کے پاس اس وقت چاند کے گرد چکر لگانے والے متعدد خلائی جہاز ہیں، اور اس نے پہلے ہی کامیابی سے ایس ایل ایس (SLS)راکٹ لانچ کیا ہے، جو انسانوں کو چاند پر لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ ناسا بہت بڑے اور پیچیدہ نظام تیار کر رہا ہے – جیسے گیٹ وے اسپیس اسٹیشن، چاند کے قریب چکر لگانے کا منصوبہ اور آرٹیمس انسانی چاند مشن کے لیے بنیادی ڈھانچہ ۔ ناسا نے حال ہی میں چھوٹے پیمانے کی بہت سی کوششوں کو تجارتی اداروں کے حوالے کر دیا ہے - جیسے کمرشل لیونر پے لوڈ سروسز پروگرام ،جس کے تحت ایسٹروبوٹک (Astrobotic )نے کوشش کی تھی۔ اس نئی حکمت عملی میں کچھ خطرہ شامل ہے، لیکن ناسا کو مشن کے بڑے، پیچیدہ پہلوؤں پر توجہ مرکوز کرنے کی صلاحیت فراہم کرتے ہوئے یہ طریقہ قمری معیشت کو تجارتی جدت اور ترقی کا موقع فراہم کرتا ہے۔

چاند کی سطح کو دریافت کرنے کی عالمی دوڑ تیزہو رہی ہے۔ جاپان امریکہ کے آرٹیمس مشن کے تحت ایک دباؤ والے قمری روور (pressurised lunar rover) تیار کر رہا ہے ،یہ ایک نئی اور پیچیدہ ٹیکنالوجی ہے جو آنے والے سالوں میں چاند پر انسانی مشن کے لیے اہم ہوگی۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;