مرثیہ ’پانی‘... از جوش ملیح آبادی

معروف شاعر جوش ملیح آبادی کا مرثیہ ’پانی‘ 59 بند پر مشتمل ہے۔ یومِ عاشورہ کے موقع پر کچھ بند پیش خدمت ہیں جسے علامہ ضمیر اختر نے اپنی آواز دی ہے۔ مکمل مرثیہ کے لیے دیے گئے فیس بک لنک پر کلک کریں۔

ہاں اے صباحِ طبع شبِ تار سے نکل

اے فکر سوئے آبِ خضر گنگنا کے چل

اے کلکِ نغمہ بار برستی گھٹا میں ڈھل

اے چشمہِؑ تخیلِ برگ آفریں اُبل

…………………………………………..جس میں ہو رقص و رنگ و روانی کی داستاں

…………………………………………..اے دل کی آگ چھیڑ وہ پانی کی داستاں

پانی خوش اِضطراب و خوش انداز و خوش جمال

خوش آب و خوش خرام و خوش آواز و خوش مقال

شیریں قوام و شیشہ مزاج و گہر خصال

سرشاری و شگفتگی و رقص و وجد و حال

…………………………………………..سرمایہ آب و رنگ کی تانیں لئے ہوئے

…………………………………………..لاکھوں ہر ایک بوند میں جانیں لئے ہوئے

پانی چناب و راوی و گنگا و رود نیل

جوئے حیات و کوثر و تسنیم و سلسبیل

رقاصِ بے نظیر و غزل خوانِ بے عدیل

موج ہوا پہ ہمسرِ گلبانگِ جبریل

…………………………………………..دست خنک میں ساغر زم زم لئے ہوئے

…………………………………………..کلیوں کی خواب گاہ میں شبنم لئے ہوئے

سب سے زیادہ مقبول