نظم: چنار کے درخت... ام ماریہ حق

زندگی جہاںر، وح کی تفسیر تھی، پرنور تھا جس کا دامن، جنت کی ہواؤں سے، مگر! .... ام ماریہ حق کی نظم

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

ام ماریہ حق

زندگی جہاں

روح کی تفسیر تھی

پرنور تھا جس کا دامن

جنت کی ہواؤں سے

مگر!

ائے کمزور بینائی کے خالق

تم نے انہیں لاعلمی اور بے بسی کی

فصیلوں میں جکڑ کر

ان کی رگ رگ میں

اذیتوں کے

ابلتے چشمے بھر دیئے

اب یہ وادیاں

مانگ رہی ہیں

اپنے حصے کی عزت

اور آزادی سے جینے کا حق

لیکن!

یہ خاموش اور غمزدہ

چنار کے درخت

ان سب سے بے خبر

تک رہے ہیں

آسماں کی جانب

جہاں!

نفرتوں کا سورج

سوا نیزے پر ہے