فلسطین...گوہر رضا کی نظم

عجیب جنگ ہے یہ، اور عجیب تر ہے کہ جو، اس ایک جنگ میں، ظالم کی صف میں شامل ہیں...

<div class="paragraphs"><p>غزہ پٹی پر اسرائیلی حملہ / Getty Images</p></div>

غزہ پٹی پر اسرائیلی حملہ / Getty Images

user

گوہر رضا

عجیب جنگ ہے یہ

اور عجیب تر ہے کہ جو

اس ایک جنگ میں

ظالم کی صف میں شامل ہیں

یہ جنگ بچوں کے

ماؤں کے

درس‌گاہوں کے

تہتے لوگوں کے

بوڑھے اور ضعیفوں کے

یہ جنگ زخمی مریضوں کے

اسپتالوں کے

خلاف جنگ ہے

کون جانے کب سے جاری ہے

اور ان کا جرم ہے کی آزادی وطن کا جنون

-

یہ جنگ تیل پہ قبضے کی جنگ ہے لیکن

یہ جنگ مجلس اقوام کے خلاف بھی ہے

وہ چاہتے ہیں کہ یہ جنگ ختم ہو نہ کبھی

اجنمے کوکھ کے بچے چکائیں ہر قیمت

بچھائیں لاشیں تو یوں ہو زمین چھوٹی پڑے

بہے جو خون تو بھر جائے اس سے ہر ساگر

وہ چاہتے ہیں کہ غلامی کا دور لوٹ آئے

یہ خواب ہے کہ سبھی کچھ تباہ ہو جائے

جو قسمیں کھاتے تھے تہذیب کی حفاظت کی

نقابیں پھینک کے اترے ہیں آج میدان میں

لگائے جسم پہ مظلومیت کے تمغے کو

ہیں ساتھ ظلم کے، ظالم کے صف میں شامل ہیں

مگر یہ بھول گئے ہیں کہ زخم گہرے سہی

کروڑوں لوگ اٹھیں گے کہیں گے بس، اب بس

بھروسہ دیں گے، فلسطین کے عوام کو وہ

یہ جنگ صرف تمہاری نہیں، ہماری بھی ہے

کروڑوں لوگ اٹھیں گے ہر ایک ملک میں جو

حکومتوں کے سروں کو جھکا کے دم لیں گے

... گوہر رضا

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;