اسرو کا نیا دفاعی سٹیلائٹ لانچ: اسرائیل، اٹلی، جاپان اور امریکہ کے 9 سٹیلائٹ بھی چھوڑے گئے

یہ ہندوستانی خلائی ریسرچ ایجنسی (اسرو) کے پولر سٹلائیٹ لانچ وہیکل (پی ایس ایل وی) کا 50واں مشن تھا اور اس مشن کے لئے الٹی گنتی گزشتہ روز سری ہری کوٹہ میں شروع ہوئی تھی

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

حیدرآباد: ہندوستان نے بدھ کے روز ایک نیا دفاعی سٹیلائٹ کامیابی کے ساتھ لانچ کر کے خلاء کے میدان میں ایک اور کامیابی حاصل کی ہے۔ آر آئی ایس اے ٹی۔2 بی آر 1 نامی اس سٹیلائٹ کو آندھرا پردیش کے ضلع نیلور میں سری ہری کوٹہ کے ستیش دھون خلائی مرکز سے 3.25 بجے سہ پہر چھوڑا گیا۔

یہ ہندوستانی خلائی جانچ ایجنسی (اسرو) کے پولر سٹلائیٹ لانچ وہیکل (پی ایس ایل وی) کے 50واں مشن تھا اور اس مشن کے لئے الٹی گنتی گزشتہ روز سری ہری کوٹہ میں شروع ہوئی تھی۔ آر آئی ایس اے ٹی۔2بی آر 1کے مشن کی زندگی پانچ برس ہوگی۔ اس کا مقصد فوجی مقاصد ہیں اور اس کے ذریعہ ملک کی سرحدوں کی سیکوریٹی میں اضافہ کیا جائے گا اورآسمان کے ذریعہ سرحدوں پر نظر رکھی جائے گی۔

اس سٹلائیٹ کو دیگر بیرونی سٹلائیٹ کے ساتھ پہلے لانچ پیڈ کے ذریعہ چھوڑا گیا۔ لانچ اتھاریزیشن بورڈ اور مشن کی تیاری کا جائزہ لینے والی کمیٹی کی منظوری کے بعد اس کی الٹی گنتی شروع گزشتہ روز شروع ہوئی تھی۔ اس کو چھوڑے جانے کے چند منٹ کے بعد تمام چار مرحلوں سے علحدگی کے بعد سٹلائیٹ آر آئی ایس اے ٹی۔2 بی آر 1لانچ وہیکل سے علحدہ ہوگیا۔ اگلے پانچ منٹ کے بعد بیرونی صارفین کے سٹلائیٹ علحدہ ہوکر مدار میں داخل ہوگئے۔

یہ دراصل راڈار امیجنگ زمینی مشاہداتی سٹلائیٹ ہے جس کا وزن 628 کیلوگرام ہے۔ ساتھ ہی اسرائیل، اٹلی، جاپان اور امریکہ کے 9 غیر ملکی سٹلائیٹس کو بھی چھوڑا گیا۔ آر آئی ایس اے ٹی۔2بی آر 1جو زراعت، جنگلات اور ڈیزاسٹر منیجمنٹ کے آلات کا تعاون کرے گا کے بعد آر آئی ایس اے ٹی۔2 بی آر2 کو چھوڑا جائے گا۔ اس کے ساتھ سنتھیٹک آپریرٹر ڑڈار بھی ہوگا۔