سنتھيا رچی نے لگایا رحمان ملک پر ريپ کا الزام، معاملہ کيا ہے؟

امريکی بلاگر سنتھيا رچی نے پاکستان پيپلز پارٹی کی اعلیٰ قيادت پر سنگين نوعيت کے الزامات عائد کيے ہیں۔ يہ معاملہ ان دنوں پاکستان ميں سماجی رابطوں کی ويب سائٹس پر بحث و مباحثے کا باعث بنا ہوا ہے۔

سنتھيا رچی
سنتھيا رچی
user

ڈی. ڈبلیو

پاکستان میں رہائش پذیر امريکی بلاگر سنتھيا رچی نے الزام عائد کيا ہے کہ پاکستان کے سابق وزير داخلہ رحمان ملک نے ان کے ساتھ جنسی زيادتی کی۔ رچی نے اپنے فيس بک پيچ سے براہ راست نشر کردہ فيس بک لائيو ميں کہا، ''سن 2011 ميں سابق وزير داخلہ رحمان ملک نے مجھ سے ريپ کيا۔ جی بالکل، ميں دہراتی ہوں، وزير داخلہ رحمان ملک نے مجھے جنسی زيادتی کا نشانہ بنايا۔‘‘ اس لائيو سيشن ميں سنتھيا رچی نے سابق وفاقی وزير مخدوم شہاب الدين اور سابق وزير اعظم يوسف رضا گيلانی پر بھی دست درازی کے الزامات عائد کيے۔

سنتھيا رچی کے مائیکرو بلاگنگ ويب سائٹ ٹوئٹر پر دو لاکھ بيس ہزار سے زائد فالوورز ہيں۔ جمعرات کی شب مذکورہ فيس بک لائيو سيشن کے بعد سے وہ پاکستان ميں سماجی رابطوں کی ويب سائٹس پر ٹرينڈ کر رہی ہيں۔ جمعہ سے اب تک مختلف ہيش ٹيگز کے ساتھ صارفين مختلف آراء دے رہے ہيں۔ پاکستان ميں ٹوئٹر اور فيس بک پر لوگوں کی آراء منقسم دکھائی ديتی ہيں۔ بہت سے لوگ قومی سياسی جماعت پاکستان پيپلز پارٹی کی اعلیٰ قيادت پر ايسے سنجيدہ الزامات کی مخالفت کر رہے ہيں، تو بہت سے قارئين سنتھيا کو جنسی زیادتی پر آواز اٹھانے کے ليے 'چيمپئن‘ بھی قرار دے رہے ہيں۔ يہ امر اہم ہے کہ اس امريکی بلاگر نے گزشتہ ہفتے سابق وزير اعظم بينيظير بھٹو پر بھی الزامات لگائے تھے، جس پر پی پی پی کی اعلیٰ قيادت نے ترديد کرتے ہوئے سخت برہمی کا اظہار بھی کيا تھا۔

تازہ پيش رفت ميں سنتھيا رچی نے فيس بک لائيو شروع کرنے سے قبل ايک ٹوئيٹ ميں دعویٰ کيا تھا کہ پی پی پی انہيں اس ليے ڈرا دھمکا رہی ہے کيونکہ پارٹی نہيں چاہتی کہ وہ اس کی اعلٰی قيادت کے کئی ارکان کی جانب سے ہراسگی کے واقعات پر سے پردہ اٹھائيں۔

بعد ازاں سنتھیا رچی نے ايک اور پوسٹ ميں دعویٰ کيا کہ جنسی زيادتی کا واقعہ رحمان ملک کی رہائش گاہ پر پيش آيا۔ ان کے بقول يہ لگ بھگ اسی وقت کی بات ہے جب القاعدہ کے سابق سربراہ اسامہ بن لادن کو نشانہ بنانے کے ليے امريکی دستوں کی خصوصی کارروائی جاری تھی۔ ''مجھے لگا کہ مجھے ويزے کے سلسلے ميں بلايا گيا ہے تاہم مجھے ايک مشروب ميں نشہ آور ادويات دے دی گئيں۔‘‘ امريکی بلاگر کا کہنا ہے کہ انہوں نے اس وقت يہ سوچ کر خاموشی اختيار کی کہ پيپلر پارٹی کی حکومت ميں ان کی کوئی نہيں سنے گا۔ رچی کے مطابق انہوں نے اس سلسلے ميں امريکی سفارت خانے سے بھی رجوع کيا تاہم رد عمل کوئی خاص نہ تھا۔

پی پی پی کا رد عمل

سنتھيا رچی کے ان الزامات کا پاکستان پيپلز پارٹی نے سختی سے نوٹس ليا ہے۔ پارٹی نے بے نظير بھٹو پر لگائے گئے الزامات پر گزشتہ ہفتے پاکستان کے وفاقی تفتيشی ادارے (FIA) کے سائبر کرائم ونگ ميں شکايت درج کرا دی تھی۔ ايڈووکيٹ شکيل عباسی نے موقف اختيار کيا کہ غير ملکی بلاگر نے سابق وزير اعظم اور پارٹی چيئرپرسن کے ليے توہين آميز اور ان کی شخصيت کو نشانہ بنانے والے الزمات عائد کيے۔

تازہ الزمات پر اپنا رد عمل ظاہر کرتے وقت سينيٹر رحمان ملک نے بھی انہيں مسترد کيا ہے۔ سابق وزير اعظم يوسف رضا گيلانی کے صاحبزادے علی حيدر گيلانی نے اپنے والد کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ رچی کے الزامات بے بنياد ہيں۔ انہوں نے رحمان ملک کے حوالے سے بھی کہا کہ ان کا کردار صاف ہے۔ علی حيدر گيلانی نے کہا کہ يہ الزامات رحمان ملک کی ساکھ کو نقصان پہنچانے کے ليے لگايا گيا ہے۔ ان کے بقول ایک امريکی خاتون يہ الزامات 'کسی مخصوص فرد يا گروپ‘ کے کہنے پر لگا رہی ہيں۔