چندریان 3 کا پروپلشن ماڈیول چاند کے مدار سے زمین کے مدار میں آتا ہے، اسرو کا نیا تجربہ

اسرو نے ایک نیا تجربہ کر کے ثابت کر دیا ہے کہ وہ اپنے خلائی جہاز کو خلا میں بھیج سکتا ہے اور اسے واپس بلا بھی سکتا ہے

<div class="paragraphs"><p>سوشل میڈیا</p></div>

سوشل میڈیا

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: چاند کے جنوبی قطب پر چندریان 3 کی کامیاب لینڈنگ کے بعد ہندوستانی خلائی تحقیقی ادارے (اسرو) نے ایک بار پھر سب کو حیران کر دیا ہے۔ اس بار اسرو نے چاند کے گرد گھومنے والے پروپلشن ماڈیول کو زمین کے مدار میں واپس بلایا ہے۔ اسرو نے یہ تجربہ کر کے ثابت کر دیا ہے کہ وہ اپنے خلائی جہاز کو بھی واپس بلا سکتا ہے۔

اسرو نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر پوسٹ میں کہا، ’’ایک اور منفرد تجربے میں پی ایم (پروپلشن ماڈیول) کو قمری مدار سے زمین کے مدار میں لایا گیا ہے۔ چندریان-3 مشن کا بنیادی مقصد چاند کے جنوبی قطبی علاقے کے قریب نرم لینڈنگ کر کے وکرم اور پرگیان پر آلات کا استعمال کرتے ہوئے تجربات کرنا تھا۔ خلائی جہاز 14 جولائی 2023 کو لانچ کیا گیا تھا۔‘‘


لینڈر وکرم نے 23 اگست کو چاند کی سطح پر تاریخی لینڈنگ کی اور اس کے بعد پرگیان لینڈ کیا گیا۔ اسرو نے ایک بیان میں کہا، "چندریان-3 مشن کے مقاصد پوری طرح سے حاصل کر لیے گئے ہیں،" انہوں نے مزید کہا کہ پروپلشن ماڈیول کا بنیادی مقصد لینڈر ماڈیول کو جیو سٹیشنری ٹرانسفر آربٹ (جی ٹی او) سے چاند کے آخری قطبی مدار تک پہنچانا ہے۔ سرکلر مدار تک پہنچنے اور لینڈر کو الگ کرنے کے لیے۔ خلائی ایجنسی نے کہا کہ علیحدگی کے بعد پے لوڈ 'اسپیکٹرو پولاریمیٹری آف ہیبی ایبل سیارہ ارتھ' کو بھی پروپلشن ماڈیول میں چلایا گیا۔

انہوں نے کہا کہ ابتدائی منصوبہ اس پے لوڈ کو پروپلشن ماڈیول کی زندگی کے دوران تقریباً تین ماہ تک چلانے کا تھا لیکن چاند کے مدار میں ایک ماہ سے زیادہ کام کرنے کے بعد پروپلشن ماڈیول کے پاس 100 کلوگرام سے زیادہ ایندھن دستیاب تھا۔ اسرو نے کہا کہ پی ایم میں دستیاب ایندھن کو مستقبل کے قمری مشن کے لیے اضافی معلومات اکٹھا کرنے کے لیے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت وزیراعظم زمین کے گرد چکر لگا رہے ہیں اور 22 نومبر کو اس نے 1.54 لاکھ کلومیٹر کی بلندی پر چاند کے مدار کے قریب ترین مقام کو عبور کیا۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;